Stories


انوکھا رشتہ انوکھی چاہت از پنک بے بی۔اینیمل سیکس

جب جب سیما کو خیال آتا اُس مزے کا جو ٹامی نت دیا۔ اگلی صبح جمال ناشتہ کر کے اپنے دفتر جانے کے لیے تیار ہوا ۔۔۔۔۔۔ ہر روز کی طرح سیما اسے گیٹ پر چھوڑنے کے لیے آئی ۔۔۔ ٹامی بھی انکے پیچھے پیچھے اپنی دُم ہلاتا ہوا آرہا تھا ۔۔۔۔ جمال نے بڑے پیار سے اسکے سر کو سہلایا اور پھر اپنی کار میں بیٹھ کر نکل گیا ۔۔۔۔ چوکیدار نے گیٹ بند کیا ۔۔۔ اور سیما گھر کے اندر کی طرف چلدی ۔۔۔۔ ٹامی بھی اسکے پیچھے پیچھے تھا ۔۔۔۔ اٹھکیلیاں کرتا ہوا ۔۔۔ کبھی اس سے آگے نکلتا ۔۔۔ کبھی پیچھے چلنے لگتا ۔۔۔ کبھی اسکی ٹانگوں سے اپنا جسم سہلاتا ۔۔۔۔ سیما اسکی حرکتوں کو دیکھ دیکھ کر مسکرا رہی تھی کہ کیسے وہ اپنی مالکن کو خوش کرنے کی کوشش کررہا ہے ۔۔ تاکہ آج پھر وہ کل والا کھیل کھیل سکے ۔۔۔۔ سیما کی مسکراہٹ ٹامی کو بتا رہی تھی کہ اسکی مالکن کو بھی کوئی اعتراض نہیں ہے ۔۔۔۔ گھر کے اندر آکر سیما نے اندر سے دروازہ لاک کر لیا ۔۔۔۔ اور پھر ناشتہ کی میز پر بیٹھ گئی ۔۔۔۔ اب وہ گھر کے اندر ٹامی کے ساتھ بلکل اکیلی تھی ۔۔۔۔ اسے تھوڑی سی گھبراہٹ بھی ہور ہی تھی اور تھوڑی بے چینی بھی ۔۔۔۔ کہ پتہ نہیں اب کیا ہو گا ۔۔۔۔۔ ناشتہ کی میز پر بیٹھ کر سیما ڈبل روٹی توڑ کر کھانے لگی ۔۔۔۔۔۔ ٹامی بھی اسکے قریب ہی نیچے زمیں پر ادھر اُدھر پھر رہا تھا ۔۔۔۔ سیما کی کرسی کے اردگرد۔۔۔۔ اسکو لبھانے ۔۔۔ اور اپنی طرف متوجہ کرنے کے لیے ۔۔۔۔۔ سیما نے اپنے ہاتھ میں پکڑی ہوئی بریڈ کا ایک ٹکڑا اپنی ٹیبل سے کچھ دور نیچے قالین پر پھینکا ۔۔۔ اور ٹامی کو اسے کھانے کا اشارہ کیا ۔۔۔۔ ٹامی نے اس بریڈ کے ٹکڑے کی طرف دیکھا ۔۔۔۔ اور پھر سے سیما کے گرد گھومنے لگا ۔۔۔۔ اپنا سر سیما کےپیروں پر رگڑتے ہوے سیما نے دو چار ٹکڑے بریڈ کے اور بھی نیچے پھینکے مگر ٹامی نے انکی طرف بھی توجہ نہیں دی ۔۔۔ ۔۔۔ سیما سمجھ گئی کے آج ٹامی کی دلچسپی کچھ کھانے پینے میں نہیں بلکہ اسکے ساتھ کل والا کھیل کھیلنے میں ہے ۔۔۔۔ کچھ دیر کے بعد سیما اپنی جگہ سے اُٹھی ۔۔۔۔ الماری میں رکھے ہوئے ڈوگی سپیشل بسکٹ نکال کر ایک پلیٹ میں رکھ کر نیچے کارپٹ پر ٹامی کے آگے رکھے ۔۔۔۔ ٹامی انکو کھانے لگا ۔۔۔۔۔ سیما ٹامی کو وہیں کچن میں چھوڑ کر اپنے کمرے میں آگئی ۔۔۔۔۔ سیما اپنے کمرے میں آتے ہی باتھ روم میں چلی گئی ۔۔۔۔ اور اپنے سارے کپڑے اُتار کر نہانے لگی ۔۔۔۔۔ بہت بڑے سے باتھنگ ٹب میں بیٹھ کر ٹھنڈے ٹھنڈے پانی سے نہانے کا مزہ لینے لگی ۔۔۔۔۔ اپنے گورے گورے چکنے چکنے جسم کو سہلاتی ہوئی ٹامی کے بارے میں سوچنے لگی ۔۔۔۔ وہ کچھ فیصلہ نہیں کر پا رہی تھی کہ کل کی طرح آج بھی ٹامی کے ساتھ مزے اور لذت کا وہی کھیل کھیلے یا کہ نہیں ۔۔۔۔۔ ایک طرف اسے یہ بات روک رہی تھی کہ وہ ایک انسان ہے ۔۔۔ تو کیسے کسی جانور کو اپنے جسم سے اس طرح کھیلنے سے سکتی ہے ۔۔۔۔۔ جبکہ یہ بات معاشرے۔۔۔ مذہب ۔۔۔۔ اور اخلاقیات ۔۔۔ سب کے خلاف تھی ۔۔۔۔ مگر ۔۔ دوسرے طرف شیطان اسے بہکا رہا تھا کہ جو مزہ اسے کل ایک کتے کی زبان سے ملا ہے وہ کبھی اسے مرد۔۔ ایک انسان کی زبان سے نہیں ملا تھا ۔۔۔۔ اور پھر انگریز لڑکیاں تو پتہ نہیں کیا کیا کرتی ہیں جانوروں کے ساتھ ۔۔۔۔ اور وہ تو صرف تھوڑا بہت اپنے ٹامی کے ساتھ کھیل ہی رہی ہے نا ۔۔۔۔۔ وہ تو اپنے کتوں سے اپنی چوت تک چُدوا لیتی ہیں اور وہ تو بس اپنے جسم کو ہی اس سے چٹوا رہی ہے نا ۔۔۔۔۔ یہی سب سوچتے ہوئے اسکا ہاتھ اپنی پانی کے نیچے اپنی چوت تک پہنچ چکا تھا ۔۔۔۔ اور وہ اپنی چوت کو سہلا رہی تھی ۔۔۔۔ اور اسے خیال آیا کہ اسے اس بات کا پتہ بھی نہیں چلا تھا کے کب اسکا ہاتھ اپنی چوت پہ پہنچ کے اسے سہلانے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔ لیکن اب اسے یہ احساس ضرور ہوا تھا کہ اسے اپنی چوت کو سہلانے میں مزہ ضرور آرہا تھا ۔۔۔۔۔ آخر میں سیما نے سب کچھ حالات پر چھوڑ دیا ۔۔۔ کہ جو ہوگا دیکھا جائے گا ۔۔۔۔ سیما نہا کر فارغ ہوئی تو کپڑے پہنے کی بجائے ایک بڑا سا تولیہ اپنے جسم پر لپیٹ کر باہر نکل آئی ۔۔۔۔ تولیہ اسکے مموں کے اوپری حصے سے لے کر اسکی آدھی رانوں تک تھا ۔۔۔۔ اور باقی کا پورے کا پورا گورا گورا جسم بلکل ننگا تھا ۔۔۔۔ سیما کے لیے ایسے نہا کر باہر آنا کوئی نئی بات نہیں تھی ۔۔۔۔ وہ اکثر نہانے کے بعد ایسے ہی باہر آکر پہلے اپنے بال برش کرتی اور پھر کپڑے پہنتی تھی ۔۔۔۔ آخر گھر کے اندر اور کوئی ہوتا ہی نہیں تھا تو وہ کس سے ڈرتی یا پردہ کرنے کی کوشش کرتی ۔۔۔۔۔ آج بھی سیما نہا کر تولیہ لپیٹ کر باہر آئی اور ایک چھوٹے تولیے سے اپنے بال خشک کرتی ہوئی ڈریسنگ ٹیبل کے سامنے بیٹھ گئی ۔۔۔۔ پھر اس نے ہیئر ڈرائیر اُٹھایا اور اپنے بال سُکھانے لگی ۔۔۔۔۔ بیڈروم کا دروازہ لاک نہیں تھا ۔۔۔۔ بس ہلکا سا ہی بند تھا ۔۔۔۔ تھوڑی دیر میں سیما کو دروازہ کھلنے کی آواز سنائی دی ۔۔۔۔ اس نے بنا دروازے کی طرف دیکھے ۔۔۔ اپنے سامنے لگے ہوئے آئینے میں دروازے کو دیکھا ۔۔۔۔ کھلے ہوئے دروازے میں سے ٹامی کمرے میں داخل ہو رہا تھا ۔۔۔۔ اسے اپنے کمرے میں داخل ہوتا ہو دیکھ کر سیما کا دل زور سے اُچھل پڑا ۔۔۔۔۔ اور اسکے ہاتھ بھی ایک لمحے کے لیے تو کانپ ہی گئے ۔۔۔۔۔ ٹامی چھوٹے چھوٹے قدموں کے ساتھ آہستہ آہستہ دوڑتا ہو سیما کی طرف آیا ۔۔۔۔ اور آکر اپنا منہ سیما کی ننگی بازو سے رگڑنے لگا ۔۔۔۔ سیما نے بھی اپنے ایک ہاتھ کے ساتھ ٹامی کے سر کو سہلانا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔ سیما اب آئینے کے سامنے سٹول پر ایسے بیٹھی ہوئی تھی کہ صرف اسکا تولیہ اسکے جسم پر تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے مموں کا اوپری حصہ اور انکے درمیان بنتی ہوئی گہری لکیر بھی صاف نظر آرہی تھی ۔۔۔۔ نچلے حصے میں اسکا تولیہ اسکی آدھی رانوں تک چڑھا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔ اور اسکی گوری گوری آدھی رانیں اور ان سے نیچے پوری کی پوری چکنی ٹانگیں بلکل ننگی تھیں ۔۔۔۔۔ ٹامی نے جب اپنی مالکن کو اسکی محبت کا جواب محبت سے دیتے ہوئے دیکھا تو وہ فورا" ہی سیما کے گھٹنوں کو اپنی زبان سے چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔ سیما ہولے سے چلائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اے ےےےےے ٹامی ۔۔۔ کیا کر رہے ہو یار ۔۔۔۔۔ ابھی میں نہا کے آئی ہوں اور تم پھر سے میرا جسم گنداکرنے لگے ہو نا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہٹو پیچھے ۔۔۔۔۔۔۔ پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما اسے کہہ تو رہی تھی مگر اسے اپنے پاس سے ہٹانے کے لیے کوئی زور نہیں لگا رہی تھی ۔۔۔۔۔ بلکہ اسکے سر پہ ہاتھ پھیرتے ہوئے اسے پیچھے ہٹانا چاہ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ مگر ٹامی کہاں ماننے والا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ جو ہوا ہی کتا ۔۔۔۔۔ اس نے بھلا کسی کی کیا بات ماننی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ وہ اپنی مرضی کی مطابق نیچے سیما کے پیروں سے لے کر اسکی گھٹنوں تک اسکی ٹانگوں کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔ اپنی لمبی سی گلابی گیلی گیلی زبان سے سیما کی ٹانگوں کو گیلا کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔ بُرا تو سیما کو بھی نہیں لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔ ابھی جو کافی دیر تک باتھ روم میں بیٹھی وہ سوچتی آئی تھی ۔۔۔۔۔ وہ سب کچھ ایک بار پھر اسکے ساتھ ہونے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔ ایک بار پھر اسکا جسم اور دل ۔۔۔ دماغ کا ساتھ چھوڑ کر لذت کا ساتھ دینے لگے تھے ۔۔۔۔۔۔۔ بہکنے لگے تھے ۔۔۔۔۔۔ اس انوکھے پیار میں کھونے لگے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آہ ہ ہ ہ ۔۔۔۔۔۔۔ مم م م م م م م ۔۔۔۔ سی ی ی ی ی ی ی ۔۔۔۔۔ اسکے منہ سے سسکاریاں سی نکلنے لگی تھیں ۔۔۔۔ وہ ٹامی کو خود سے دور کرنے کی بجائے آہستہ آہستہ اسکا جسم اور سر سہلا رہی تھی ۔۔۔۔۔ ٹامی کو اور بھی شہہ دے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ ٹامی تھا تو کتا ۔۔۔۔ مگر تھا ذہین ۔۔۔۔ اپنی مالکن کی مرضی کو سمجھ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ وہ بھی اب سیما کے پیروں اور گھٹنوں کو چاٹنا چھوڑ کر اب سیما کے ننگے بازوؤں کو چاٹنے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔ ٹامی بھی پورے جوش میں تھا ۔۔۔۔ اسکی زبان بڑی تیزی کے ساتھ اسکے منہ میں اندر باہر ہو رہی تھی ۔۔۔۔ اور سیما کے ننگے گورے گورے بازوؤں کو چاٹ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر وہ اسکے کندھوں تک پہنچ گیا ۔۔۔۔ سیما کے کندھوں کو اپنی زبان سے چاٹنے لگا ۔۔۔۔ پھر ٹامی نے اپنا منہ کھول کر سیما کے کندھے کی گولائی کو اپنے اگلے نوکدار دانتوں کے بیچ میں لیا ۔۔۔۔ اور آہستہ سے اسے اپنے اگلے دانتوں میں دبانے لگا ۔۔۔۔۔ جیسے وہ سیما کو کاٹنے لگا ہو ۔۔۔۔۔۔۔ مگر ۔۔۔ کاٹ نہیں رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ بلکہ جانوروں کے مخصوص انداز میں وہ سیما سے ۔۔۔ اپنی مالکن سے پیا ر کر رہا تھا ۔۔۔۔ پہلے پہل تو سیما کو ڈر لگا کہ ٹامی اسے کاٹنے لگا ہے ۔۔۔ مگر جب ٹامی کے نوکیلے دانتوں کا بس ہلکا ہلکا دباؤ ہی اسے اپنے کاندھوں پر محسوس ہو ا تو اسکا خوف کم ہوا ۔۔۔۔ اور جب ٹامی کے اس طرح سے ہولے ہولے کاٹنے سے سیما کو لطف آیا تو اسکے منہ سے بھی بے اختیار سسکاری نکل گئی ۔۔۔۔۔ اور ساتھ میں ہی لذت کے مارے اسکی آنکھیں بند ہو گئیں ۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے دانت سیما کو اپنے گوشت میں دھنستے ہوئے محسوس تو ہو رہے تھے مگر اسے لگ رہا تھا کہ اس میں اسے کوئی تکلیف نہیں ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔ اسی لیے وہ بھی اسے اب روک نہیں رہی تھی ۔۔۔۔ ٹامی نے اپنے دانت ہٹائے سیما کے کاندھے پر اسکے دانتوں کے ہلکے ہلکے نشان پڑ رہے تھے ۔۔۔۔ اور ٹامی نے اسی جگہ کو اپنی زبان سے چاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔ لذت کے مارے سیما کی آنکھیں بند ہو رہی تھیں ۔۔۔۔۔ ٹامی اسکے ننگے گورے گورے کاندھے کو چاٹتا ہو اور اسکی گردن کی طرف بڑھنے لگا ۔۔۔۔۔ اسکی گردن کا اپنی زبان سے چاٹتے ہوئے ۔۔۔۔۔ ٹامی سے سیما کا ہر طرح کا خوف ختم ہو چکا ہوا تھا ۔۔۔۔ اب وہ اسے روک نہیں رہی تھی ۔۔۔۔ بلکہ اسکے جسم پر اپنا ہاتھ پھیر رہی تھی ۔۔۔۔ اسکے جسم کو سہلا رہی تھی ۔۔۔۔۔ اسکی گردن کو سہلا رہی تھی ۔۔۔۔۔ جیسے ہی ٹامی کی زبان ۔۔۔۔ لمبی کھردری زبان ۔۔۔۔ سیما کے چہرے پر پہنچی تو اس نے آج ایک بار پھر سے سیما کے گورے گورے گالوں کو چاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔ وہ گال جو آج تک صرف اسکے شوہر نے ہی چومے اور چاٹے تھے ۔۔۔۔۔ اب ایک کتا بھی اس میں اسکے شوہر کا حصہ دار ہو چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جمال خان جیسے بڑے آدمی کی خوبصورت بیوی کے گورے گورے گالوں کو ایک کتا ۔۔۔۔ انکا اپنا کتا چاٹ رہا تھا ۔۔۔۔ اپنے تھوک سے اسکا پورے کا پورا چہرا بھرا رہا تھا ۔۔۔۔ اور اب تو اسکی زبان سیما کے ہونٹوں پر بھی پہنچ رہی تھی ۔۔۔۔ اسکے ہونٹوں کو چاٹنے لگی ۔۔۔۔۔ آج بنیتا نے ٹامی کی اس حرکت کا کچھ برا نہیں منایا ۔۔۔۔ بلکہ اپنے سامنے کھڑے ہوئے ٹامی کی گردن کو سہلاتی رہی ۔۔۔۔۔۔ سیما سٹول پر بیٹھی ہوئی تھی ۔۔۔۔ اور ٹامی اسکے سامنے کھڑا تھا ۔۔۔۔ اس پوزیشن میں ٹامی کا منہ سیما کے چہرے کے برابر آرہا تھا ۔۔۔۔ اسقدر بڑا قد اور جسامت تھی ٹامی کی ۔۔۔۔۔ جیسے جیسے ٹامی کی زبان سیما کے ہونٹوں کو چاٹتی جاتی تھی ۔۔۔ ویسے ویسے سیما کی مستی میں اضافہ ہوتا جا رہا تھا ۔۔۔۔۔ اسے آج یہ سب کچھ برا نہیں لگ رہا تھا ۔۔۔۔ بلکہ وہ ایک بار بھی ٹامی کو پیچے ہٹانے کی کوشش کیے بنا ۔۔۔۔ اور اپنے ہونٹوں کو اسکے سامنے سے ہٹائے بغیر ٹامی کے سامنے بیٹھی تھی۔۔۔۔ آہستہ آہستہ سیما کے ہونٹ کھلنے لگے ۔۔۔۔۔ دونوں ہونٹوں کے درمیان میں خلا بننے لگا ۔۔۔۔۔ اور پتہ نہیں کیوں اور کیسے ۔۔۔۔ بنا سوچے سمجھے ۔۔۔۔ بند آنکھوں کے ساتھ ہی ۔۔۔ سیما کی زبان اسکے منہ سے باہر نکل آئی ۔۔۔۔ اور اگلے ہی لمحے سیما کی زبان ٹامی کی زبان سے ٹکرا رہی تھی ۔۔۔۔ ٹامی کی زبان تیزی کے ساتھ حرکت کرتی ہوئی سیما کی زبان کو چاٹ رہی تھی ۔۔۔۔ اور اب تو سیما کی زبان نے بھی تھوڑی حرکت شروع کر دی ہوئی تھی ۔۔۔۔ دونوں کی زبانیں ایک دوسری سے ٹکرا رہی تھیں ۔۔۔۔ اور سیما ٹامی کے ساتھ ایسے مست تھی جیسے کہ وہ کوئی جانور نہیں بلکہ اسکا کوئی عاشق ہو جسکے ساتھ وہ مستی کر رہی ہو ۔۔۔۔ ایک بار تو سیما نے خود ٹامی کی لمبی سی زبان کو اپنے ہونٹوں میں پکڑنے کی کوشش کی ۔۔۔۔ اور ایک دو بار کی کوشش کے بعد اس میں کامیاب ہوئی ۔۔۔ مگر صر ف تھوڑی دیر کے لیے ہی وہ اسکی زبان کو چوس سکی ۔۔۔ اور پھر ٹامی کی زبان اسکے منہ میں سے سرک گئی ۔۔۔۔ پھسل کر باہر نکل گئی ۔۔۔۔۔۔۔ ایسے ہی ٹامی کے ساتھ کسنگ کرتے ہوئے ۔۔۔۔۔ اور اسکے ساتھ زبان لڑاتے ہوئے سیما کو پتہ بھی نہیں چلا کہ کب ان دونوں کے جسموں کی حرکت سے سیما کے جسم پر لپٹا ہوا تولیہ ۔۔۔۔ جو اسکے سینے کے ابھاروں کو ۔۔۔۔ اسکے مموں کو ڈھانپے ہوئے تھا ۔۔۔۔۔ کھل کر ۔۔۔۔۔ اسکے سینے سے سرک کر اسکی گود میں آگرا ۔۔۔۔۔ اور اسکے ساتھ ہی ۔۔۔۔ سیما کے خوبصورت ۔۔ گورے گورے ۔۔۔۔ ممے ٹامی کے سامنے ننگے ہو گئے ۔۔۔۔۔ سیما کے ہونٹوں اور پھر تھوڑی کو چاٹتا ہو ا ٹامی نیچے اسکے سینے کی طرف آنے لگا ۔۔۔۔ اور پھر سیما کے گورے گورے سینے کو اپنی لمبی زبان سے چاٹنے لگا ۔۔۔۔ اسکی زبان جیسے ہی سیما کے ممے سے ٹکرائی تو سیما کے منہ سے سسکاری نکل گئی ۔۔۔ مگر ٹامی کہاں رکنے والا تھا ۔۔۔۔۔ تیزی کے ساتھ سیما کے مموں کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔ کبھی ایک کو تہ کبھی دوسے کو ۔۔۔۔ جیسے جیسے ٹامی کی زبان سیما کے نپلز کو رگڑنے لگی ۔۔۔ تو سیما تو جیسے تڑپنے لگی ۔۔۔۔ منہ سے سسکاریاں نکالتے ہوئے وہ ٹامی کے سر کو اپنے سینے کی طرف کھینچنے لگی ۔۔۔۔ عجیب حالت ہو رہی تھی سیما کی ۔۔۔ آج تک کبھی پہلے سیما کو اپنے نپلز کے چھوئے جانے سے اسقدر مزہ نہیں آیا تھا جتنا آج اسے ٹامی کی زبان اپنے نپلز سے چھونے کی وجہ سے مل رہا تھا ۔۔۔۔
کچھ دیر تک سیما کے سینے اور مموں کو چاٹنے کے بعد ایک بار پھر سے ٹامی نے سیما کو اپنے طریقے سے کاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔۔ اس بار ٹامی نے اپنا منہ کھولا اور سیما کے پورے کے پورے ممے کو اپنے بڑے سے منہ کے اندر لینے لگا ۔۔۔ اپنے دانتوں کے درمیان ۔۔۔۔۔ اور اپنے دانتوں میں لیکر اس نے ایک بار پھر سے آہستہ آہستہ سیما کے ممے کو کاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔ اپنے دانتوں کے بیچ میں انکو دبانے لگا ۔۔۔ سیما کو منہ سے ہلکی ہلکی چیخیں نکلنے لگیں ۔۔۔۔ درد اور خوف کے مارے نہیں بلکہ لذت کے ساتھ ۔۔۔۔ ٹامی سیما کے مموں کو باری باری ایسے جگہ جگہ سے کاٹ رہا تھا کے جیسے وہ انکو کھانے کی کوشش کر رہا ہو ۔۔۔۔ ایسے ہی تیزی کے ساتھ اپنی کاٹنے کی جگہ تبدیل کرتے ہوئے سیما کا نپل اسکے دانتوں کے بیچ آگیا اور جیسے ہی ٹامی نے اسے کاٹا تو سیما کی تو جیسے جان ہی نکل گئی ۔۔۔۔ ایک تیز سسکاری اور چیخ اسکے حلق سے نکلی ۔۔۔۔ اپنے نپل میں ہونے والے ہلکے سے درد کی وجہ سے ۔۔۔ مگر اسکے ساتھ ہی اسکے سارے جسم میں لذت آمیز لہریں دوڑنے لگیں ۔۔۔۔ اسکی چوت گیلی ہونے لگی ۔۔۔ جو کہ اس وقت اسکے جسم کا واحد حصہ تھا جو کہ تولیہ سے ڈھکا ہوا تھا ۔۔۔۔ سیما کو اس قدر لذت ملی ۔۔۔ اتنا مزہ آیا کہ اس نے ٹامی کا سر اپنے دونوں ہاتھوں میں پکڑا اور اپنے منہ کی طرف لاتی ہوئی اپنے ہونٹ ٹامی کے منہ کے اگلے کالے حصے یعنی اسکے ہونٹوں پر رکھ دئے ۔۔۔ اور ایک بار سے چومنے کے بعد اسکے ہونٹوں پر اپنی زبان پھیرنے لگی ۔۔۔۔ ٹامی کی حرکتیں سیما کو مست کرتی جا رہی تھیں ۔۔۔۔ کچھ دیر پہلے تک وہ ٹامی کے ساتھ کچھ کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ نہیں کر پا رہی تھی ۔۔۔ اور اب وہ خود کو ٹامی کے رحم و کرم پر چھوڑ چکی تھی ۔۔۔۔ اور حالات کی لہروں پر بہتی چلی جا رہی تھی ۔۔۔۔ ٹامی کے ساتھ ۔۔۔۔ جو مستی اور انوکھی لذت کے سفر میں سیما کے ساتھ تھا ۔۔۔۔۔۔ بلکہ اس سفر پہ سیما کو لے جانے والا بھی ٹامی ہی تھا ۔۔۔۔۔ کچھ دیر کے بعد سیما نے اپنے جسم پر موجود آخری ۔۔۔ مگر بے مقصد کپڑا ۔۔۔ اپنی رانوں پر پڑا ہو تولیہ بھی اتار کے نیچے کارپٹ پہ پھینک دیا ۔۔۔۔۔۔ اور اب وہ ٹامی کے سامنے بلکل ننگی تھی ۔۔۔۔ اور ٹامی ۔۔۔۔ وہ تو ازل سے ہی ننگا تھا ۔۔۔۔۔ جیسے ہی ٹامی نے سیما کی ننگی رانوں کو دیکھا تو فورا" ہی نیچے کو آکر اسکی رانوں کو چاٹنے لگا ۔۔۔ کبھی ایک تو کبھی دوسرے ۔۔۔ کبھی یہاں سے تو کبھی وہاں سے ۔۔۔۔ سیما کی رانوں کو چاٹتا ہوا ٹامی اسکی رانوں کے اندر کے حصوں کی طرف آنے کی کوشش کررہا تھا ۔۔۔۔ اور بیچاری سیما اسے روک بھی نہ سکی ۔۔۔۔ اسکی ٹانگیں خود بخود ہی کھل گئیں ۔۔۔۔ اور ٹامی کی زبان سیما کے جسم کے سب سے نازک اور سب سے خاص اور سب سے پرائیویٹ حصے ۔۔۔۔ اسکی چوت کی طرف بڑھنے لگی ۔۔۔۔ جیسے ہی ٹامی کی زبان نے ایک بار میں ہی سیما کی پھول جیسی کھِلی ہوئی چوت کو پورے کا پورا چاٹا تو سیما کا تو پورے کا پورا جسم ہی اپنی جگہ سے اچھل کر رہ گیا ۔۔۔۔۔ اور اس نے خود کو گرنے سے بچانے کے لیں ٹامی کے مضبوط جسم کو جلدی سے دونوں ہاتھوں سے پکڑ لیا ۔۔۔۔۔ اب ٹامی بنا کسی روک ٹوک کے سیما کی چوت کو چاٹ رہا تھا ۔۔۔۔ دو دن کے اندر ہی ۔۔۔۔ سیما جیسی معصوم ۔۔۔ اور خوبصورت لڑکی اس حد تک کھُل چکی ہوئی تھی کہ اس وقت وہ بلکل ننگی ہو کر بیٹھی ہوئی اپنے کتے سے اپنی چوت چٹوا رہی تھی ۔۔ ۔۔۔۔ اس میں اس بیچاری ۔۔۔ معصوم سی کلی کا بھی کوئی قصور نہیں تھا ۔۔۔۔ یہ تو کمال تھا ٹامی جیسے سمجھدار اور تجربہ کار کتے کا ۔۔۔ جو اپنی حرکتوں اور اپنی زبان کے ساتھ کسی بھی لڑکی کو مدہوش کرکے اپنے سامنے بے بس کر دینے کا ماہر تھا ۔۔۔۔۔ جی ہاں ۔۔۔۔ ٹامی کوئی عام کتا نہیں تھا ۔۔۔۔ وہ خاص طور سے تربیت یافتہ تھا ۔۔۔۔ اپنے کام میں ماہر تھا ۔۔۔۔ یعنی اسے تربیت ہی یہ دی گئی ہوئی تھی کہ ایک لڑکی کو کیسے گرم کرنا ۔۔۔ اور کیسے اسے چودنا ہے ۔۔۔۔ اور اپنی اسی خوبی اور اپنے کام میں مکمل مہارت کی وجہ سے ہی ٹامی اپنی پرانی مالکن جولیا کا پسندیدہ کتا تھا ۔۔۔۔ جس سے چدوا چدوا کر جولیا کبھی بھی بور نہیں ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔ اور آج سیما بھی صر ایک دن کی مزاحمت کے بعد ہی ٹامی کے سامنے اپنی ساری مزاحمت ختم کر بیٹھی ہوئی تھی ۔۔۔۔ اور اس وقت اس بدیشی کتے کے سامنے اپنی چوت کھول کہ بیٹھی اس سے اپنی چوت چٹواتی ہوئی مزے لے رہی تھی ۔۔۔۔ ۔۔ اور کتا بھی ایسے مزے لے لے کے سیما کی چوت سے بہہ کرنکلنے والے پانی کو چاٹ رہا تھا کہ جیسے اندر سے کوئی شہد نکل رہا ہو ۔۔۔۔۔ جسکا وہ ایک قطرہ بھی ضائع جانے نہ دینا چاہتا ہو ۔۔۔۔۔ ٹامی کی کھردری ۔۔۔ لمبی ۔۔۔ گلابی زبان اتنی بری طرح سے سیما کی چوت کو چاٹ رہی تھی کہ سیما کے جسم سے اسکی جان نکلی جا رہی تھی ۔۔۔۔ اسکے منہ سے زور دار سسکاریاں نکل رہی تھیں ۔۔۔ جو کہ پورے کمرے میں پھیل رہی تھیں ۔۔۔۔۔ شازیہ سے اس سٹول پر بیٹھنا اور اپنا توازن برقرار رکھنا بہت مشکل ہو رہا تھا ۔۔۔۔ مگر پھر بھی وہ کسی نہ کسی طور ٹامی کو پکڑ کر اپنے تھرتھراتے ہوئے جسم کو سہارا دینے کی کوشش کر رہی تھی ۔۔۔۔ اچانک ٹامی کی لمبی زبان پھسل کر سیما کی چوت کے سوراخ کے اندر چلی گئی ۔۔۔ صرف ایک لمحے کے لیے ۔۔۔ مگر وہ لمحہ تو جیسے کوئی کرنٹ سا لگا گیا سیما کے جسم میں ۔۔۔۔۔ ۔۔ اور سیما کا پورے کا پورا جسم اپنی جگہ سے اچھل پڑا ۔۔۔۔۔ اور اگلے ہی لمحے شازیہ نیچے کارپٹ پہ گری ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ نیچے کارپٹ سے اٹھنے کی کوئی کوشش نہیں کی ۔۔۔ ۔۔۔ اور نہ ہی ٹامی نے اسے اٹھنے کا کئی موقع دیا ۔۔۔۔۔ وہ جلدی سے اپنی جگہ سے گھوم کر ایک بار پھر سے سیما کی چوت کی طرف آگیا ۔۔۔۔ سیما کی رانوں کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے بھی فوری اپنی ٹانگوں کو کھولتے ہوے ٹامی کو دوبارہ اپنی چوت کی طرف متوجہ کر لیا تھا ۔۔۔۔۔ ۔۔۔ اب تو جیسے ٹامی چاہتا تھا ۔۔۔۔ جو چاہتا تھا ۔۔۔۔سیما کے ساتھ وہی کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور سیما بھی بلکل ویسا ہی کر رہی تھی ۔۔۔ ۔۔۔ بنا کوئی مزاحمت کیے ۔۔۔ بنا کوئی انکار کیے ۔۔۔۔۔ مزاحمت اور انکار ۔۔۔۔ یہ تو وہاں ہوتے ہیں نا جہاں انسان کو مزہ نہ آرہا ہو ۔۔۔۔۔ جبکہ یہاں ۔۔۔۔ یہاں تو سیما کو اس سب میں پورا پورا مزہ آرہا تھا ۔۔۔۔ اس ٹامی کی زبان سیما کی چوت پر چل رہی تھی۔۔۔ اور اسکے پورے جسم کو جلا رہی تھی ۔۔۔۔ اس میں پید ا کرنے والی آگ کے ساتھ ۔۔۔۔۔ سیما تو اپنی رانوں کو پورا کھولے ہوئے ٹامی کے آگے پڑی ہوئی تھی ۔۔۔۔ اور وہ اسکی دونوں ٹانگوں کے بیچ میں کھڑا ۔۔۔۔ اپنا سر جھکائے ۔۔ اپنا منہ سیما کی چوت پر رکھے ہوئے ۔۔ اپنی لمبی زبان کے ساتھ سیما کی چوت کو چاٹتا جا رہا تھا ۔۔۔۔ ٹامی کی لمبی زبان تیزی کے ساتھ چل رہی تھی ۔۔۔ کبھی وہ اسکی پوری کی پوری چوت کو اپنی زبان سے ایک ساتھ ہی چاٹنے لگتا ۔۔۔۔ اور کبھی اسکی چوت کے اوپری حصے پر اپنی پوری توجہ لگا دیتا ۔۔۔۔۔ سیما کی چوت کے دونوں لبوں کے درمیان ۔۔۔ بلکل اوپر کے حصے میں ۔۔ اسکی چوت کا دانہ ۔۔۔ ۔۔ ٹامی کی بے رحم کھردری زبان کے رحم و کرم پر تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ جسے ٹامی کی زبان مسلسل رگڑ رہی تھی ۔۔۔۔۔ چاٹ رہی تھی ۔۔۔۔ ۔۔ اور کچھی دیر پہلے تک ٹامی کو روکنے کا ارادہ کرنے والی سیما اب صر اپنی آنکھیں بند کیے ہوئے اسکے سامنے پڑی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔ تڑپ رہی تھی ۔۔۔۔۔ سسسک رہی تھی ۔۔۔۔۔ مگر یہ تڑپ اور سسک کسی تکلیف یا درد کے مارے نہیں تھی ۔۔۔ بلکہ لذت کی وجہ سے تھیں ۔۔۔۔ ۔۔۔۔ اور اسکے منہ سے نکلنے والی تیز سسکاریاں ۔۔۔۔ پورے کمرے مٰیں گونج رہی تھیں ۔۔۔۔۔ اور اسکے دونوں ہاتھ ٹامی کے سر پر تھے ۔۔۔۔ اسے اپنے سے دور کرنے کے لیے نہیں بلکہ ۔۔۔ اسکے منہ کہ اور بھی اپنی طرف کھینچنے کے لیے ۔۔۔۔۔ کچھ ہی دیر میں سیما نے اپنی دونوں ٹانگیں اور انکو ٹامی کی کمر کے اوپر رکھتے ہوئے اسکے حیوانی جسم کو اپنی گوری گوری نازک اور سیکسی ٹانگوں کے بیچ میں دبانے لگی ۔۔۔۔ تاکہ وہ کہیں بھا گ نہ جائے ۔۔۔۔۔ سیما اپنے گورے گورے پیروں کے ساتھ ٹامی کی نرم نرم فر کو سہلا رہی تھی ۔۔۔ اسکے پیر اسکی پوری کمر پر سرک رہے تھے ۔۔۔ کبھی وہاں سے نیچے ۔۔۔ اسکی ٹانگوں کو سہلانے لگتی ۔۔۔۔ کچھ بھی نہ سوچتے ہوئے ۔۔۔۔۔ بس آنکھیں بند کیے ہوئے ۔۔۔ اپنی چوت پر اسکی زبان کے مزے لیتے ہوئے اسکے جانور کے جسم کو اپنے پیروں سے سہلانا اسے اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے جسم اور اسکی ٹانگوں کو اپنے پیروں کے ساتھ سہلاتے ہوئے ۔۔۔ پتہ نہیں کب اور کیسے ۔۔۔ اسکا پیر نیچے جانے لگا ۔۔۔۔۔ ٹامی کے پیٹ کے نیچے کی طرف ۔۔۔۔۔۔۔ اور ایسے ہی اسکا پیر ۔۔۔۔ کسی سخت سی چیز سے ٹکرایا ۔۔۔۔ جسکی سیما کو فوری طور پہ کچھ سمجھ نہیں آئی ۔۔۔ وہ اسے بھی اسکی ٹانگ کی کوئی ہڈی ہی سمجھی ۔۔۔۔ سخت سی لمبی سی ۔۔۔۔ آنکھیں بند تھیں سیما کی ۔۔۔۔ مگر دماغ جیسے کسی نشے سے باہر آرہا تھا ۔۔۔۔ اپنے پیروں کے ساتھ اس چیز کو جانچنے کی کوشش کر رہا تھا ۔۔۔۔ جاننے کی کوشش میں تھا کے یہ کیا ہوجو اسکے پیروں کے ساتھ ٹکرا رہا ہے ۔۔۔۔۔ دونوں پیر اب اسکے دماغ کی مدد کر رہے تھے ۔۔۔۔ اس چیز کو کوئی نام دینے کے لیے ۔۔۔۔ اور پھر سیما کے دماغ میں ایک چھناکا سا ہوا ۔۔۔۔۔۔۔ لنڈ ۔۔۔۔۔۔۔ لوڑا۔۔۔۔۔ لن ۔۔۔۔ ایک ساتھ ہی اس چیز کے کئی نام اسکے دماغ میں آئے ۔۔۔۔۔ اور اچانک سے ہی اسکے دونوں پیر اس چیز سے دور ہٹ گئے ۔۔۔۔۔ مگر ٹامی کی زبان کی اسکی چوت پر رگڑ اور چوت سے بہتے ہوئے چکنے پانی نے اسے سب کچھ ایک بار پھر سے بھولنے پر مجبور کر دیا ۔۔۔۔۔ اور ہو پھر سے سسکنے لگی ۔۔۔۔۔ اور تھوڑی ہی دیر میں اسکا پیر ایک بار پھر سے ٹامی کے پیٹ کے نیچے اسکے لنڈ کی طرف بڑھا ۔۔۔ اور اگلے ہی لمحے اسکے پیر نے ایک بار پھر سے ٹامی کے لنڈ کو چھونا شروع کر دیا ۔۔۔۔ آہستہ آہستہ ۔۔۔ ٹامی کو ڈسٹرب کیے بنا ۔۔۔۔ پھر اسکے دونوں پیرٹامی کے لن کے گرد لپٹ گئے ۔۔۔۔۔۔ اور آہستہ آہستہ وہ ٹامی کے لن کو اپنے دونوں پیروں کے بیچ میں لے کر دونوں پیروں کے ساتھ سہلانے لگی ۔۔۔۔ ٹامی کی زبان کے لمس کے ساتھ ہی وہ اپنی منزل کو پہنچ رہی تھی ۔۔۔۔۔ اسکی چوت کے اندر گرمی بڑھتی جا رہی تھی ۔۔۔۔ اور وہ پانی چھوڑنے والی تھی ۔۔۔۔ اگلے ہی لمحے سیما نے مضبوطی سے ٹامی کے سر کو اپنے ہاتھوں سے جکڑا اور پھر ۔۔۔۔ اسکی چوت نے پانی چھوڑنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔ چند لمحوں میں ہی سیما کا جسم ڈھیلا پڑنے لگا ۔۔۔۔ اسکی سانسوں کی رفتار تیز ہو گئی ۔۔۔۔ وہ لمبے لمبے سانس لیتی ہوئی اب خود کو نارمل کر رہی تھی ۔۔۔۔۔ اور ٹامی اپنی زبان کے ساتھ سیما کی چوت سے نکلنے والا گاڑھا گاڑھا پانی چاٹتا جا رہا تھا ۔۔۔۔۔ چوت کا پانی نکلنے کے بعد سیما نے ٹامی کو خود سے پیچھے کو دھکیلا ۔۔۔۔ اور اس بار ٹامی اسکو چھوڑ کر اس سے دور ہوگیا ۔۔۔۔۔ مگر اس کے سر کی طرف ۔۔۔ اسکے ہاتھوں کی رینج میں ہی اسکے قریب بیٹھ کر ہانپنے لگا ۔۔۔۔ اسکا جسم بھی ہل رہا تھا ۔۔۔۔ اور زبان بھی باہر لٹک رہی تھی ۔۔۔۔ سیما اسی کی طرف دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔ بڑے ہی پیار سے ۔۔۔ بڑی ہی چاہت سے ۔۔۔۔۔ کیوں کہ آج جسقدر اس جانور نے اسے مزہ دیا تھا ۔۔۔۔ وہ اسے کبھی پہلے نہیں آیا تھا ۔۔۔۔۔ اور اس مزے کے لیے وہ دل سے ٹامی کی شکر گزار تھی ۔۔۔۔ وہاں قالین پر سے اٹھنے کو اسکا دل بھی نہیں کر رہا تھا ۔۔۔۔۔ چہر ے پر سکون ہی سکون تھا ۔۔۔۔۔ اور ایک مسکان ۔۔۔۔۔ سیما کا بیڈ روم عجیب منظر پیش کر رہا تھا ۔۔۔۔۔ سیما جیسی خوبصورت لڑکی ۔۔۔۔ اپنے خوبصورت جسم کے ساتھ ننگی اپنے کمرے کے کارپٹ پر پڑی ہوئی تھی ۔۔۔۔ اور اسکا وفادار کتا ۔۔۔۔ اسکے قریب ہی بیٹھا ہوا تھا ۔۔۔۔۔ چوت کا پانی نکلنے کے بعد سیما نے اپنا سر گھما کے ٹامی کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔ اور پھر مسکرا کے اپنا ہاتھ آگے بڑھایا اور اسکے منہ کو سہلانے لگی ۔۔۔۔۔ کتا بھی اپنی مالکن کی طرف سے اپنے کام کو ۔۔۔۔ اپنی کارکردگی کو پسند کیے جانے پر خوش ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔ سیما آہستہ آہستہ اسکے سر کو سہلا رہی تھی ۔۔۔۔ سیما نے مسکراتے ہوئے اسکو دیکھتے ہوئے اپنی انگلی کو اسکے نوکیلے دانتوں پر پھیرنے لگی ۔۔۔۔ اسے تھوڑا عجیب لگ رہا تھا ۔۔۔۔ مگر اسے یہ بھی پتہ تھا ۔۔۔ یہ بھی احساس تھا کے اسکے ان دانتوں نے اسے کسطرح مزہ دیا تھا ۔۔۔ اسکے مموں کو کاٹتے ہوئے ۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے منہ پر سے سیما کا ہاتھ اسکی گردن پر آگیا ۔۔۔۔ اور پر اسکے پیٹ کو سہلانے لگی ۔۔۔۔ سیما کی نظر ٹامی کی کھلی اور پھیلی ہوئی ٹانگوں پر پڑی ۔۔۔ اور اسے وہاں وہی چیز نظر آئی ۔۔۔۔ جسے وہ تھوڑی دیر پہلے اپنے پاؤں سے سہلا رہی تھی ۔۔۔۔۔ سیما کی نظر اسی پر جم کر رہ گئی ۔۔۔۔ ٹامی کے لنڈ پر ۔۔۔۔۔ وہ اسے دیکھے جا رہی تھی ۔۔۔۔ بنا کسی اور طرف دیکھے ۔۔۔۔۔ بنا اپنی پلکیں جھپکائے ۔۔۔۔۔ وہ سرخ رنگ کا لمبا سا ۔۔۔۔ چمکتا ہوا ۔۔۔ کسی ہڈی کی طرح ہی لگ رہا تھا ۔۔۔ مگر اس وقت بہت زیادہ اکڑا ہوا نہیں تھا ۔۔۔ پھر بھی کافی لمبا لگ رہا تھا ۔۔۔ قریب قریب 8 انچ تو ہو گا وہ اس وقت بھی ۔۔۔۔۔ اگے سے بلکل پتلا سا نوکدار ۔۔۔۔ اور پیچھے کو جاتے ہوئے موٹا ہوتا جاتا تھا ۔۔۔۔۔ پھیلتا جاتا تھا ۔۔۔۔ اسکے لنڈ کے اگلے سوراخ میں سے بھی ہلکا ہلکا پانی رِس رہا تھا ۔۔۔۔ سیما کا ہاتھ ابھی بھی ٹامی کے جسم پر تھا ۔۔۔۔ اسکی پسلیوں کو سہلا رہا تھا ۔۔۔۔۔ سیما کا ہاتھ آہستہ آہستہ آگے کو سرکنے لگا ۔۔۔۔ ٹامی کے لنڈ کی طرف ۔۔۔۔۔ اسکا دل زور زور سے دھڑک رہا تھا ۔۔۔۔ وہ خود کو روکنا چاہ رہی تھی ۔۔۔۔۔ مگر اسکا جسم ۔۔۔ اسکے قابو میں نہیں تھا ۔۔۔۔۔ ہاتھ آہستہ آہستہ سرکتا ہو آگے کو بڑھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ چند لمحوں میں ہی سیما کا ہاتھ ٹامی کے لنڈ کے قریب پہنچ چکا ہوا تھا ۔۔۔۔۔ اپنے دھڑکتے ہوئے دل کے ساتھ ۔۔۔۔۔ سیما نے اپنی انگلی سے اسکے لن کی نوک کو چھوا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور فورا" ہی اپنا ہاتھ واپس کھینچ لیا ۔۔۔ جیسے اس میں کوئی کرنٹ ہو ۔۔۔۔ یا جیسے اس کا لن اسکی انگلی کو کاٹ لے گا ۔۔۔۔۔ یا اسے ڈنک ماردے گا ۔۔۔۔۔ مگر ٹامی کے لن میں ذرا سی حرکت پیدا ہونے کے سوا اور کچھ بھی نہیں ہوا ۔۔۔۔۔ اسکا لن ویسے کا ویسے ہی اسکی ران کے اوپر پڑا رہا ۔۔۔۔۔۔ کچھ ہی دیر کے بعد سیما نے دوبارہ سے اپنی انگلی سے ٹامی کے لن کو چھونا شروع کر دیا ۔۔۔۔ اس پوزیشن میں لیٹے ہوئے سیما کا ہاتھ بڑی ہی مشکل سے ٹامی کے لن تک پہنچ رہا تھا ۔۔۔۔ کچھ سوج کر سیما نے تھوڑا سی حرکت کرتے ہوئے ٹامی کے جسم کے نچلے حصے کی طرف سرک گئی ۔۔۔۔۔ اب اسکی انگلی بڑی آسانی کے ساتھ ٹامی کے پورے لنڈ پر سرک رہی تھی ۔۔۔ اسے سہلا رہی تھی ۔۔۔۔۔ سیما نے ٹامی کے چہرے کی طرف دیکھا ۔۔۔۔ مگر اس جانور نے کونسا کوئی اپنے چہرے سے تاثرات دینے تھے ۔۔۔۔ جو وہ سیما کی حرکت سے خوشی کا اظہار کرتا ۔۔۔۔۔ لیکن ایک بات کی سیما کو تسلی تھی کہ ٹامی کوئی ناپسندیدگی بھی نہیں دکھا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ اور اسی کی طرف دیکھتے ہوئے ۔۔۔ سیما کے ہاتھ کی پوری انگلیاں اسکے لنڈ کے گرد لپٹ گئیں ۔۔۔۔ بہت ہی گرم ۔۔۔۔۔ چکنا چکنا ۔۔۔۔ اور سخت ۔۔۔۔۔ اور لمبا ۔۔۔۔ اور مضبوط محسوس ہو رہا تھا اسے ٹامی کا لنڈ ۔۔۔۔۔ سیما نے اسے اپنے ہاتھ میں لے کر آہستہ آہستہ اپنی مٹھی کے اندر ہی اسے آگے پیچھے کرنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔ ٹامی کا لنڈ اسکی مٹھی میں آگے پیچھے کو سرک رہا تھا ۔۔۔۔ اسکے لنڈ کے چکنے پن سے سیما کا ہاتھ بھی چکنا ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔ اسکے لنڈ کو محسوس کرتی ہوئی وہ اسکا موازنہ انسانی لنڈ کے ساتھ بھی کر رہی تھی ۔۔۔۔ یعنی اپنے شوہر کے لنڈ کے ساتھ ۔۔۔۔ اور بنا کسی چیز کو ناپے وہ بآسانی کہہ سکتی تھی کہ ٹامی کالنڈ اسکے شوہر کے لنڈ سے لمبا اور موٹا ہے ۔۔۔۔۔ سیما کے سہلانے سے ۔۔۔۔ اسکی مٹھ مارنے سے ۔۔۔۔۔ ٹامی کو بھی شائد مزہ آنے لگا تھا ۔۔۔۔ وہ پہلے تو اسی طرح لیٹا رہا ۔۔۔ مگر پھر اپنی جگہ سے اٹھ کر کھڑا ہوگیا ۔۔۔۔۔۔ سیما ابھی بھی ٹامی کے قریب نیچے کارپٹ پر ہی لیٹی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔ اور اب ٹامی اسکے سامنے کھڑا تھا ۔۔۔۔ مگر اب سیما کو اس سے کوئی بھی ۔۔۔۔ کسی قسم کا بھی ۔۔۔۔ خوف محسوس نہیں ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ اسکے اچانک اٹھ کر کھڑا ہونے سے اسکا لنڈ سیما کے ہاتھ سے نکل گیا تھا ۔۔۔۔۔ مگر اسے اپنی جگہ سے کہیں آگے نہ جاتے ہوئے دیکھ کر سیما نے ایک بار پھر سے اسکا لنڈ پکڑ لیا ۔۔۔۔ اور آہستہ آہستہ اسے سہلانے لگی ۔۔۔۔۔ ٹامی اگر اپنے لنڈ کو ابھی بھی سیما کے ہاتھ میں دیئے رکھنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔ تو سیما کا دل بھی اسکے لنڈ کو اپنے ہاتھ سے چھوڑنے کو نہیں چاہ رہا تھا ۔۔۔۔۔ اب وہ نیچے کارپٹ پر پڑی ہوئی ۔۔۔۔ ٹامی کے پیٹ کے نیچے ۔۔۔ اسکی فر میں سے ۔۔۔۔ کھال میں ہورہے ہوئے سوراخ میں سے نکلتے ہوئے لنڈ کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔ اسے چھو رہی تھی ۔۔۔۔ اور اپنے ہاتھ میں لے کر ایک بار پھر سے اسے آگے پیچھے کر رہی تھی ۔۔۔۔ ٹامی کے لنڈ میں سے نکلنے والا کوئی لیسدار سا مواد ۔۔۔۔۔ صاف ظاہر ہے کہ ۔۔۔۔ ٹامی کی منی ہی تھی وہ ۔۔۔۔ نکل نکل کر سیما کے ہاتھ پر لگ رہی تھی ۔۔۔۔ مگر وہ اپنی ہی ۔۔۔۔ اس نئی دنیا میں مگن ۔۔۔۔۔ اسے اپنے ہاتھ آئی ہوئی یہ نئی چیز اچھی لگ رہی تھی ۔۔۔۔ سیما کو محسوس ہوا کہ اب ٹامی کا لنڈ پہلے کی نسبت اکڑ چکا ہوا ہے ۔۔۔۔ اور بھی سخت ہو چکا ہے ۔۔۔۔۔ سیما کا ہاتھ اس کے لنڈ پر پیچھے کو جانے لگا ۔۔۔۔۔۔ اسکی جڑ تک ۔۔۔۔۔ اور پیچھے اسے کچھ اور ہی چیز محسوس ہوئی ۔۔۔۔۔۔ کچھ موٹی سی ۔۔۔۔ گول سی ۔۔۔ بہت بڑی سی ۔۔۔۔ سیما تھوڑا اب اور بھی ٹامی کے لنڈ کی طرف سرک آئی ۔۔۔۔ کافی قریب پہنچ چکی تھی اسکے لنڈ کے ۔۔۔۔۔اور اب ۔۔۔۔۔۔ وہ اسکی طرف دیکھنے لگی ۔۔۔۔ یہ ٹامی کے لنڈ کا آخری حصہ تھا ۔۔۔۔ جو کہ کسی گیند کی طرح موٹا اور پھولا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ مرغی کے انڈے کے جتنا موٹا اور بڑا ۔۔۔۔۔۔ اب بہت قریب سے ٹامی کا لنڈ دیکھنے پر اسے اور بھی یہ عجیب لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔ لمبا سا موٹا سا ہتھیار تھا کتے کا ۔۔۔۔۔ جس پر چھوٹٰی چھوٹی رگیں ہی رگیں تھیں۔۔۔۔۔۔ گہرے نیلے رنگ کی ۔۔۔۔ ان گہری نیلی رگوں کی تعداد اتنی زیادہ تھی اسکے لنڈ پر کہ اسکے لنڈ کا سرخ رنگ اب جامنی سا ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ اپنے ہاتھ میں پکڑ کر ٹامی کے سرخ لنڈ کو سہلاتے ہوئے ۔۔۔۔ سیما کی نظروں میں وہ تما م فلمیں چل رہی تھیں اینیمل سیکس کی جو اس نے پہلے دیکھ رکھی تھیں ۔۔۔۔۔ اسکے دماغ میں گھوم رہا تھا کہ کیسے لڑکیاں ایک کتے کا لنڈ منہ میں لے کر چوستی ہیں ۔۔۔۔۔ کیسے اسے اپنی زبان سے چاٹتی ہیں ۔۔۔۔۔۔ پہلے جب اس نے یہ سب دیکھا تھا تو اسے گھن آتی تھی ۔۔۔۔۔ مگر اب ۔۔۔ اس وقت حقیقت میں ایک کتے کا لن اپنے ہاتھ میں پکڑ کر اسے سہلاتے ہوئے اسکا ذہن کچھ بدل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ اب اسے اتنا برا نہیں لگ رہا تھا ۔۔۔۔ بلکہ اسکا دل چاہ رہا تھا کہ آج ایک بار ۔۔۔۔۔۔ صر ف ایک بار ۔۔۔۔ پہلی اور آخری بار ۔۔۔۔۔۔ وہ بھی اس کتے کے لن کو اپنی زبان لگا کر چیک تو کرے کہ کیسالگتا ہے اسکا ذائقہ ۔۔۔۔۔ اور کیا سچ میں کوئی مزہ بھی آتا ہے یا کہ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ یہی سوچتے ہوئے بلکل غیر ارادی طور پر ۔۔۔۔ اور ایسے کہ جیسے وہ کسی جادو کے زیر اثر ہو۔۔۔۔ آہستہ آہستہ ٹامی کے لن کی طرف بڑہ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکل قریب ۔۔۔۔۔ اسکے ہونٹ ٹامی کے ہونٹوں کے بلکل قریب پہنچ چکے تھے ۔۔۔۔۔۔ اسکا اپنا دماغ بلکل بند ہو چکا ہوا تھا ۔۔۔۔۔ وہ کچھ بھی اور نہیں سوچ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ بس اسے ٹامی کا لن ہی نظر آرہا تھا ۔۔۔۔۔ بنا سوچے سمجھے ۔۔۔ آخر کار سیما نے اپنے ہونٹوں کے ساتھ ٹامی کے لن کو چھو لیا ۔۔۔۔۔ صف ایک لمحے کے لیے ۔۔۔۔۔۔ اور فورا" ہی اسکا منہ پیچھے ہٹ گیا ۔۔۔۔۔۔۔ سیما کو حیرت ہوئی کہ اسے یہ برا نہیں لگا تھا ۔۔۔۔۔۔ ڈرتے ڈرتے سیما نے ٹامی کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔ پھر اپنے اردگرد ایک نظر دوڑائی ۔۔۔۔ یہ دیکھنے کےلیے کہ کوئی اسے دیکھ تو نہیں رہا ۔۔۔۔۔ پھر اپنی تسلی کرنے کے بعد اس نے دوبارہ اپنے ہونٹ ٹامی کے لن کی طرف بڑھا ئے ۔۔۔۔۔ اور ایک بار پھر اسکے لن کو اپنے ہونٹوں سے چھوا ۔۔۔۔۔۔۔ اپنا ہاتھ پیچھے کے حصے میں لے جا کر سیما نے اسکے لن کے موٹے گول حصے کے پیچھے سے ٹامی کے لن کو اپنے ہاتھ کی گرفت میں لیا ۔۔۔۔۔ اور اپنے ہونٹوں کو جوڑ کر اسکے لن پر لمبائی کے رخ پھیرنے لگی ۔۔۔۔۔ عجیب سا مزہ آنے لگا تھا سیما کو ۔۔۔۔۔۔۔ وہ اپنے ہونٹوں سے جیسے اسکے لن کو سہلا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ گھس رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ کچھ دیر تک ایسے ہی اپنے ہونٹوں کے ساتھ ٹامی کے لن کو سہلانے کے بعد سیما کا خوف اور جھجھک ختم ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ اسے جیسے جیسے یہ سب اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔ وہ ویسے ویسے ہی کھلتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ ساتھ ہی اسکے ہونٹ بھی کھلے اور اس کی زبان باہر نکلی ۔۔۔۔۔ اور اس نے اپنی زبان کی نوک کے ساتھ ٹامی کے لن کو سہلانا شروع کر دیا ۔۔۔۔ اس کے لن پر اپنی زبان آہستہ آہستہ پھیرنے لگی ۔۔۔۔ اسکی نوک سے لے کر اسکی پیچھے کی موٹی گولائی تک ۔۔۔۔۔۔۔ سیما اب اپنی زبان پھیرتی ہوئی اسکے لن کو محسوس کر رہی تھی ۔۔۔۔ کچھ عجیب سی چیز لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔ نئی سی ۔۔۔۔۔جمال کے لن سے مختلف۔۔۔۔ عجیب سا مگر اچھا ۔۔۔۔۔۔ سیما نے اپنی زبان کو ٹامی کے لن کی نوک پر رکھا ۔۔۔۔ اور اسے اپنی زبان سے چاٹنے لگی ۔۔۔۔۔ سیما کو حیرت ہوئی کے اس میں سے وقفے وقفے سے تھوڑا تھوڑا پانی نکل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ ہلکی سی دھار کی صورت میں ۔۔۔۔۔ اور ایک بار تو جب سیما کی زبان اسکی نوک پر تھی تو وہی پانی اسکی زبان پر آگیا ۔۔۔۔۔ سیما نے فورا' ہی اسے تھوک دیا ۔۔۔۔ مگر زبان پر اسکا ذائقہ رہ گیا ۔۔۔ تبھی سیما کو لگا ۔۔۔۔ احساس ہوا کہ اسکا ذائقہ کچھ اتنا بھی برا نہیں ہے ۔۔۔۔۔ سیما نے اب ایک بار پھر اپنی زبان سے اسکے لن کو چاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔۔ پھر پیچھے اپنی زبان لے جا کر اسکی موٹی گیند کو چاٹا ۔۔۔۔۔ اور ایک بار پھر ہمت کر کے اسکے لن کی ٹوپی کو اپنے ہونٹوں کے بیچ میں لیا ۔۔۔ اور اسے چوسنے لگی ۔۔۔۔۔ آنکھیں بند کر کے ۔۔۔۔۔ کچھ بھی نہ سوچتے ہوئے ۔۔۔۔۔ مگر اسکے لن سے نکلنے والے پانی کو قبول کرتے ہوئے ۔۔۔۔ اور پھر ٹامی کے لن سے اسکا ہلکا ہلکا پانی نکل کر سیما کے منہ کے اندر گرنے لگا ۔۔۔۔۔۔ مگر اس بار سیما نے اسکے لن کو اپنے منہ سے باہر نہیں نکالا ۔۔۔۔ اور اسے چوسنے لگی ۔۔۔۔ اسکے لن کا پانی نکل نکل کر سیما کے منہ کے اندر گرنے لگا ۔۔۔۔ کچھ عجیب سا ذائقہ لگ رہا تھا اسے ۔۔۔۔۔۔ مرد کے لن سے مختلف ۔۔۔۔۔ گاڑھا پانی نہیں تھا مرد کی طرح بلکہ پتلا پتلا سا تھا ۔۔۔۔۔ نمکین سا ۔۔۔۔۔ کسیلا سا ۔۔۔۔۔۔ جو کہ اب سیما کے حلق سے نیچے اتر رہا تھا ۔۔۔۔ اسکے گلے میں سے ہوتا ہوا اسکے پیٹ کے اندر ۔۔۔۔۔ مگر اب سیما کو یہ برا نہیں لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔ وہ اب اپنے ہاتھوں اور گھٹنوں کے بل جھکی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔ اور ٹامی کا لنڈ اپنے ہاتھ میں پکڑ کر اسے اپنی زبان سے چاٹ رہی تھی ۔۔۔۔ کبھی اسے منہ کے اندر لیتی اور چوسنے لگتی ۔۔۔۔۔۔ سب کچھ بھول بھال کر سیما اب صر مزہ لے رہی تھی ۔۔۔۔۔ خود کو پوری طرح سے اپنے کتے کے ساتھ مست کر چکی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ جانور اور انسان کا فرق ختم کر چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اور اسکے لن کو چوستی چلی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی نےاپنی جگہ سے حرکت کرتے ہوئے اپنا لنڈ سیما کے ہاتھ میں سے چھڑوایا ۔۔۔۔ اور گھوم کر سیما کے پیچھے آگیا ۔۔۔۔۔۔ اور سیما کی گوری گوری گانڈ کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔ اسکی زبان سیما کی گانڈ کے بیچ میں گھستی ہوئی اسکی چوت تک پہنچ رہی تھی ۔۔۔۔۔ اور جیسے ہی ایک بار پھر سے ٹامی کی زبان سیما کی چوت سے ٹکرانے لگی تو ۔۔۔۔ سیما کی چوت کی آگ ایک بار پھر سے بھڑکنے لگی ۔۔۔۔۔۔ ٹامی اب پوری طرح سے متحرک ہو چکا ہوا تھا ۔۔۔۔۔ کبھی وہ سیما کی چوت کو چاٹتا کبھی اسکی گانڈ کو چاٹنے لگتا ۔۔۔۔۔۔ ادھر سیما کا بھی برا حال ہو رہا تھا لذت کے مارے ۔۔۔۔۔۔۔ وہ اپنی کہنیاں زمین پر ٹکا کر اپنا سر اپنے ہاتھوں پر رکھے اپنی گانڈ کو اور بھی اوپر کہ اٹھا کر نیچے جھک ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔ ٹامی اسکی چوت کو چاٹ رہا تھا ۔۔۔۔۔ اور اسکے منہ سے نکلنے والی سسکاریوں سے پورا کمرہ گونج رہا تھا ۔۔۔۔۔۔

Posted on: 09:16:AM 13-Dec-2020


0 0 573 0


Total Comments: 0

Write Your Comment



Recent Posts


Hello Doston, Ek baar fir aap sabhi.....


0 0 19 1 0
Posted on: 06:27:AM 14-Jun-2021

Meri Arrange marriage hui hai….mere wife ka.....


0 0 11 1 0
Posted on: 05:56:AM 14-Jun-2021

Mera naam aakash hai man madhya pradesh.....


0 0 14 1 0
Posted on: 05:46:AM 14-Jun-2021

Hi friends i am Amit from Bilaspur.....


0 0 74 1 0
Posted on: 04:01:AM 09-Jun-2021

Main 21 saal kahu. main apne mummy.....


1 0 58 1 0
Posted on: 03:59:AM 09-Jun-2021

Send stories at
upload@xyzstory.com