Stories


انوکھا رشتہ انوکھی چاہت از پنک بے بی۔اینیمل سیکس

اچانک ٹامی نے ایک چھلانگ لگائی اور اپنی دونوں اگلی ٹانگیں سیما کی کمر پر رکھ کر اسکے اوپر چڑھ گیا ۔۔۔۔۔ اسکے اگلے دونوں پاؤں سیما کی کمر پر تھے ۔۔۔۔ اور پیچھے سے اس نے اپنے لنڈ کو سیما کی گانڈ سے ٹکرانا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما سمجھ گئی کہ وہ اب اپنا لنڈ اسکی چوت میں داخل کرنا چاہتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ گھبرا گئی ۔۔۔۔۔۔ ایسا تو اس نے نہیں سوچا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس حد تک جانا اس کے پروگرام میں شامل نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ تو بس اپنی چوت چٹوانے تک کا مزہ چاہتی تھی ۔۔۔۔۔ مگر اب تو شائد بات اسکے کنٹرول سے نکل رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ ٹامی اسکے اوپر چڑھ کر اسکو چودنے کی تیاری میں تھا ۔۔۔۔۔۔ سیما گھبرا گئی ۔۔۔۔۔۔ اس نے جلدی سے اٹھ کر اپنی جگہ سے کھڑی ہونا چاہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر ٹامی نے اپنا پورا وزن سیما کی کمر پرڈال دیا ۔۔۔۔ اپنے اگلے پیروں کی گرفت اسکے کاندھوں پر اور مضبوط کر دی ۔۔۔۔۔۔۔ اور پیچھے سے اپنا لنڈ اور بھی تیزی کے ساتھ اسکی گانڈ کی دراڑ میں مارنے لگا ۔۔۔۔۔ اسے سیما کی چوت میں داخل کرنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔ سیما اب کافی خوفزدہ تھی ۔۔۔۔۔۔ مگر کچھ اور بھی تو عجیب ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔ کہ جب جب ٹامی کا لنڈ سیما کی چوت سے ٹکراتا تو اسے الگ ہی مزہ ملتا ۔۔۔۔۔۔ الگ ہی دنیا کی سیر کرواتا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک طرف تو سیما کو اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔ اسکا دل چاہ رہا تھا کہ وہ خود ٹامی کا لنڈ اپنی چوت میں لے لے ۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ سوچ کر کہ اگر اتنا مزہ صرف لنڈ کے باہر سے اسکی چوت سے ٹکرانے سے مل رہا ہے تو اگر یہ لنڈ چوت کے اندر چلا جائے گا تو پھر اسے کتنا مزہ دے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر دوسرے ہی لمحے اسے کچھ اور خیال آنے لگتا ۔۔۔۔۔ اپنی حیثیت کا ۔۔۔ ۔۔۔ اپنے ایک انسان ۔۔۔ ایک عورت ہونے کا ۔۔۔۔۔۔ اور یہ کہ وہ تو ایک جانور ہے ۔۔۔۔۔۔۔ کتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ تو وہ کیسے ایک کتے کو اپنا لنڈ اپنی چوت کے اندر ڈال کر خود کو اس سے چدوا سکتی ہے ۔۔۔کیسے ایک کتے کے سامنے کتیا بن کر کھڑی ہو سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ کیسے ایک کتے کو خود کو چودنے کی اجازت دے سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیسے ایک کتے کو اجازت دے سکتی ہے کہ وہ اسے اپنی کتیا سمجھ کر چود ڈالے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ سوچ کر اس نے ایک بار پھر سے خود کو اپنی اس پوزیشن سے ۔۔۔۔۔۔۔۔ کتیا کی پوزیشن سے ۔۔۔۔ کھڑا کرنے کا ارادہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر ۔۔۔ ۔۔۔۔۔ مگر اب تو سب کچھ اسکے بس سے باہر تھا ۔۔۔۔۔۔ وہ تو اب اپنے ٹامی کی ۔۔۔۔۔ ایک کتے کی غلامی میں تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے نیچے ۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ کتا اپنا لنڈ اسکی چوت کے اندر ڈالنے کی کوشش میں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ جیسے ہی ٹامی نے محسوس کیا کہ سیما ایک بار پھر سے اسکے نیچے سے نکلنے کے لیے زور لگا رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اسے اپنی چوت دیئے بنا اسکے نیچے سے نکلنا چاہتی ہے ۔۔۔ تو اس نے اپنی گرفت اسکے جسم پر اور بھی سخت کر دی ۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر اپنا آخری حربہ بھی آزما لیا ۔۔۔۔۔۔۔ اس نے اپنا منہ کھول کر سیما کی گردن کو اپنے نوکیلے ۔۔۔۔ لمبے لمبے ۔۔ خوفنا ک دانتوں کے بیچ میں لے لیا ۔۔۔۔۔۔۔ اور اسکی گردن پر اپنے دانتوں کا دباؤ بڑھانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جیسے ہی سیما کو اپنی گردن کو گوشت میں ٹامی کے دانت گھستے ہوئے محسوس ہوئے تو وہ خوف کے مارے اپنی جگہ پر ساکت ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ کہیں ٹامی سچ میں ہی اسکی گردن کو نا کاٹ لے ۔۔۔۔۔۔۔ جیسے ہی سیما نے اپنی حرکت بند کی ۔۔۔۔۔۔ تو یہ لمحہ ٹامی کے لیے کافی تھا ۔۔۔۔۔ اس نے دوبارہ سے سیما کی چوت پر حملہ شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔ اسکا لنڈ اب سیما کی چوت کے سوراخ سے ٹکرا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور آخر ایسے ہی ایک زور دار دھکے کے ساتھ ٹامی کا موٹا لنڈ سیما کی چوت کی گہرائیوں میں اتر گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اسکے ساتھ ہی کمرے میں سیما کی ایک درد بھری ۔۔۔۔۔ بہت ہی تیز چیخ گونج گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس نے دوبارہ سے ٹامی کی گرفت سے نکلنے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر فورا' ہی اسے اپنی گردن میں کیل سے گھستے ہوئے محسوس ہوئے ۔۔۔۔۔۔ اور وہ مزید نہ ہل سکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ادھر پچھے سے اب ٹامی کا لنڈ پورے کا پورا سیما کی چوت کے اندر جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کے کاندھوں کو پکڑے ہوئے وہ دھنا دھن گھسے مار رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کی چوت کو چود رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکا لمبا لنڈ بہت گہرائی تک جا رہا تھا سیما کی چوت کے اندر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سیما بلکل بےبس ہو چکی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔ وہ چاہتے ہوئے بھی ہل نہیں پا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ ایک بات جو سیما کو عجب لگ رہی تھی وہ یہ تھی کہ ٹامی کے دھکے مارنے کا انداز ایسا تھا کہ جیسے کوئی مشین چل رہی ہوئی ہو ۔۔۔۔۔ اتنی تیزی کے ساتھ ٹامی کا لنڈ سیما کی چوت کے اندر باہر ہو رہا تھا کہ سیما کو یقین نہیں ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر اسے اب یہ بات بھی قبول کرنے میں کوئی شرم محسوس نہیں ہو رہی تھی کہ اسے بھی ٹامی کے لنڈ سے چدائی میں مزہ آنا شروع ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔ سیما نے اب اپنی مزاحمت بلکل ختم کر دی ہوئی تھی ۔۔۔۔ اور دوبارہ سے کارپٹ پر اپنے ہاتھوں کے اوپر اپنا سر رکھ کر اپنی گانڈ کو اور بھی ہوا میں اوپر کو اٹھاتی ہوئی ۔۔۔ اپنی گانڈ کو پیچھے کو دھکیل رہی تھی ۔۔۔۔۔ سیما کی آنکھیں بند ہو رہی تھیں ۔۔۔۔ اور چوت تھی کہ بس پانی ہی چھوڑتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ تیز رفتاری کے ساتھ دھکے مارتے ہوئے ٹامی کا لنڈ سیما کی چوت میں سے نکل گیا ۔۔۔۔۔۔ سیما نے فورا' ہی اپنا ہاتھ پیچھے اپنی رانوں کے بیچ میں لے جا کر ٹامی کا لنڈ اپنے ہاتھ میں پکڑا اور اسکی نوک کو دوبارہ سے اپنی چوت کے سوراخ پر ٹکا دیا ۔۔۔۔۔۔ اور اگلے ہی لمحے ٹامی کا لنڈ ایک بار پھر سے سیما کی چوت میں اتر چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر سے اس کی چوت کی دھنائی شروع ہو چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کی چوت لنڈ اندر جانے کے بعد سے 3 بار پانی چھوڑ چکی تھی ۔۔۔۔۔۔ مگر ٹامی ابھی تک لگا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نڈھال ہوتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔ اچانک ہی ٹامی نے ایک زور دار دھکا مارا اور پھر یکدم سے ساکت ہو گیا ۔۔۔۔۔ مگر اس آخری دھکے کے ساتھ ہی سیما کی ایک بار پھر سے چیخ نکل گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسے اپنی چوت پھٹتی ہوئی محسوس ہوئی ۔۔۔۔۔ جیسے کوئی بہت بڑی چیز اسکی چوت میں کسی نے ڈال دی ہو ۔۔۔۔۔۔ گول سی ۔۔۔۔ موٹی سی ۔۔۔۔۔۔ تبھی سیما کو خیال آیا کہ شائد ٹامی نے اپنے لنڈ کا آخری موٹا گول حصہ بھی اسکی چوت کے اندر پھنسا دیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ لیکن اب ٹامی کوئی حرکت نہیں کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ بس سیما کے اوپر بلکل آرام سے کھڑا تھا ۔۔۔۔۔ اور سیما کو اپنی چوت کے اندر ٹامی کے لنڈ سے اسکی گرم گرم منی گرتی ہوئی محسوس ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔ اور اسکی منی کی گرمی سے سیما کی چوت نے ایک بار پھر سے پانی چھوڑ دیا ۔۔۔۔۔ اور سر نیچے رکھے رکھے لمبے لمبے سانس لینے لگی ۔۔۔۔۔۔۔ اب سیما کو لگا کے اپنا پانی نکالنے کے بعد ٹامی بھی اپنا لنڈ اسکی چوت سے نکال لے گا ۔۔۔۔ مگر کافی دیر تک بھی ٹامی نے اپنا لنڈ باہر نہیں نکالا تو سیما کو پریشانی ہونے لگی ۔۔۔۔ اس نے خود کو حرکت دی ۔۔۔۔ اور اسے نیچے اترنے کو بولا ۔۔۔۔۔۔ مگر ٹامی اپنی جگہ پر کھڑا تھا ۔۔۔۔۔ اچانک ٹامی نے اپنی اگلی ٹانگیں سیما کے اوپر سے اتاریں ۔۔۔۔ اور ایک طرف کو گھوم گیا ۔۔۔۔۔۔ اور ساتھ ہی سیما کی چیخیں نکل گئیں ۔۔۔۔۔۔ اب ٹامی اپنے لنڈ اور پیچھے کی گولائی کو پورے کا پورا سیما کی چوت میں گھماتا ہوا اپنا رخ موڑ چکا تھا ۔۔۔۔ اب سیما کی گانڈ ٹامی کی گانڈ کے ساتھ لگی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔ سیما نے خود کو آگے کھینچتے ہوئے اسکا لنڈ اپنی چوت سے نکالنا چاہا مگر ۔۔۔۔ اسقدر تکلیف ہوئی کہ وہ وہیں رک گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اچانک ہی ٹامی نے آگے کو چلنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔ سیما کا حیرت سے برا حال ہونے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسے فکر ہونے لگی ۔۔۔۔۔۔ کتا اب اسکے کمرے سے باہر کو جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اور اپنی چوت میں پھنسے ہوئے ٹامی کے لنڈ کے ساتھ سیما بھی اسکے پیچھے پیچھے کھینچنے پر مجبور تھی ۔۔۔۔۔۔ وہ الٹے قدموں اپنے گھٹنوں اور ہاتھوں پر ٹامی کے پیچھے پیچھے رینگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ سیما: ٹامی ۔۔۔۔۔۔ ٹامی ۔۔۔۔۔۔ پلیز سٹاپ ۔۔۔۔۔۔ رک جاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر ٹامی کہاں سن رہا تھا ۔۔۔۔۔ وہ تو اسے گھسیٹتا ہوا لاؤنج میں لے آیا تھا ۔۔۔۔۔ اور اب بیچ لاؤنج میں کھڑا ہوا ہانپ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ اتنے میں دروازے پر دستک ہوئی ۔۔۔۔۔ سیما تو خوف کے مارے سن ہو کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔ وہ یہ سوچ سوچ کر ہی مری جا رہی تھی کہ اگر کسی نے اسے اس طرح کتے کے ساتھ دیکھ لیا تو وہ تو کبھی کسی کو منہ دکھانے کے قابل ہی نہیں رہے گی ۔۔۔۔ اسکے منہ سے کوئی لفظ نہیں نکل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس نے ایک بار پھر سے کوشش کی کے ٹامی کا لنڈ اسکی چوت سے باہر نکل آئے مگر نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ باہر سے خانساماں کی آواز آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بی بی جی ۔۔۔۔۔ کھولیں دروازہ ۔۔۔۔۔ کھانا بنانے کا وقت ہو گیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ سیما خوف سے بھری ہوئی آواز میں بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔ ابھی تھوڑی دیر کے بعد آنا ۔۔۔۔۔۔۔ ابھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ ابھی میں مصروف ہوں ۔۔۔۔۔۔ خانساماں ۔۔۔ جی مالکن کہہ کر واپس چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب اسے کیا پتہ تھا کہ اسکی مالکن اندر کس کام میں مصروف ہے ۔۔۔۔۔ اسے کیا معلوم تھا کے اندر اسکی مالکن اپنے کتے سے چد رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے جانے کے بعد سیما نے کچھ سکون کا سانس لیا ۔۔۔۔ کوئی پندرہ منٹ کے بعد ٹامی کا لنڈ اسکی چوت سے باہر نکلا ۔۔۔۔۔ اس نے فورا' ہی سیما کی چوت کو چاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔ اپنی منی اور سیما کی چوت کے پانی کو چاٹ کر صاف کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔ اور سیما نیچے سر جھکاے ۔۔۔۔ ایک کتیا کی طرح اسکے سامنے جھکی رہی ۔۔۔۔ اور پھر اس نے کروٹ لی ۔۔۔۔ اور کارپٹ پر ہی سیدھی ہو کر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی کی طرف دیکھتی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حیرانی ۔۔۔ اور شرم سے ۔۔۔۔۔۔ اور پھر اچانک ہی اسکی زور دار ہنسی چھوٹ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ قہقہے لگا کر زور زور سے ہنسنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاہاہاہاہاہاہاہہاہاہہاہاہاہہاہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اہہاہاہاہاہہہہاہاہاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ناٹ بیڈ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کے منہ سے ہنسی کے بعد یہی الفاظ نکلے ۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر وہ اپنی جگہ سے اٹھی اور ٹامی کے سر کو سہلا کر اپنے کمرے کی طرف چل پڑی ۔۔۔۔۔۔۔ دوبارہ سے نہانے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شام کو جمال آیا تو تھوڑی دیر کے لیے وہ واک کرنے کے لیے نکل گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی کو بھی ساتھ لے کر ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما بھی روز انکے ساتھ جاتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ مگر آج اسکا دل نہیں کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ وہ کچھ کشمکش میں تھی کہ یہ سب کیا ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ وہ جانتی تھی کہ اسے مزہ آیا ہے ۔۔۔۔۔ اچھا لگا ہے ۔۔۔۔ مگر یہ بات اسکے دل میں چبھ رہی تھی کہ یہ ٹھیک نہیں ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔ انکے جانے کے بعد وہ لاؤنج میں آئی ۔۔۔۔ چائے پی رہی تھی کہ اسکی نظر ایک کونے میں لگے ہوئے ٹامی کے بستر کی طرف گئی ۔۔۔۔۔۔۔ کچھ دیر تک اسے دیکھتی رہی ۔۔۔۔ اور پھر اٹھ کر ٹامی کے بستر کے پاس آگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ چار فٹ لمبائی کا ایک روئی سے بھرا ہوا ایک گدا تھا ۔۔۔۔۔۔ بہت ہی نرم سا ۔۔۔۔۔ جو کہ ٹامی کے بستر کے لیے استعمال کیا جاتا تھا ۔۔۔۔۔۔ سیما اسکے بستر کے قریب بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔ اور پھر اپنا ہاتھ آہستہ آہستہ ٹامی کے بستر پر پھیرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسے سہلانے لگی ۔۔۔۔۔۔ اسے اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔وہ اپنی جگہ سے تھوڑا سا ہلی ۔۔۔۔ اور پھر ٹامی کے بستر پر بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔ اسے ٹامی کے بستر پر بیٹھنا اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ دھیرے دھیرے اس پر ہاتھ پھیرتی ہوئی وہ ٹامی کے بستر پر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔۔ اپنا چہرہ اس نرم نرم بستر پر پھیرنے لگی ۔۔۔۔۔ اپنی ناک اس پر رگڑنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بستر میں سے عجیب سی بو آ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ جانور کے جسم کی ۔۔۔۔۔ مگر سیما کو بری نہیں بلکہ اچھی لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ وہ بس اپنا چہرہ اس پر رگڑتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکا دل چاہ رہا تھا کہ وہ اپنا ننگا جسم اس پر سہلائے ۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے بنا کچھ سوچے ۔۔۔۔ اپنی شرٹ کو نیچے سے پکڑ کر اوپر اٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔ اور ایک ہی لمحہ میں اپنے جسم سے الگ کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر ننگی ہو کر کتے کے بستر پر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔ اپنا ننگا گورا گورا ۔۔۔۔ چکنا چکنا جسم اس نرم نرم بستر پر رگڑنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نرم نرم ریشمی بستر کے نرم نرم ریشمی جسم کے ساتھ رگڑنے سے اسے بہت اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ اب پھر سے اپنے گالوں کو اس بستر سے رگڑ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آنکھیں بند کیے ہوئے ۔۔۔۔۔ جیسے وہ اس کتے کو اپنا سب کچھ تسلیم کر چکی ہو ۔۔۔۔۔۔ مان چکی ہو ۔۔۔۔۔۔ کچھ دیر میں بیل ہوئی تو سیما جیسے ہوش میں واپس آئی ۔۔۔۔۔ جلدی سے اٹھ کر شرٹ پہنی اور مسکراتی ہوئی دروازہ کھولنے کے لیے چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔ پھردونوں بیٹھ کر کھانا کھانےلگے ۔۔۔۔۔۔ ٹامی بھی حسب معمول انکے ساتھ ہی تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کھانے کے بعد دونوں لاؤنج میں ہی بیٹھے ٹی وی دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور ٹامی بھی سیما کے پیروں میں ہی بیٹھا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جمال خان اس سے دور دوسری طرف تھا ۔۔۔۔۔۔۔ سیما اپنا پیر ٹامی کے جسم پر پھیر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کبھی اسکے سر پر اپنا پاؤں پھیرتی ۔۔۔۔ اور کبھی اسکے پیٹ کو اپنے پیر سے سہلانے لگتی ۔۔۔۔۔ آہستہ آہستہ اسکا پیر خود بخود ہی ٹامی کے پیٹ کے نیچے کی طرف جانے لگا ۔۔۔۔۔ جمال خان اگر اسکی طرف دیکھتا بھی تو اسے پتہ نہ چلتا کہ وہ کیا کر رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے اپنا پاؤں ٹامی کے لنڈ والے حصے کی طرف بڑھانا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر اپنے پیروں کی انگلیوں سے اسکے لنڈ کو سہلانا شروع کر دیا ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ٹامی نے فورا' اپنا سر اوپر اٹھایا اور سیما کی طرف دیکھنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کے ہونٹوں پر کھیلنے والی مسکراہٹ کو دیکھ کر اس نے دوبارہ سے اپنا سر نیچے رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔ ٹامی کا لن جو کہ ابھی تک اسکی کھال کے اندر ہی تھا ۔۔۔۔۔۔ آہستہ آہستہ اسکی کھال سے باہر نکلنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔ کچھ ہی دیر میں اسکے سرخ سرخ لنڈ کی اگلی نوک اور اگلا آدھا حصہ اسکی کھال سے باہر تھے ۔۔۔۔۔ اور اسے دیکھتے ہی سیما کھل اٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس لنڈ کو دیکھتے ہوئے اسے یاد آنے لگا کہ کیسے اس لن نے اسکی چوت کے اندر داخل ہو کر اسے مزہ دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ کیسے ٹامی اپنے لن کو اسکی نازک سی چوت کے اندر باہر کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیسے وہ دھنا دھن دھکے مار رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کبھی ٹامی کے لنڈ کو دیکھتی اور کبھی اسکے منہ کو ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کو ٹامی پر کوئی غصہ نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکہ جو مزہ اور جو لذت ٹامی نے اسے دی تھی ۔۔۔۔۔ اسکے بعد تو وہ اسکی دیوانی ہو گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے لیے اسکی محبت اور چاہت بڑھ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اسکی محبت کا انداز بھی بدل گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ سیما کے پیر کی انگلیاں ٹامی کے چکنے چکنے سرخ رنگ کے لن کو سہلا رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے اسکے لن کو اپنے پیر کے انگوٹھے اور انگلی کے بیچ میں لیا اور اپنے پیر کو اسکے لن پر اوپر سے نیچے کو سہلانے لگی ۔۔۔۔۔۔۔ جیسے کہ وہ ٹامی کے لن کی مٹھ مار رہی ہو ۔۔۔۔۔۔ اسکے لن پر اپنی انگلیوں کا دباؤ ڈالتی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی نے اپنا سر موڑ کر اپنے لن کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔ اور پھر ۔۔۔۔ اپنا منہ سیما کے دوسرے پیر پر رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔ جو اسکے قریب تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اپنی زبان سے سیما کے پاؤں کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کو بھی اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ ٹامی نے اپنا منہ کھول کر سیما کے گورے گورے نازک پیر کو اپنے دانتوں کے اندر لیا ۔۔۔۔۔ اور اسے آہستہ آہستہ دبانےلگا ۔۔۔۔۔۔ کاٹنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔ اسکے نوکیلے دانت سیما کے پیر میں اوپر اور نیچے سے دھنس رہے تھے ۔۔۔۔۔۔ اور سیما کو ہلکاہلکا لذت آمیز درد ہونے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کے چہرے پر لذت کے سائے لہرانے لگے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک بار جب ٹامی نے تھوڑا زور سے اسکے پیر کو اپنے دانتوں سے دبایا تو سیما کے منہ سے سسکاری نکل گئی ۔۔۔۔۔۔۔ اسے سن کر جمال خان نے چونک کر سیما کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔ تو اسے سیما کا پیر ٹامی کے منہ کہ اندر نظر آیا ۔۔۔۔۔۔ وہ خوفزدہ ہو گیا ۔۔۔ جمال : سیما ۔۔۔۔۔۔ سیما ۔۔۔۔ یہ کیا کر رہا ہے ٹامی ۔۔۔۔۔۔ ہٹاؤ اسے ۔۔۔۔ سیمامسکرائی : ڈونٹ وری ڈارلنگ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کچھ نہیں کہتا ٹامی ۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ تو بس لاڈ کر رہا ہے ۔۔۔۔۔۔ جسٹ ریلیکس ڈیئر۔۔۔۔۔۔۔ جمال خان بھی دیکھنے لگا کہ ٹامی بس اسکے پیر کو اپنے دانتوں کے اندر لیتا ہے ۔۔۔۔۔ اور پھر اپنے منہ سے اسکا پیر نکال کر اسے چاٹنے لگتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ جیسے کہ وہ اسکے پیر سے کھیل رہا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔ جمال کو بھی تسلی ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔ اسکی فکر ختم ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ مسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ارے یار یہ تو تمھارے پاؤں سے کھیل رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ ۔ سیما بھی مسکرا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور جمال دوبارہ سے ٹی وی دیکھنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ادھر سیما کا پیر ٹامی کے لن سے پیچھے کو جانے لگا ۔۔۔۔۔۔ اسکی ران کو سہلاتے ہوئے ۔۔۔۔ اسے اسکی دم کے نیچے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکی گانڈ کے سوراخ کے نیچے ٹامی کے ٹٹے لٹکتے ہوئے نظر آئے ۔۔۔۔۔۔۔ کالے کالے سے ۔۔۔۔۔ گول گول سے ۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے ایک نظر جمال خان کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔ اور پھر اپنے پیر کو انگوٹھے سے اسکے ٹٹوں کو سہلانے لگی ۔۔۔۔۔۔۔ اپنے شوہر جمال کے موٹے موٹے اور بڑے بڑے ٹٹے تو وہ سہلا ہی چکی تھی کئی بار ۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر ان چھوٹے سائز کے بالز کے ساتھ کھیلنا بھی سیما کو اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ وہ اپنے پیرکے ساتھ ان سے کھیل رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ ساتھ ساتھ ہی وہ سوچنے لگی کہ ان ٹٹوں کے اندر بننے والی منی کو بھی وہ ٹیسٹ کر چکی ہوئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اسے یہ ماننے میں کوئی عار یا شرم نہیں تھی کہ اسے ٹامی ۔۔۔۔۔ اپنے کتے کے لن کی منی کی اپنے منہ میں اچھی لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اسکا ذائقہ اسے پسند آیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اتنےمیں جمال خان کے موبائل پر کوئی کال آئی ۔۔۔۔۔ وہ اسے اٹینڈ کرکے سنتا ہوا۔۔۔۔ لاؤنج سے باہر نکل گیا ۔۔۔۔۔۔ باہر لان میں ۔۔۔۔۔ جمال کے جاتے ہی ٹامی نے اپنی جگہ سے اٹھ کر چھلانگ لگائی ۔۔۔۔ اور صوفے پر چڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔ اور سیما کے چہرے کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما اسکی اس حرکت پر ہنسنے لگی ۔۔۔۔۔ اسے اس بات کی خوشی بھی ہوئی تھی اور تسلی بھی کہٹامی نے اسکے شوہر کے سامنے اسکے ساتھ کچھ بھی غلط کرنے کی کوشش نہیں کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی اسکے گالوں اور ہونٹوں کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔ بار بار اپنی زبان کہ اوپر نیچے کو لاتا ہوا اسکے چہرے کو چاٹتا ۔۔۔۔۔ اسکے ہونٹوں کو چاٹتا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے بھی اپنی زبان باہر نکالی ۔۔۔۔۔۔۔ اور اپنی زبان کو ٹامی کی زبان سے ٹکرانے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کی زبان ٹامی کی زبان سے ٹکرانے لگی ۔۔۔۔۔۔۔ ایک خوبصورت لڑکی کی زبان ایک کتے کی زبان کو چاٹ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ دونوں ہی ایک دوسرے کی زبانوں کو چاٹ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔ کتے کے منہ سے اسکا تھوک سیما کے منہ کے اندر جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ مگر سیما اسکا کچھ بھی برا سمجھے بنا اپنے اندر نگلتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور ٹامی کی زبان کو چاٹتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ جیسے وہ کوئی نیچ جانور نہیں بلکہ اسکا محبوب ہو۔۔۔۔۔۔ اور وہ اسکی محبوبہ ۔۔۔۔۔۔۔ جیسے وہ اسکا بوائے فرئینڈ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ اسکی گرل فرئنڈ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔جیسےوہ اسکاعاشق ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ اسکی معشوقہ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ جیسے وہ ایک کتا ہے تو ۔۔۔۔۔۔ تو وہ اسکی کتیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ دونوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکہ صرف سیما ۔۔۔۔۔۔ سب کچھ بھول بھال کر ٹامی کو پیار کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر سیما نے ٹامی کے جسم پر ہاتھ پھیرتے ہوئے اسے خود سے پیچھے کیا ۔۔۔۔۔۔۔ اور صوفے سے اترنے کا اشارہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی خاموشی سے صوفے پر سے اترا ۔۔۔۔ اور کمرے کے ایک کونے میں موجود اپنے چھوٹے سے بستر پر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سونے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔ رات کو جمال خان اسکے پاس آیا ۔۔۔۔ اور اس رات اس نے بھی سیما کو چودا ۔۔۔۔۔۔۔ مگر سیما محسوس کر رہی تھی کہ اسے جو مزہ آج ٹامی کے لن سے چدوانے میں آیا تھا وہ اسے آج جمال کے ساتھ نہیں آرہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ اپنے بستر پر لیٹی ۔۔۔۔۔۔ جمال خان کا لن اپنی چوت میں لینے کے باوجود بھی ۔۔۔۔۔۔ آنکھیں بند کیے ٹامی کا ۔۔۔۔ ایک کتے کا تصور ہی کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ وہ اسے چودرہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ اس کتے کے لن کے مزے لے رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی کو ہی یاد کرتے ہوئے سیما کی چوت نے پانی چھوڑا ۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر کافی دیر کے بعد دونوں سو گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما اگلے دن ایک بار پھر ٹامی کے لن کا مزہ لینے کا سوچتی ہوئی نیند کی وادیوں میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسے تسلی تھی کہ اب اسے اپنی تنہائیوں کا ساتھی مل چکا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکی تنہائیوں کو رنگین کرنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکا دل ابھی بھی یہی چاہ رہا تھا کہ وہ جا کر کتے کے ساتھ اسکے نرم نرم بستر پر لیٹ جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر پھر خود پر جبر کر کے سو ہی گئی ۔۔۔۔۔۔۔ صبح اسکی آنکھ فون کی بیل کی آواز سے کھلی ۔۔۔۔۔ دیکھا تو جولی کا فون تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ امریکہ سے ۔۔۔۔۔۔ پہلے بھی جولی اسے فون کرتی رہتی تھی ۔۔۔۔ اسکا حال احوال پوچھنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔ اور ٹامی کے بارے میں جاننے کے لیے ۔۔۔۔۔۔ مگر آج جولی سے بات کرتے ہوئے سیما کا دل زور زور سے دھڑک رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ ( بات چیت تو انکی انگریزی میں ہوئی تھی ۔۔۔ مگرانکی گفتگو یہاں پر اردو میں لکھ رہا ہوں ) جولی : ہیلو ۔۔۔ کیسی ہو سیما ۔۔۔ سیما: میں ٹھیک ٹھاک ہوں ۔۔۔۔ اور آپ ۔۔؟؟؟ جولی : ہم بھی ٹھیک ہیں ۔۔۔۔ اور وہ اپنے ٹامی کا سناؤ ۔۔۔ وہ کیسا ہے ۔۔۔۔۔ سیما: ہاں وہ بھی ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔ مگر اس نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کچھ کہتے کہتے رک گئی ۔۔۔۔۔۔ جولی کی ہنسی کی آواز سنائی دی ۔۔۔۔۔ کیا ہوا ۔۔۔۔۔۔ کیا کیا ہے ٹامی نے ۔۔۔۔۔ سیما گھبرا کر بولی ۔۔۔۔ ک ک کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ کچھ بھی تو نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ جولی کی پھر آواز آئی ۔۔۔۔ کہیں اس ٹامی نے تم کو چود تو نہیں دیا ۔۔۔۔ ہاہاہاہاہاہا سیما بری طرح سے گھبرا گئی ہوئی تھی ۔۔۔۔ نہیں نہیں ۔۔۔۔ وہ بھلا کیوں مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔ جولی ہنسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاہاہاہاہاہا ۔۔۔۔۔۔ وہ میں اس لیے کہہ رہی تھی کہ ۔۔۔۔ بڑا ہی کمینہ ہے یہ کتا ۔۔۔۔ یہ تو یہاں مجھے بھی چودتا رہا ہے ۔۔۔۔ اس لیے میں تو کہہ رہی تھی ۔۔۔۔ سیما کے منہ سے فورا' ہی نکلا ۔۔۔۔۔۔۔ کیا ۔۔۔۔۔۔ کیا آپ کو بھی ۔۔۔۔۔۔ جولی ہنسی ۔۔۔۔۔۔۔ ہاں مجھے تو روز ہی چودتا تھا یہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اب اسکا بھائی اکیلا ۔۔۔۔۔۔ ویسے ایک بات ہے کہ مزہ خوب آتا ہے اس سے چدوانے سے ۔۔۔۔۔۔۔ کیوں ہے نہ ایسی بات ۔۔۔۔ سیما: ہاں ۔۔۔۔۔۔ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ میرا مطلب ہے کہ مجھے کیا پتہ ۔۔۔۔۔۔ سیما گھبرا رہی تھی ۔۔۔۔ جولی : ارے یار مجھ سے چھپانے کا کوئی فائدہ نہیں ہے ۔۔۔۔۔ بس کرتی رہو اسکے ساتھ اور انجوائے کرو خوب ۔۔۔۔۔ سیما: لیکن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جولی: ارے لیکن ویکن کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔ بس مزے لو ۔۔۔۔۔۔۔۔ کچھ بھی نہیں ہو گا ۔۔۔۔۔ کسی کو کچھ پتہ نہیں چلے گا ۔۔۔۔۔ سیما: اوکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بائے ۔۔۔۔۔ پھر بات کریں گے ۔۔۔۔ سیما نے فون بند کر دیا ۔۔۔۔۔۔ اس کا دل زور زور سے دھڑک رہا تھا ۔۔۔۔۔ مگر جولی سے باتیں کر کے اور یہ جان کر اسے کافی سکون ملا تھا کہ وہ اکیلی نہیں ہے ۔۔۔ کسی اور نے بھی ٹامی کے ساتھ چدائی کی ہوئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ یہ جان کر اسکے چہرے پر سکون والی مسکراہٹ پھیل گئی ۔۔۔۔۔ اب ۔۔۔ سیما کا انداز ہی کچھ الگ تھا ۔۔۔۔۔ وہ کچھ الگ ہی سوچ میں تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اپنے شوہر جمال خان کے ساتھ ناشتہ کرتے ہوئے بھی وہ پاس ہی زمیں پر بیٹھے ہوئے ٹامی کو دیکھ دیکھ کر مسکرا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ ۔۔ جمال اپنے ناشتے میں مگن تھا ۔۔۔۔۔ اور ساتھ ساتھ اپنی حسین و جمیل بیوی سے باتیں بھی کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ اس بیچارے کو کیا پتہ تھا کہ اسکی ایسی خوبصورت بیوی ۔۔۔۔ ایک کتے سے چدوا رہی ہے ۔۔۔۔۔۔ کچھ ہی دیر میں جمال خان نے ناشتہ کیا اور اپنے دفتر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔ جمال کے جاتے ہی سیما نے گھر کا اندر کا دروازہ لاک کیا ۔۔۔۔ اور اپنے کمرے میں آگئی ۔۔۔۔۔ اس وقت بھی ٹامی دروازے کے قریب ہی کھڑا تھا ۔۔۔۔۔۔ اندر آنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔ مگر سیما نے مسکرا کر اسے دیکھتے ہوئے دروازہ بند کر لیا ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ اور کمرے کی بھی اندر سے کنڈی لگا لی ۔۔۔۔۔۔ تا کہ ٹامی اندر نہ آسکے۔۔۔۔۔ شائد آج وہ اپنے اس محبوب کو کچھ تڑپانا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔ اندر کمرے میں آکر ۔۔۔۔ سیما نے اپنے بدن پر پہنا ہوا نائٹ گاؤن اتار کر بیڈ پر پھینک دیا ۔۔۔۔۔ اور ننگی ۔۔۔۔۔ بلکل ننگی حالت میں آئینے کے سامنے بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔ ہلکا ہلکا گنگناتے ہوئے میک اپ کرنے لگی ۔۔۔۔۔ خود کو بنانے سنوارنے لگی ۔۔۔۔۔۔ اسکے دل کی حالت بھی عجیب سی ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ یہ سوچ سوچ کر کہ وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس جیسی خوبصورت اور جوان لڑکی ۔۔۔۔۔ ۔۔ ایک کتے کو اپنا محبوب مانتی ہوئی اسکے لیے تیا ر ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ اس سے چدنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکو سکون پہنچانے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اسکے جسم سے اپنے جسم کو سکون دینے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر یہ سب کچھ سوچتے ہوئے بھی اسے برا نہیں لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکہ ایک مسکراہٹ تھی جو اسکے ہونٹوں پر کھیل رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ میک اپ کر کے ۔۔۔۔۔ اپنے ہونٹوں پر لپ اسٹک لگا کر ۔۔۔۔ تیار ہوئی اور خود کو آئینہ میں دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔۔ اپنی تیاری ۔۔۔۔ اور اپنی خوبصورتی کو دیکھ کر وہ خود بھی شرما گئی ۔۔۔۔۔
اب مرحلہ تھا کپڑوں کا ۔۔۔۔ وہ سوچنے لگی کہ کیا پہنے ۔۔۔۔۔۔۔ سوچتے سوچتے اسے خیال آیا کہ کیوں نہ آج وہ بھی ٹامی کے جیسے ہی رہے ۔۔۔۔۔۔ خود کو ٹامی کے سامنے اسی کے جیسی ہی بن کر پیش کرے ۔۔۔۔ یہ سوچ آتے ہی اس نے کچھ بھی پہننے کا ارادہ ترک کر دیا ۔۔۔۔۔ اور اپنے ننگے وجود کو آئینے میں دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔۔ اسکے خوبصورت گورے گورے ممے تنے ہوئے تھے ۔۔۔۔ انکے آگے گلابی نپل اکڑے ہوئے قیامت ڈھا رہے تھے ۔۔۔۔۔ چوت گوری گوری ۔۔۔ گلابی چوت ۔۔۔۔ بالوں سے بلکل پاک ۔۔۔۔ ہولے ہولے رس رہی تھی ۔۔۔۔ چُدنے کے لیے پوری طرح سے تیا ر تھی ۔۔۔۔۔ ایک کتے کے لن کو اپنے اندر لینے کے لیے بلکل تیا ر ۔۔۔۔۔۔ خود کو آئینے میں دیکھتے ہوئے اسے کچھ خیال آیا ۔۔۔۔۔ اور اسکے ساتھ ہی اسے ہونٹوں پر ایک ہلکی سی مسکراہٹ پھیل گئی ۔۔۔۔۔۔۔ وہ آئینے کے سامنے سے اٹھی ۔۔۔۔۔۔ اور ایک طرف بنی ہوئی الماری کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے سب سے نچلے حصے میں سے کچھ نکال کر واپس آئینے کے سامنے آگئی ۔۔۔۔۔۔۔ اور اسے اپنی گوری گوری گردن میں پہننے لگی ۔۔۔۔۔۔ اسکے ہکس بند کیے ۔۔۔۔ اور خود کو دوبارہ آئینے میں دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی کی گردن کا پٹہ ۔۔۔۔۔ جو اسکے گلے سے اتار دیا گیا ہوا تھا ۔۔۔ اب سیما کے گلے کے گرد لپٹا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے اسے اپنی گردن کے گرد ٹائٹ کر کے باندھ لیا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اب خود کو اس پٹے کے ساتھ دیکھ کر اسکے چہرے پر شرم کے لال گلابی رنگ پھیل گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پوری کی پوری کتیا لگ رہی ہو اب تو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما خود سے بولی ۔۔۔۔ اور ہنسنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔ ہاں تو جب ایک کتے سے پیار کروں گی ۔۔۔۔ اس سے چدواؤں گی ۔۔۔۔ تو کتیا تو بننا ہی پڑے گا نا ۔۔۔۔۔۔ سیما نے اپنے سوال کا خود ہی جواب دیا ۔۔۔۔۔ اور پھر کمرے سے باہر جانے کے لیے بڑھ گئی ۔۔۔۔۔۔ دروازہ کھول کر سیما باہر نکلی ۔۔۔۔۔ ٹی وی لاؤنج میں ادھر ادھر دیکھا ۔۔۔۔۔۔ ٹامی کو ۔۔۔۔۔ ٹامی لاؤنج کے کونے میں رکھے ہوئے اپنے بستر پر بیٹھا ہوا تھا ۔۔۔۔۔ سیما نے مسکرا کر اسے دیکھا ۔۔۔۔۔ ٹامی نے بھی بڑی ہوشیاری کا مظاہرہ کرتے ہوئے اسے دیکھ لیا تھا ۔۔۔۔۔ اب اپنی جگہ پر بیٹھے ہوئے اسکی نظر سیما پر ہی تھی ۔۔۔۔۔ سیما نے ایک عجیب حرکت کی ۔۔۔۔۔ وہ نیچے جھکی ۔۔۔۔ اور کارپٹ پر اپنے گھٹنوں اور ہاتھوں کے بل ہو گئی ۔۔۔۔۔۔ اور اب اپنے گھٹنوں اور ہاتھوں کے بل ہی چلتی ہوئی ۔۔۔۔۔ ننگی ہی چلتی ہوئی ۔۔۔۔۔ ٹامی کے بستر کی طرف بڑھنے لگی ۔۔۔۔۔ ٹامی کے ۔۔۔۔ ایک کتے کے ۔۔۔ بستر کی زینت بننے کے لیے ۔۔۔۔ سیما نے فیصلہ کر لیا تھا کہ اگر ٹامی ایک جانور ہو کر اسے اسقدر مزہ دے رہا ہے تو وہ بھی اسی کے جیسی ہو کر ۔۔۔۔۔ ایک جانور کی طرح ۔۔۔۔ ایک کتیا کی طرح ۔۔۔ خود کو اسے پیش کرے گی ۔۔۔۔۔۔ اپنا جسم اسے پیش کرے گی ۔۔۔۔ اور اسے پورا پورا مزہ دے گی ۔۔۔ اسی لیے وہ گلے میں پٹہ ڈالے ۔۔۔۔ بلکل ننگی حالت میں گھٹنوں کے بل چلتی ہوئی ٹامی کے قریب جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے پاس جا کر وہ ٹامی کو پیار بھری نظروں سے دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔ وہ بھی اپنی جگہ پر ہی لیٹا ہوا اپنی مالکن کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ سیما آگے بڑھ کر اسکے گدے پر چڑھ گئی ۔۔۔۔ اور آگے جھک کر ٹامی کے چہرے کے ساتھ اپنا چہرہ رگڑنے لگی ۔۔۔۔ اس نے ٹامی کے منہ کو چومنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔ پھر اپنی زبان باہر نکالی ۔۔۔ اور اسکے کالے ہونٹوں والے حصے کو چاٹنے لگی ۔۔۔۔ ٹامی نے بھی اپنی زبان باہر نکالی ۔۔۔۔ اور سیما کے منہ کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔ سیما کو اپنائیت کا احساس ہوا ۔۔۔۔ اس نے بھی فورا' اپنی زبان سے ٹامی کی زبان کو چاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔ دونوں کی زبانیں ۔۔۔۔ سیما اور ٹامی کی زبانیں ۔۔۔۔۔ ایک انسان اور ایک جانور کی زبانیں ۔۔۔۔۔ ایک خوبصورت حسین لڑکی اور ایک کتے کی زبان ۔۔۔۔۔ ایک دوسری سے ٹکرا رہی تھیں ۔۔۔۔ ۔۔۔ ایک دوسری کو چاٹ رہی تھیں ۔۔۔۔ دونوں کا تھوک آپس میں مل رہا تھا ۔۔۔۔۔ سیما نے دونوں ہاتھوں میں اسکا منہ پکڑا ہوا تھا ۔۔۔۔ اور اپنی زبان کو اسکی زبان سے ٹکرا رہی تھی ۔۔۔۔۔ ۔۔ اسے چاٹ رہی تھی ۔۔۔۔۔ پھر سیما نے آگے بڑھ کر اپنی ایک سائیڈ کو لیٹتے ہوئی ۔۔۔۔۔ اپنا جسم ٹامی کے جسم سے لگا دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کا گور ا گورا چکنا ۔۔۔۔ننگا جسم ۔۔۔۔ ٹامی کی کھال کی نرم نرم فر سے رگڑنے لگا ۔۔۔۔ سیما کو بھی مزہ آرہا تھا ۔۔۔۔۔ اسے اچھا لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔ وہ اپنے جسم کو ٹامی کے جسم کے ساتھ گھستی ہوئی ۔۔۔۔۔ مزہ لینے لگی ۔۔۔۔۔ ساتھ ساتھ ہی اب اس نے ٹامی کے جسم کو ۔۔۔۔۔ اسکی کھال کو چومنا شروع کر دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کبھی اسکی کمر کے اوپر سے ۔۔۔۔۔۔ اور کبھی پیٹ پر سے ۔۔۔۔۔۔۔ تو کبھی اسکی گردن پر سے ۔۔۔۔۔۔ اپنے ہونٹوں کو اس جانور کے جسم سے رگڑنے میں سیما کو مزہ آرہا تھا ۔۔۔۔۔۔ اسکا ہاتھ بھی ٹامی کے جسم کو سہلا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ سیما ٹامی کو اپنی جگہ سے کھڑا کرنا چاہ رہی تھی ۔۔۔۔۔ تاکہ وہ اسے پیار کرے ۔۔۔۔۔ اسے چودے ۔۔۔۔۔۔۔ مگر ٹامی ابھی ابھی اپنی جگہ پر ہی بیٹھا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔ سیما اپنی جگہ سے اٹھی ۔۔۔ اور اسکے گدے پر ۔۔۔۔۔۔۔ اسکے آگے پیچھے پھرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔ کبھی اسکے پیچھے جاتی ۔۔۔۔۔ کبھی اسکے سامنے آجاتی ۔۔۔۔۔۔ پھر اپنی خوبصورت گانڈ کو اسکے سامنے لہرانے لگتی ۔۔۔۔۔ مگر ٹامی ابھی بھی سستی کے ساتھ اسکے سامنے لیٹا ہواتھا ۔۔۔۔ کبھی کبھی جب سیما اپنی گانڈ کو ٹامی کے منہ کے بلکل ساتھ لگاتی تو وہ ایک دہ بار اسکی گانڈ کو چاٹ لیتا اپنی زبان سے ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر سے نیچے اپنے سامنے پڑے ہوئے بسکٹ کھانے لگتا ۔۔۔۔۔۔۔ اسکے سامنے کافی سارے بسکٹ پڑے ہوئے تھے ۔۔۔۔ جو تھوڑی دیر پہلے سیما اسکے لیے ڈال کے گئی تھی ۔۔۔۔۔۔ کچھ ان میں سے ٹامی نے کھا لیے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔ کچھ آدھے کترے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔ کچھ منہ سے نکالے ہوئے تھے۔۔۔۔۔ جن پر اسکا تھوک بھی لگا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ قریب ہی ایک کھلے سے برتن میں ٹامی کے لیے دودھ پڑا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اسکے برتن میں ۔۔۔۔۔۔۔ کچھ سوچ کر سیما مسکرائی ۔۔۔۔۔۔ اور پھر نیچے کو جھک کر ۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے آگے سے بسکٹ اپنے منہ سے اٹھا کر کھانے لگی ۔۔۔۔۔۔ ٹامی نے اسے دیکھا تو ایک بسکٹ اپنے منہ میں ڈالا اور پھر اسے باہر نکال دیا ۔۔۔۔۔۔ سیما نے فورا' ہی اسے اپنے ہونٹوں سے اپنے منہ میں لیا اور ٹامی کی طرف دیکھتی ہوئی کھانے لگی ۔۔۔۔۔۔ چبانے لگی ۔۔۔۔۔۔ اسے بڑا ہی عجیب لگ رہا تھا کہ وہ ایک کتے کے منہ سے نکلی ہوئی کوئی چیز خود کھا رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آج سے چند دن پہلے تک تو وہ ایسا تصور بھی نہیں کر سکتی تھی ۔۔۔۔۔ مگر اب وہ یہ کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اپنے پورے ہوش و ہواس کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔ اپنی مرضی کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔ آخر کچھ دیر کے بعد ٹامی اپنی جگہ سے اٹھا ۔۔۔۔۔ اور گدے سے نیچے پڑے ہوئے بڑے سے برتن میں ڈالے ہوئے دودھ میں منہ مارنے لگا ۔۔۔۔۔ اپنی زبان اندر ڈال کر ۔۔۔۔۔۔ لپ لپ کرتا ہوا دودھ پینے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما بھی اپنے گھٹنوں کے بل فورا' آگے بڑھی ۔۔۔۔۔ اور خود بھی اپنا منہ نیچے کر کے اسی برتن میں ڈال دیا ۔۔۔۔ اور اپنی زبان نکال کر ۔۔۔۔۔۔ کتے کے برتن میں سے ہی دودھ چاٹنے لگی ۔۔۔۔۔۔ اسے خود پہ ہنسی بھی آرہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ کہ وہ ایک انسان ہو کر جانور کی طرح برتن میں سے دودھ پی رہی ہے ۔۔۔۔۔ اور مالکن ہوتے ہوئے بھی اپنے کتے کے برتن میں سے اسکا جھوٹا دودھ پی رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنی زبان کے ساتھ چاٹی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ کتے نے پیا ہے تو کیا ہوا ۔۔۔۔۔۔ اسکے ذائقے میں تو کچھ فرق نہیں آیا نا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور جب ہم اپنی جھوٹی چیزیں اسے دے سکتے ہیں تو ہمیں اسکا جھوٹا کھانے میں اور پینے میں کیا حرج ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر ایک دوسرے کا جھوٹا کھانے سے ہی تو آپس کا پیار بڑھتا ہے نا ۔۔۔۔۔ سیما مسکرائی ۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔اسے اپنی انہی باتوں اور حرکتوں کے ساتھ اسے اپنی چوت بھی گیلی ہوتی ہوئی محسوس ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔سیما نے اپنی ایک انگلی نیچے لے جا کر اپنی چوت کے اندر ڈالی اور اپنی چوت کے اندر باہر کیا تو اسے اپنی چوت کا گاڑھا پانی اپنی انگلی پر محسوس ہوا ۔۔۔۔۔۔ سیما نے اپنی انگلی واپس لا کر اپنے منہ میں ڈال کر اپنی ہی چوت کا پانی چاٹ لیا ۔۔۔۔۔۔۔ اب سیما دوبارہ سے گھوم کر ٹامی کے پیچھے آئی ۔۔۔۔۔۔ اسکی کمر کو چومنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔ اسکی دم کے نیچے اسکے گول گول کالے ٹٹے لٹک رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے اپنے ہاتھوں سے انکا سہلانا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی نے دودھ کو چھوڑ کر ۔۔۔۔۔۔ مڑ کر سیما کی طرف دیکھا ۔۔۔۔ اور پھر سے اپنا منہ آگے کر لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے ٹامی کی کمر کو چوما ۔۔۔۔۔۔ اور پھر اپنے ہونٹ ٹامی کے کالے کالے ٹٹوں پر رکھ کر انکو چومنے لگی ۔۔۔۔۔۔ اپنی گلابی زبان باہر نکالی اور ان کالی کالی گیندوں کو اپنی زبان سے چھیڑنے اور انکو چاٹنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنے منہ سے ان پر تھوک گرایا ۔۔۔۔ اور اپنی زبان سے اسے ان پر ملنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر انکو باری باری منہ میں لے کر چوسنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بڑا ہی اچھا لگ رہا تھا اسے ۔۔۔۔۔ انکو چاٹنا ۔۔۔۔۔۔ انکو چوسنا ۔۔۔۔۔۔۔ الگ ہی مزہ آ رہا تھا سیما کو ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔ایک خوبصورت حسین لڑکی ۔۔۔۔ ایک کتے کے پیچھے جھکی ہوئی اپنے گلابی گلابی ہونٹوں کے ساتھ ۔۔۔۔ اس کتے کے کالے کالے ٹٹوں کو اپنے منہ میں لے کر چوس رہی تھی ۔۔۔۔۔ اور اپنے منہ کے اندر ہی رکھتے ہوئے ان پر زبان بھی پھیر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ جیسے پتہ نہیں کتنی مزے کے چیز اسکے منہ کے اندر ہو ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ سیما کی نظر ٹامی کے لنڈ پر پڑی جو اب آہستہ آہستہ اسکی کھال سے باہر نکل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے اسکی گولیوں کو چوستے اور چاٹتے ہوئے ۔۔۔۔۔ اپنا ہاتھ آگے بڑھا کر اسکے لن کو پکڑ لیا ۔۔۔ اور اسے اپنی مٹھی میں لے کر سہلانے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔ مٹھی میں لے آگے پیچے کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اب ٹامی بھی مستی میں آرہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے اب آگے کو جا کر ٹامی کا لن اپنے منہ میں لیا ۔۔۔۔۔۔ اور اسے چوسنے لگی ۔۔۔۔۔۔ اپنی زبان سے چاٹنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔ منہ میں لے کر اندر باہر کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مزے لیتی ہوئی ۔۔۔۔۔ انجوائے کرتی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی بھی اب فل مستی میں آچکا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔ وہ بھی اپنا لن سیما کے منہ سے چھڑوا کر سیما کے پیچے لپکا ۔۔۔۔ اور اسکی گانڈ کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔۔ سیما نے اپنا سر نیچے کو کیا ۔۔۔۔ اور اپنی گانڈ کو اوپر کو اٹھاتے ہوئے اپنی چوت کو ٹامی کے سامنے کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی نے بھی فورا' اسکی چوت کو چاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکی زبان سیما کی چوت کے اندر تک جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ نیچے سے اوپر تک چاٹ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور سیما آنکھیں بند کیے لذت کی وادیوں میں دوڑ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ اچانک ہی ٹامی نے سیما پر حملہ کیا ۔۔۔۔۔ اور اسکے اوپر چڑھ کر گھسے مارنے لگا ۔۔۔۔۔۔ اسکا اکڑا ہوا لن سیما کی گانڈ اور اسکی رانوں سے رگڑ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ گھس رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور سیما اب ہنس رہی تھی ٹامی کی حالت پہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ تھوڑی دیر پھلے تک وہ جو آرام سے لیٹا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔ اب اپنا لن اسکی چوت میں ڈالنے کے لیے بے چین ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اور سیما بھی اپنے کتے کے بستر پر اس سے چدنے کے لیے پوری طرح سے راضی اور تیار تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اس نے اپنا ہاتھ پیچھے لے جاکر اپنی رانوں کے بیچ میں سے ٹامی کا لن اپنے ہاتھ میں پکڑا اور اسے اپنی چوت کے سوراخ پر ٹکا دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ خود بھی تو اب زیادہ دیر برداشت نہیں کر سکتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ جیسے ہی اس نے ٹامی کا لن اپنی چوت کے سوراخ پر رکھا ۔۔۔۔۔۔ تو ٹامی نے ایک ہی دھکے کے ساتھ ہی اپنا لن سیما کی چوت میں داخل کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور ایک زور دار سسکاری کے ساتھ سیما تڑپ کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خود کو آگے کو گرنے سے سنبھالا ۔۔۔۔۔۔ اور پھر اپنی گانڈ کو اوپر کو اٹھاتی ہوئی اپنی چوت کو پیچھے کو ۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے لن کی طرف دھکیلنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی کا لن بھی سیما کی چوت میں اندر باہر ہوتا ہوا اسے چود رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کتے نے اپنی مالکن کو چودنا شروع کر دیا تھا ۔۔۔۔۔۔ اسے بھی اب یقین ہو گیا تھا کہ اسکی مالکن اسکی کتیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ جسے وہ جیسے چاہے چود سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے دھکوں میں تیزی آتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اور ہر دھکے کے ساتھ ٹامی کا لن سیما کی چوت میں گہرائیوں تک جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور سیما ہر ہر دھکے کے ساتھ کراہتی ہوئی آگے کو گرنے لگتی ۔۔۔۔۔۔ جس سے ٹامی کا لن پھسل جاتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس چیز کو کنٹرول کرنے کے لیے ٹامی نے اپنے اگلے دونوں پیر سیما کے کاندھوں پر رکھے ۔۔۔۔۔۔۔ اور اپنا منہ آگے لا کر سیما کے گلے میں بندھا ہوا اسکا پٹا اپنے اگلے دانتوں میں لے لیا ۔۔۔۔۔۔ اور سیما کو اپنی پوری قوت کے ساتھ اپنی طرف کھینچنے لگا ۔۔۔۔۔۔ اور ساتھ ہی پیچھے سے زور زور کے دھکے مارتا ہوا اپنا لن جڑ تک سیما کی چوت میں داخل کرنے کی کوشش کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کا لذت کے مارے برا حال ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ مگر اسکے ساتھ ساتھ اسے اپنی چوت میں درد بھی کافی ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔ مگر پھر بھی اب وہ بے بسی کے ساتھ ٹامی کی گرفت میں جھکی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اور اس سے چدوا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ اسکی چوت نے ایک بار پانی چھوڑ دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کچھ دیر میں ٹامی کی گرفت ڈھیلی ہوئی ۔۔۔۔۔۔ اس نے سیما کے گلے میں ڈلا ہوا پٹہ اپنے منہ سے نکالا ۔۔۔۔۔۔۔ تو سیما اچانک سے اسکے نیچے سے نکل گئی ۔۔۔۔۔۔۔ اور اپنے گھٹنوں اور ہاتھوں پر ہی بھاگتی ہوئی صوفے کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی بھلا اپنی کتیا کو کیسے چھوڑ سکتا تھا ۔۔۔۔۔۔ فورا' ہی اسکے پیچھے پیچھے لپکا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہنستی ہوئی سیما صوفے پر پہنچی ۔۔۔۔ اور وہاں سیدھی ہو کر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔ اپنی ٹانگوں کو کھولا ۔۔۔۔۔۔۔ اور اپنی چوت ایک بار پھر ٹامی کے آگے کر دی ۔۔۔۔۔۔ ٹامی نے آتے ساتھ ہی سیما کی چوت کو چاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنی لمبی زبان کے ساتھ اوپر سے نیچے تک اسکی چوت کو چاٹنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔ایک بار پھر ٹامی نے اوپر کو چھلانگ لگائی ۔۔۔۔ اپنے اگلے پیروں کو سیما کی کمر کی سائیڈز پر ۔۔۔۔۔۔ صوفے کے اوپر رکھا ۔۔۔۔۔ اور سیما کے تقریبا' اوپر ہی چڑھ آیا ۔۔۔۔۔۔ اسکا لن نیچے سے سیما کی چوت کے قریب تھا ۔۔۔۔۔۔ اسکی چوت کے اردگرد ٹکرا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک بار پھر سیما نے ہاتھ بڑھا کر ٹامی کے چکنے لال لال لن کو اپنے ہاتھ میں پکڑا اور اسے اپنی چوت کے اوپر رگڑنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے موٹے لن کو اپنے ہاتھ کی گرفت میں رکھ کر اسے اپنی چوت پر رگڑنا بہت ہی مشکل کام تھا سیما کے لے ۔۔۔۔ کیونکہ ٹامی تیزی کے ساتھ دھکے مار رہا تھا ۔۔۔۔۔ اپنا لن اپنی مالکن کی چوت کے اندر داخل کرنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر سیما نے ٹامی کے لن کی نوک کو اپنی چوت کے سوراخ پر ٹکایا ۔۔۔۔۔۔۔ اور اگلے ہی لمحے ۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے ایک ہی دھکے کے ساتھ ہی اسکا لنڈ سیما کی چوت کے آخری سرے تک اتر گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کے منہ سے ایک تیز چیخ نکلی ۔۔۔۔۔۔۔ مگر اسکے بعد تو دے دھنا دھن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی نے سیما کی چوت کو چودنا شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔ اسکا لن تیزی کے ساتھ سیما کی چوت میں اندر باہر ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور سیما بھی اب اپنی آنکھیں بند کر کے اسکے لن کے تیزی کے ساتھ اپنی چوت میں اندر باہر ہونے کی تکلیف کو برداشت کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور ساتھ میں ہی مزے بھی لے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چند بار ہی ٹامی کا لمبا لن سیما کی چوت کے اندر آخری حد تک ٹکرایا تو سیما کی چوت نے پانی چھوڑ دیا ۔۔۔۔۔۔ اسکے جسم نے تیز تیز جھٹکے لے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور چوت کی دیواروں نے ٹامی کے لن کو بھینچا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور ساتھ ہی اپنا پانی نکل گیا اسکا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کا جسم نڈھال سا ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ ڈھیلی پڑ چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر ٹامی تو ابھی بھی مستی میں تھا ۔۔۔۔۔۔۔ ایک کتا ہو کر ۔۔۔۔۔ ایک خوبصورت لڑکی کی چوت ملنے کا نشہ تھا اس پر ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ بس اسے چودے جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے لمبے موٹے لال لن کی نوک سیما کی چوت کے اندر اسکی بچہ دانی سے ٹکرا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ اور بھی زور لگا رہا تھا جیسے کہ وہ اپنے لن کو سیما کی بچہ دانی کے اندر داخل کرنا چاہتا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی اپنے دونوں پیر سیما کی کمر کے گرد رکھ کے اگلے حصے سے صوفے پہ چڑھا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ پورے کا پورا سیما کے نازک جسم کے اوپر تھا ۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے ٹامی کے لن کو اسکے پچھلے حصے کی گولائی کے پیچھے سے پکڑ رکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ تاکہ آج ٹامی اپنے لن کا یہ خطرناک حصہ اسکی چوت کے اندر داخل نہ کر سکے ۔۔۔۔۔۔۔ اور آج بھی وہ کل کی طرح اسکے لن پر ہی پھنسی نہ رہ جائے ۔۔۔۔۔۔۔ مگر۔۔۔۔ ٹامی کے ارادے تو خطرناک ہی تھے ۔۔۔۔۔۔ آخر تھا تو وہ ایک جانور ہی نا ۔۔۔۔۔ اور وہ بھی ایک وحشی جانور ۔۔۔۔۔ جو کہ ہوس اور سیکس کی آگ میں ۔۔۔۔ اور بھی وحشی ہو جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور ٹامی وحشی ہی تو ہوتا جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اسکے دھکوں ۔۔۔۔۔ اسکے گھسوں کی رفتار تیز سے تیز ہوتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اسکی بھی ایک ہی خواہش تھی نا ۔۔۔۔۔۔۔ کہ اپنے سیکس کی تکمیل کر سکے ۔۔۔۔۔۔ اور وہ تکمیل تو تب ہی ہوسکتی تھی جب اسکا لن پورے کا پورا ۔۔۔۔۔۔ یعنی اسکی گولائی اسکی کتیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکی مالکن ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکی سیما کی چوت کے اندر جاکر نہ پھنس جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ اسکے بنا تو کتوں کو شائد مزہ ہی نہیں آتا تھا نا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور یہی حالت ٹامی کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اسکی پوری کوشش تھی کہ اپنا لن سیما کی چوت میں پورے کا پورا ڈال دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اپنے طاقتور دھکوں کی مدد سے آخرکار وہ اپنی اس کوشش میں کامیاب ہو ہی گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما بھی تو اسکی طاقت کا مقابلہ نہیں کر سکتی تھی نا زیادہ دیر ۔۔۔۔۔۔۔ آخر اسکا ہاتھ بھی ٹامی کے لن پر سے ہٹ گیا ۔۔۔۔۔۔۔ اور اگلے ہی لمحے ٹامی کا پورا لن ۔۔۔۔۔۔ اپنی پچھلی گولائی سمیت اسکی چوت کے اندر اتر گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اسکی ٹائٹ چوت کے رِنگ نے ٹامی کے لن کو جکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور ٹامی کے لن کا اگلا نوکیلا حصہ سیما کی بچہ دانی کا سوراخ پار کرتا ہوا بچہ دانی کے اندرگھس ہی گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک تیز چیخ کے ساتھ سیما نے اپنے بازو ٹامی کے نیچے سے اسکے جسم کے گرد لپیٹ لیے ۔۔۔۔۔۔۔ اور اسے اپنے جسم کے ساتھ دبا لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جیسے ہی ٹامی کے لن کا اگلا حصہ سیما کی چوت کے اندر داخل ہوا تو ایک بار پھر سیما کی چوت نے پانی چھوڑ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اسے خود بھی ٹامی کے لن سے ہلکا ہلکا پانی اسکی چوت کے اندر گرتا ہوا محسوس ہونے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کی آنکھیں بند تھیں ۔۔۔ اور اسکی چوت پانی چھوڑ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ اور وہ ایک بار پھر اپنی منزل کو پہنچ چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کچھ دیر کے بعد سیما کو تھوڑا ہوش آیا تو اسے احساس ہوا کہ وہ ٹامی کے نیچے ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اسکے جسم کے ساتھ لپٹی ہوئی ہے ۔۔۔۔۔۔ ٹامی کا لن اسکی چوت کے اندر ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اور اسکی تمامتر کوشش کے باوجود بھی ٹامی کے لن کی موٹی گولائی اسکی چوت کے اندر پھنس چکی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس ساری صورتحال کو سمجھنے کے بعد سیما صرف مسکرا کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ اب اسے کچھ دیر انتظارکرنا پڑے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹامی کے فارغ ہونے کا ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما کو بھی کوئی اعتراض نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اپنا مزہ لینے کے بعد آخر اسے بھی تو اپنے محبوب کو خوش کرنا تھا نا ۔۔۔۔۔۔۔ جو کہ اب اسکا سب کچھ تھا ۔۔۔۔۔۔۔ اسکی تنہائیوں کا ساتھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکا دوست ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکا ٹھوکو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سب کچھ ہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ختم شد

Posted on: 09:23:AM 13-Dec-2020


1 0 285 0


Total Comments: 0

Write Your Comment



Recent Posts


Hello Doston, Ek baar fir aap sabhi.....


0 0 19 1 0
Posted on: 06:27:AM 14-Jun-2021

Meri Arrange marriage hui hai….mere wife ka.....


0 0 15 1 0
Posted on: 05:56:AM 14-Jun-2021

Mera naam aakash hai man madhya pradesh.....


0 0 14 1 0
Posted on: 05:46:AM 14-Jun-2021

Hi friends i am Amit from Bilaspur.....


0 0 75 1 0
Posted on: 04:01:AM 09-Jun-2021

Main 21 saal kahu. main apne mummy.....


1 0 58 1 0
Posted on: 03:59:AM 09-Jun-2021

Send stories at
upload@xyzstory.com