Stories


وائف سوائیپنگ از یاسر خان 2355

نامکمل کہانی ہے

آج جو کہانی لکھنے جارہا ہوں یہ بھی ایک اصلی واقعہ ہے اس کہانی کے کرداروں کے ناموں کو بدل دیا ہے اسٹوری پڑھنے کے بعد اپنی رائے ضرور دیجئےگا اگر آپ لوگوں کو میری کہانیاں پڑھ کر اچھا لگتا ہے تو میں اسی طرح بہت سے کہانیاں پوسٹ کرتا جاؤنگا.... میری کوشش ہوگی کی اسٹوری کو اسی طرح سے لکھا جائے جس طرح سے اصل میں ہوا تھا اگر کوئی غلطی ہو تو معافی چاہوں گا.....


میرا نام فہد ہے اور میں پیشے سے ایک الیکٹریکل انجینئر ہوں پاکستان سے باہر ایک عرب ملک میں بہت سالوں سے اپنی بیوی کے ساتھ رہے رہا ہوں میری عمر 39 سال ہے اور میری بیوی کی عمر 41 سال ہے ہماری پسند کی شادی تھی میری بیوی عمر میں مجھ سے 2 سال بڑی ہے مگر چونکہ محبت ہوگئی تھی تو کبھی عمر کے بارے میں نہیں سوچا تھا ہماری شادی کو لگ بھگ بیس سال گزر گئے تھے اور یہ تمام عرصہ بڑا ہے خوشگوار گزرا تھا ہم دونوں کی زندگی بڑی اچھی چل رہی تھی بس ایک ہی غم تھا ہمیں اولاد نہیں ہوئی اس میں اللہ کی کیا مصلحت تھی وہ ہی جانتا تھا میں نے بڑی کوشش کی ہر طرح کا علاج کروایا اپنا بھی اور اپنی بیوی کا بھی ہم دونوں کی ہی تمام رپورٹس ہمیشہ صحیح آتی تھیں پر بچہ نہیں ہوتا تھا نا جانے کیا وجہ تھی کچھ سمجھ نہیں آیا بہت ٹائم علاج معالجہ کرواکر تھک گئے پر ایک ٹائم آیا ہم نے ہار مان لی اور اپنے اپنے دل کو سمجھا لیا کہ ہمارے نصیب میں اولاد نہیں ہے تو بس ہم دونوں ہی ایک دوسرے کا سب کچھ ہیں میں اپنی بیوی سے بہت محبت کرتا تھا وہ بھی مجھ سے بے انتہا پیار کرتی وہ کافی خوبصورت عورت ہے بس جسم شروع سے تھوڑا بھاری تھا زیادہ موٹی نہیں تھی دیکھنے میں بہت حسین لگتی ہے شادی سے پہلے سے ہی جسم بھاری تھا موٹی گانڈ بڑے ممے. اور مجھے پسند بھی ایسی ہی عورت آتی تھی جسکے مموں کا سائز بڑا ہو اور گانڈ تھوڑی بڑی ہو..... اور میری بیوی مجھے میری پسند کی ہی ملی تھی ہماری سیکس لائف بھی بڑی کمال کی رہی ہم دونوں نے ہمیشہ بھر پور سیکس کیا ہر پوزیشن میں کیا اور آج تک ایک دوسرے سے دل نہیں بھرا سیکس کے معاملے میں میں بہت گرم انسان ہوں اور میری بیوی مجھ سے زیادہ گرم ہے ہم دونوں نے سیکس میں ہر چیز کی ہوئی ہے اکثر پورن فلموں کو دیکھ کر جس جس چیز کا دل چاہتا وہ سب ہم کرتے تھے اور ہمیں ہمیشہ نیو چیزوں کو ٹرائی کرنا اچھا لگتا تھا سیکس میں ایک چارم ہونا ضروری ہے اور نیو نیو چیزیں کرنے سے جوش بنا رہتا ہے میں اور میری بیوی اس معاملے میں خوش نصیب تھے وہ میری خواہش کا خیال رکھتی اور میں اسکی خواہش کا.... میری بیوی کو چوت پر چسوانا پسند تھا اور یہ میں بہت کرتا تھا وہ بھی میرے لنڈ کو چوستی تھی اور کئی بار میں اسکے منہ کے اندر ہی اپنی منی چھوڑ دیا کرتا وہ میری منی کو بھی دل سے انجوائے کرتی تھی بہرحال ہم دونوں بہت خوش تھے اپنی سیکس لائف سے اور زندگی اچھی چل رہی تھی... پھر اچانک ہماری لائف میں کچھ نیا ہوا جس نے زندگی کا مزہ اور بڑھا دیا....میں جس کمپنی میں جاب کرتا تھا وہاں میری دوستی رضا سے ہوئی رضا پہلے کسی اور کمپنی میں تھا میری کمپنی کو جوائن کیے زیادہ ٹائم نہیں ہوا تھا وہ پیشے سے ایک اکاؤنٹنٹ تھا اور ہماری ملاقات زیادہ نہیں ہوا کرتی تھی ایک بار کسی پروجیکٹ کی وجہ سے ہم دونوں کافی کلوز ہوگئے تھے پھر اکثر ہم لنچ کرنے باہر ساتھ جانے لگے اور دوستی دن بدن گہری ہوتی رہی آہستہ آہستہ ایک دوسرے کو جاننے لگے رضا بھی میری طرح پاکستانی ہی تھا اور اتفاق سے میرے ہی شہر کراچی سے تھا یہ وجہ ہماری دوستی کی بنی اور ہم دونوں ایک دوسرے سے بہت کلوز ہوگئے باتوں باتوں میں ایک دن رضا نے بتایا کہ اسکی شادی کو بھی 9 سال ہوگئے ہیں پر بچہ نہیں ہوا اسکی وائف کو تھائیرائیڈ کی پرابلم تھی جسکا بہت علاج کروایا مگر وہ بھی اولاد سے محروم رہے جب ہماری دوستی زیادہ بڑھی تب ایک دوسرے کے گھر آنا جانا بھی شروع ہوا ہمارے گھر بھی زیادہ دور نہیں تھے اور کیونکہ پردیس میں زندگی گزار رہے تھے اور یہاں ہمارہ کوئی قریبی رشتے دار بھی نا تو ہمارے لئے یہ دوستی اور اچھی ثابت ہوئی میری وائف اور رضا کی وائف کی دوستی پہلی ہی ملاقات میں بہت اچھی ہوگئی تھی... جب سے رضا اور بھابی سے ہمارا ملنا جلنا ہوا تو ہمارا وقت کافی اچھا گزرنے لگا ہم. لوگ اکثر باہر کھانے پر جاتے کبھی ہم رضا کر گھر جاتے کبھی وہ ہمارےگھر آجاتے غرض یہ کہ اب ہمارے گھر ایک ہی گھر جیسے ہوگئے تھے. رضا اور اسکی بیوی عمر میں ہم دونوں سے ینگ ہی تھے انکی شادی کم عمر میں ہی ہوگئی تھی اس وقت رضا ہی عمر35  اور اسکی بیوی 32 کی تھے رضا کی بیوی کا نام ثنا تھا بڑی ہی خوبصورت لڑکی تھی جسم اسمارٹ تھااور  بڑا ہی فٹ تھا پتلی کمر پتلی گانڈ اور دودھ بھی چھوٹے تھے وہ اکثر بریزر بھی فورم والا پہنتی تھی دیکھنے میں بہت سیکسی لگتی تھی میں نے جس دن پہلی بار ثنا کو دیکھا تھا تو مجھے بڑی ہی پسند آئی تھی اسکا اخلاق بھی بہت اچھا تھا پتہ نہیں کیوں مجھے اس کا نشہ سے ہونے لگا تھا میں اکثر اس کے جسم کے بارے میں سوچ کر دل ہی دل میں خوش ہوجایا کرتا تھا ایسا اکثر ہوتا ہے ہر آدمی کو دوسرے کی بیوی زیادہ پیاری لگتی ہے وہ ہی میرے ساتھ بھی ہورہا تھا پر میرے لیے ایسا سوچنے تک تو ٹھیک تھا لیکن کبھی اسکے ساتھ سیکس کر پاؤں گا یہ تو ناممکن ہی تھا.... ہماری دوستی کو 6 ماہ سے زیادہ ہوگئے تھے اور ہم لوگ اکثر اولاد کے ٹوپک پر بات کرتے تھے پہلے تو میری بیوی اور ثنا کے بیچ اکثر یہ باتیں ہوا کرتی تھی لیکن پھر اکثر ہم ساتھ بیٹھے ہوتے تب بھی یہ باتیں ہونی لگیں ہم دونوں اکثر انکو کوئی نا کوئی ڈاکٹر کے بارے میں بتاتے یا کسی دوائی کا زکر کرتے انکی کوشش کافی عرصے سے جاری تھی پر وہ دونوں بھی اب کافی مایوس ہوچکے تھے اور انکی سیکس لائف بھی اب کافی دھیمی پڑھ چکی تھی ثنا اکثر میری بیوی کو اپنی سیکس لائف کے بارے میں بتایا کرتی تھی عورتوں میں اس طرح کی باتیں بہت ہوا کرتی ہیں اور میری بیوی کو بھی بڑا شوق تھا دوسروں کے سیکس کے بارے میں جاننے کا.. وہ اکثر مجھے بھی ثنا کی باتیں بتانے لگی تھی جو کچھ رضا اور ثنا کے بیچ ہوتا وہ میری بیوی کو بتاتی اور  کافی کچھ پوچھا بھی کرتی... میری بیوی نے ثنا کو ہماری سیکس لائف کے بارے میں بھی کافی کچھ بتانا شروع کردیا تھا اور بقول  سمیرا(میری بیوی)کے وہ جب بھی ثنا کو ہمارے بارے میں بتاتی تو وہ سن کر بہت گرم. ہوجاتی تھی. اور اکثر حیران بھی ہوا کرتی تھی ثنا بھی سیکس کے معاملے میں بہت گرم عورت تھی جب سمیرا نے اسکو بتایا کہ میں کیسے کیسے اسکو چودتا ہوں کیسے اسکی چوت کو چاٹا کرتا ہوں تو وہ یہ سب سن کر بڑا حیران ہوتی اور اسنے سمیرا کو بتایا کہ رضا نے تو کبھی اسکی چوت کو نہیں چاٹا ہے انکی سیکس لائف کافی سیدھی سادھی تھی وہ دونوں بس ایک دوسرےکے ساتھ کچھ دیر oral سیکس کرتے اور پھر رضا اپنا لنڈ ثنا کی چوت میں ڈال کر کچھ دیر دھکے مارتا اور پھر اپنا پانی اسکی چوت میں چھوڑ کر ٹھنڈا ہوکر سوجایا کرتا تھا ثنا اکثر پوری طرح سے ٹھنڈی نہیں ہو پاتی تھی... اسکے اندر سیکس کی چاہت ہر وقت رہتی تھی....کیونکہ ثنا کی عمر زیادہ نہیں تھی اس لئے وہ چاہتی تھی کہ رضا روز ہی اسکے ساتھ سیکس کرے مگر رضا کی دلچسپی روز بروز کم. ہوتی جارہی تھی وہ جب بھی ثنا کہ ساتھ سیکس کرتا تو دل سے نہیں کرتا تھا اور یہ بات اب ثنا کو محسوس ہونے لگی تھی اسنے کئی بار رضا کو کہا بھی تو اس نے ہمیشہ کوئی نا کوئی بہانہ بنایا اصل میں وہ ثنا سے اکتا سا گیا تھا رضا کو اولاد کی خواہش بہت زیادہ تھی اور اسنے اب اپنی بہنوں کی باتوں میں آکر دوسری شادی کا بھی سوچنا شروع کردیا تھا پر ابھی تک ثنا کو اسکے بارے میں کچھ بھی نہیں بتایا تھا.... اسنے مجھے ایک دو بار کہا کہ اسکی بہنیں اسکو کہتی ہیں کہ دوسری شادی کرلے یہ عورت تو اولاد نہیں دے سکتی ہے مگر وہ ثنا کو چھوڑنا بھی نہیں چاہتا تھا اور یہ بات ثنا کر بتاتے ہوئے بھی ڈرتا تھا.... میں نے اسکو بہت سمجھایا بھی کہ اگر دوسری بیوی سے بھی اولاد نہ ہوئی تب کیا کریگا میری باتوں کو سن کر وہ خاموش ہوجایا کرتا تھا اس میں سچ میں دوسری شادی کرنے کی ہمت نہیں تھی.... خیر ایسے ہی وقت گزر رہا تھا اکثر اب جب بھی ہم لوگ ساتھ میں ہوتے تو میں ثنا کو نوٹ کرنے لگا تھا وہ مجھ میں کافی انٹرسٹ لینے لگی تھی میری طرف جب بھی دیکھتی تو مسکرا دیا کرتی میرے خراب سے خراب جوکس پر بھی ہنس دیا کرتی جب بھی اسکے گھر جاؤ تو بڑا خیال رکھتی کھانے پینے کا اور کھانے کی پسند کا اور یہ سب کچھ میں محسوس کرنے لگا تھا اور اسکی وجہ یہ تھی کہ سمیرا میری بہت تعریفیں کیا کرتی تھی میں بحیثیت ایک شوہر کے بہترین انسان تھا تو جب بھی وہ دونوں فون پر بھی باتیں کیا کرتیں تو اپنے اپنے شوہروں کا زکر ہوتا ہی تھا اور ثنا کے پسند کے لحاظ سے میں اسکے لیے ایک آئیڈیل شوہر تھا وہ چاہتی تھی کہ رضا بھی اسکا ویسے ہی خیال رکھے اور وہ تمام چیزیں کرے جو میں سمیرا کے ساتھ کرتا تھا اور مگر رضا تھوڑا الگ بندہ تھا وہ اکثر ہماری باتیں بھی رضا کو بتانے لگی تھی مگر وہ اتنا زیادہ انٹرسٹ نہیں لیتا تھا.... پر میں نے ایک بات محسوس کی تھی کہ وہ سمیرا کو اکثر ٹیڑھی نظروں سے دیکھا کرتا تھا اور خاص کر اسکی نظریں سمیرا کے مموں پر ہوا کرتی تھیں کیونکہ ثنا اور سمیرا دونوں ایک دوسرے سے مختلف تھیں. اور یہ مرد کی فطرت ہوتی ہے کہ وہ ہمیشہ اس چیز پر زیارہ توجہ دیتا ہے جو اسکی بیوی سے مختلف ہو. پر میں اس بات کو زیادہ سیریس نہیں لیتا تھا مردوں کی فطرت ہوتی ہے میں خود بھی تو اکثر ٹیڑھی نظروں سے ثنا کو دیکھا کرتا تھا.....خیر ایک بار میں چھٹی کا دن تھا سمیرا کچن میں کھانا بنا رہی تھی تو میں اپنے فون میں پورن سائٹ اوپن کرکے پورن مویز دیکھ رہا تھا کہ اچانک میرے سامنے ایک ایسی فلم آئی جو تقریباً ایک گھنٹہ سے بھی زیارہ لمبی تھی اس کا ٹائٹل ہی مجھے بہت سیکسی لگا وہ فلم اتنی زیادہ سیکسی تھی کہ میرا دماغ ہی خراب ہوگیا میرا لنڈ بری طرح پاگل ہورہا تھا میں نے سمیرا کو اپنے پاس بلایا اور اسکو پاگلوں کی طرح کسسنگ کرنے لگا وہ بھی حیران تھی کہ اچانک کیا ہوا خیر وہ بھی فوراً تیار ہوگئی اور ہم نے جم کر سیکس کیا اور میں نے بہت دیر تک سمیرا کو چودا وہ بہت خوش تھی جب ہم سیکس سے فارغ ہوئے تو سمیرا مجھے چھیڑنے کے لیے بولی کیا ہوگیا آج آپکو کچھ زیارہ ہی موڈ بنا ہوا تھا تب میں نے اسکو ایسے ہی کہا کہ یار ایک سکسی فلم دیکھ رہا تھا تو رہا نہیں گیا وہ بولی کونسی فلم تو میں بے اسکو بتادیا. وہ کہنے لگی مجھے بھی دیکھنی ہے لنک دیدو میں رات میں دیکھونگی تو میں نے وہ فلم پوری ڈاؤنلوڈ کرکے سمیرا کے فون میں ٹرانسفر کردی خیر دن گزرگیا رات ہوئی مجھے آفس جانا تھا میں اپنے ٹائم پر سوگیا سمیرا نے رات وہ فلم دیکھی اور دوسرے دن مجھے بتایا کہ فلم تو بہت سیکسی تھی پر ایسا صرف فلموں میں دیکھا تے ہیں اصلی میں ایسا کچھ نہیں ہوتا ہے میں نے مزاق میں کہا بھئی دنیا میں آجکل سب کچھ ہی ہوتا ہے میری بات سے وہ تھوڑا چونکی اور پھر خاموش ہوگئی...... پھر کافی دن گزرے تو اچانک ایک دن سمیرا نے مجھے بتایا کہ اسنے وہ والی فلم ثنا کو فارورڈ کردی ہے میں اس بات سے چونک گیا اور پوچھا تم لوگ ایسی حرکتیں بھی کرتی ہو تو وہ کہنے لگی کہ میں نے اسکو اس فلم کے بارے میں تھوڑا سا بتایا تھا وہ کہنے لگی اسکو بھی دیکھنی ہے میرے پیچھے ہی پڑھ گئی تو مجبوراً مجھے فارورڈ کرنی ہی پڑی میں نے تھوڑا جھوٹ موٹ کا غصہ دیکھا کر کہا کہ یار وہ کیا سوچےگی ہم دونوں کے بارے میں کہ ہم ایسے فلمیں دیکھتے ہیں تو سمیرا ہنس کر بولی فہد آپ ثنا کو نہیں جانتے بڑی کتی چیز ہے وہ اسکو بہت شوق ہے سیکسی فلموں کا اسکو یہ سب سائٹس کھولنی نہیں آتی ہیں ورنہ تو ہر وقت یہی سب دیکھے میں یہ سن کر اندر ہی اندر خوش ہوا کہ بڑی سیکسی عورت ہے بھئی.... اور یہ سب سن کر میرے اندر ایک شیطانی پلان آیا جو بعد میں کام کرگیا اور ہم سب نے ایک نیو چیز کا تجربہ کیا اور بڑا ہی مزہ کیا. میں نے ایک دن پورن سایٹ سے ایک ایسی فلم ڈاؤنلوڈ کی جس کے اندر wife swaping ہوتی ہے دو کپلز آپس میں رضامندی سے ایک دوسرے کی بیوی کو بدلتے ہیں اور انہیں ایک کیمرا دیا جاتا ہے جسکی پوری ویڈیو انکو بنانی ہوتی.... اصل میں تو وائف سواپ کا مقصد پارٹنر بدل کر مزہ کرنا ہی ہوتا ہے مگر اس فلم میں ایسا دکھایا جاتا ہے کہ لوگ اپنی لائف میں اپنا پارٹنرز کو بدل کر فرق دیکھنا چاہتے ہیں جس میں ہر چیز شامل ہوتی ہے جیسے کہ بیوی بدلنے سے آپکو روز مرہ کی چیزوں کا فرق پتہ چلےگا کچھ لوگ اپنی بیوی کہ ہاتھ کا کھانا کھا کھا کر بور ہوجاتے ہیں تو نیا تجربہ لینے کہ لئے بھی سواپنگ کرتے ہیں مگر اصل میں تو چدائی ہی کرنی ہوتی ہے.... خیر میں نے ایک دن جان بوج کر سمیرا کے سامنے ٹی وی پر یہ فلم. لگائی اور اسکا ری ایکشن کیا ہوگا وہ دیکھنا چاہتا تھا.... جب فلم شروع ہوئی تو سمیرا بڑی حیرانگی سے فلم دیکھتی رہی اور حد سے زیادہ گرم ہوگئی میرا لنڈ بھی پوری طرح سے تیار تھا ہم نے ایک زبردست چدائی کی میں نے محسوس کیا کہ اس بار سمیرا کی چوت نارمل سے زیادہ چکنی ہورہی تھی اور ایسا تب ہی ہوتا تھا جب وہ فل سیکس کے موڈ میں ہوتی تھی ہم دونوں بہت دیر تک چدائی کرتے رہے سمیرا کی چوت ٹھنڈی ہونے کا نام نہیں لے رہی تھی اور میں چودتے چودتے تھک گیا اور فارغ ہوگیا سمیرا ابھی بھی گرم تھی میں نے پوچھا آج کیا ہوگیا تو بولی فلم نے بہت سیکس چڑھا دیا ہے بہت خطرناک اسٹوری ہے اس فلم کی پر یہ سب تو صرف فلموں میں دکھانے کے لیے کرتے ہیں اصلی میں تو ایسا نہیں ہوتا ہے میں نے ہنس کر کہا میری جان آجکل دنیا میں سب کچھ ہوتا ہے وہ حیرت سے مجھے دیکھنے لگی.....دو چار دن گزرے کے بعد سمیرا نے مجھے پوچھا کہ وہ فلم آپکے فون میں ہے تو مجھے ٹرانسفر کردیں میں نے پوچھا کیوں تو بولی بس چاہیے نا میں نے کہا پہلے بتاؤ کیوں چاہیے تو اسنے ہنس کر کہا ارے میں نے ثنا کو بتایا تھا وہ مانگ رہی تھی ارے تم نے پوری اسٹوری بتا دی فلم کی اسکو.... ہاں تو کیا ہوا وہ کہہ رہی ہے دیکھنی ہے تو کیا کہوں میرے دل میں ایک عجیب سی خوشی ہوئی اور میں نے فوراً سمیرا کے فون میں وہ فلم ٹرانسفر کردی تاکہ. وہ جتنی جلدی ہوسکے ثنا. کو بھیج دے اور ثنا بھی دیکھلے... اور ایسا ہی ہوا یہ سب میرے پلان کا حصہ تھا اصل میں یہ دونوں عورتیں پہلے ہی آپس میں یہ سب سوچ چکی تھیں عورت کا دماغ بہت شاطر ہوتا ہے وہ بہت کچھ بنا بولے ہی سمجھ لیا کرتی ہیں اور وہ دونوں ہی یہ چاہتی تھیں کہ اب دوسرے مرد کا مزہ لیا جائے اور ان دونوں نے ہمارے اندر بھی یہ چیز محسوس کرلی تھی ہر عورت اپنے شوہر کو سمجھتی ہے رضا بھی یہ ہی چاہتا تھا اسکو سمیرا کےجسم میں دلچسپی تھی اور مجھے ثنا کے جسم میں یعنی کے صاف اور سیدھی بات تھی کہ ہم سب ہی اپنا پنا پارٹنر بدل کر مزہ لینا چاہتے تھے مگر ایک دوسرے سے کہنا دنیا کا سب سے مشکل کام تھا مجھے کوئی اعتراض نہیں تھا کہ سمیرا رضا سے چدائی کروائے اور نا رضا کو اعتراض تھا کہ ثنا اور میں چدائی کریں......لیکن کون بات شروع کریگا کیسے کریگا یہ سمجھ میں نہیں آتا تھا.... اور ڈر اس بات کا بھی تھا کہ اگر یہ سب کر بھی لیا تو بعد میں کیا ہوگا اور اپنی اپنی بیویوں سے بات کیسے ہوگی راضی کیسے کرا جایگا..... میرے لیے یہ ایک ایسی فینٹسی بن گئی تھی کہ جب بھی میں اس بارے میں سوچتا تو میرا دماغ خراب ہوجاتا تھا میں نے اب اکثر سمیرا کو مزاق میں چھیڑنا شروع کردیا تھا میں کبھی کبھی اشارے میں اسکو کہہ دیا کرتا تھا کہ کتنے خوش نصیب لوگ ہوتے ہیں جو ایسا کر سکتے ہیں وہ میری باتوں پر اکثر چڑنے کی ایکٹنگ کرتی تھی پر میری بیوی تھی بیس سال سے میں اسکو جانتا تھا وہ بھی اندر اندر چاہتی تھی کہ وہ بھی اس طرح کا نیا تجربہ کرے.


جاری ہے

لکھاری نے کہانی یہاں تک لکھی ہے اگر کوئی اسے مکمل کرنا چاہے تو لکھ کر سینڈ کر دے

Posted on: 06:45:AM 27-Dec-2020


0 0 178 0


Total Comments: 0

Write Your Comment



Recent Posts


Hello Doston, Ek baar fir aap sabhi.....


0 0 19 1 0
Posted on: 06:27:AM 14-Jun-2021

Meri Arrange marriage hui hai….mere wife ka.....


0 0 15 1 0
Posted on: 05:56:AM 14-Jun-2021

Mera naam aakash hai man madhya pradesh.....


0 0 14 1 0
Posted on: 05:46:AM 14-Jun-2021

Hi friends i am Amit from Bilaspur.....


0 0 76 1 0
Posted on: 04:01:AM 09-Jun-2021

Main 21 saal kahu. main apne mummy.....


1 0 59 1 0
Posted on: 03:59:AM 09-Jun-2021

Send stories at
upload@xyzstory.com