Stories


خشم آلود از شاہ جی

نامکمل کہانی ہے

ہیلو دوستو !  میں ہوں  شاہ جی اور حسبِ معمول  ایک نئی کہانی  کے  ساتھ   حاضر  ہوا   ہوں   اس  کے  بارے  میں عرض   ہے  کہ   کافی عرصہ  قبل  یہ  کہانی    کسی اور  نام  سے رومن اردو  میں اپ لوڈ کر چکا  ہوں۔ لیکن  اردو فانٹ  میں    لکھتے   وقت  میں   نے  اس   کا    نام   تبدیل  کر   کے "خشم   آلود " رکھ دیا ہے خشم   آلود کا مطلب   ہوتا ہےپُر عتاب، پُر غضب، پُر غیظ ، غصے میں  اور   غیظ آلود  وغیرہ ۔  تو  پیارے  دوستو! جس وقت   یہ سٹوری  اپ لوڈ کی گئی تھی  اس وقت یہ  بہت  چھوٹی  سی تھی   لیکن آپ  کے منورنجن    کے لیئے    اس  میں کچھ  نئے کردار   ڈال   کر اسے       لمبا     کر دیا   گیا   ہے  ایسا  اس    لیئے  کیا  گیا   ہے  تا کہ  آپ  لوگ    اس  کہانی  سے مزید     لطف  لے سکیں ۔  میری  یہ  کوشش کیسی  رہی؟  کامیاب   یا    ناکام ؟    مہربانی  فرما  کر کے  مجھے  آگاہ    ضرور  فرمایئے گا  تا کہ   میں  اپنی  اصلا ح   کر سکوں۔۔۔آپ  کی  عین نوازش ہو گی۔میرے خیال  میں   کہانی کے  بارے  میں اتنی  تمہید  و  جانکاری   کافی  ہے   اب   آیئے سٹوری کی   طرف چلتے  ہیں۔

دوستو! میں آپ کے ساتھ  سیکس  سے جڑا  ایک  نیا  تجربہ  شئیر کرنے  جا رہا  ہوں  امید  ہے  آپ   کو پسند   آئے گا۔۔یہ بھی  یاد  رکھیئے  گا  کہ میری  دوسری کہانیوں  کی طرح  یہ بھی محض  ایک  کہانی  ہے  جو  صرف  آپ کو  خوش  کرنے کے  لیئے  لکھی   گئی ہے۔۔۔۔۔۔ یہ  ان  دنوں کی  بات  ہے   جب  میں  ایک   بہت بڑی   آرگنائزیشن  میں فریش   بھرتی  ہوا تھا  اور جیسا کہ آپ  جانتے   ہیں کہ    کسی    محکمے   یا  کمپنی   میں   جب کوئی نیا  بندہ   بھرتی ہوتا  ہے  تو  اس  کے  کولیگز   کو اس بات کا   بڑا  تجسس  ہوتا  ہے   کہ    یہ   بندہ  کیسے بھرتی  ہو گیا؟  چنانچہ    موقع   ملنے پر  باری  باری    سب   لوگ  اس  سے   پوچھتے   ہیں   کہ آپ  کہاں سے آئے ہو؟ کہاں رہتے   ہو؟   کس   نے  بھرتی  کروایا  وغیرہ  وغیرہ؟      کچھ  کولیگز   تو   یہ   بھی   اندازہ   لگانے    کی   پوری کوشش    کرتے     ہیں  کہ آیا    بندہ   سفارشی ہے ؟  یا  میرٹ  پر   بھرتی   ہوا  ہے ؟  اگر  یہ معلوم   ہو   جائے  کہ   بندہ  سفارش  سے  بھرتی  ہوا ہے    تو   پھر  ان  کا    اگلا   قدم     یہ  ہوتا   ہے کہ اس کی سفارش کس لیول کی  ہے؟    ایسا کرنے  کی  جو  وجہ  میری ناقص  عقل  میں آئی   ہے  وہ  یہ  ہے کہ    سفارشی  کا  نام جان   کر وہ  اس  کے  مطابق  بندے  کو  ڈیل  کرتے  ہیں اگر تو  سفارشی  کوئی موٹی آسامی ہو تو  بندے کو ٹھیک  ٹھاک   پروٹوکول دیا جاتا  ہے  ورنہ    اس  کے  ساتھ     وہ  لوگ  وہی  سلوک  کرتے   ہیں۔۔۔۔ جو  ایک  بادشاہ  دوسرے   بادشاہ  کے ساتھ کرتا  ہے یا کسی   غریب آدمی کے ساتھ    تھانے  والے کیا   کرتے ہیں۔۔ ۔

         میرے خیال  میں اس  قسم       کی   انکوائریز   سے ہر  نئے  بھرتی   ہونے  والے  کو گزرنا    پڑتا  ہے۔ یہاں ایک اور بات بتا دوں کہ  میں  جس  آرگنایزیشن  میں  بھرتی  ہوا تھا  وہ امپورٹ  ایکسپورٹ  کے ساتھ ساتھ  اور  بہت سے دیگر  کام بھی کرتی تھی   ۔۔اس  نے   ایک دو ملٹی   نیشنل    کمپنیوں   کی فرنچائز     بھی حاصل  کر رکھی تھی ۔ اس کا ہیڈکوارٹر   اسلام آباد کی سپرمارکیٹ کے قریب  ایک  بہت بڑی کوٹھی میں  واقع تھا  اس کوٹھی کے   دو پورشن  اور  کافی زیادہ کمرے   تھے   مجھے ملا  کر  وہاں   15/20 افراد   ملازمت کرتے  تھے جن   میں   زیادہ  تعداد    عورتوں  کی   تھی۔۔۔  اس آرگنائزیشن   کے       دوسرے   شہروں   میں   بھی سب آفسز  تھے  ۔۔۔     بھرتی  ہونے  کے  بعد  ایک  دو    دن  تو    میں ایڈمن    آفس   میں   ہی  ویلا    بیٹھا  رہا پھر  میری     باضابطہ  طور پر    جنرل  برانچ میں   پوسٹنگ  کر دی گئی۔  پوسٹنگ   آرڈر   ہوتے ہی ایڈمن آفس کا  نائب قاصد  مجھے   متعلقہ    برانچ  میں چھوڑ آیا۔ یہ   برانچ  گراؤنڈ فلور   میں  واقع  تھی۔  یہاں پہنچ کر نائب  قاصد  نے مجھے   ایک  ایسے شخص  کے حوالے کیا  جو  کہ شکل  سے  ہی  مردم  بیزار    لگ رہا تھا   ۔۔اس     کرخت   چہرے  والے  آدمی سے  میرا  تعارف  کروا نے   کے  بعد  وہ     واپس    چلا گیا۔   وہ شخص  جس  کے   بارے   میں  مجھے  بعد  میں  معلوم   ہوا   کہ  وہ    اس  برانچ    میں نمبر 2 کی  حیثیت  رکھتا  تھا  نے  مجھ سے مختصر  سی گفتگو کی۔۔ اور اس مختصر  گفتگو  میں بھی  اس  نے  زرا    سا    بھی  خوش اخلاق  ہونے کی کوشش نہیں  کی ۔۔۔۔ پھر   اس  کے بعد اس نے    وہاں  پر  موجود  6   بندوں سے میرا تعارف کروایا   ان  چھ میں  سے  دو خواتین  بھی شامل    تھیں     یہاں   پر    میں  انہی  لوگوں   سے   آپ کا تعارف    کرواؤں   گا  کہ  جن   کا اس کہانی سے  کوئی  تعلق  بنتا   ہے جبکہ  طوالت   کے   ڈر  سے     باقی  لوگوں     کا ذکر گول   کرتا ہوں ۔۔ ہاں  تو  میں   کہہ  رہا  تھا   کہ   اس برانچ  میں کل   چھ مرد   اور    دو خواتین   کام  کرتی  تھیں.    ان   چھ  میں   سے   کرخت   چہرے    والا   جو  کہ  بعد   میں معلوم ہوا کہ سچ مچ  کا  درشت،  بد دماغ اور خشم  آلود  واقع  ہوا تھا   بات  بات  پر  لڑنا   اس  کا  شیوہ تھا   اس   کے اسی رویے   کی وجہ سے  لوگ اسے فوجی  کہتے  تھے  جبکہ اس کا اصل نام   شفاعت چودھری     تھا۔      برانچ   کی  دو    خواتین  کو  چھوڑ  کر   باقی   لوگ صبع    حاضری   لگوا  نے ۔۔۔۔۔  اپنی   گزشتہ   دن   کی   کاروائی     کی  رپورٹ   دینے  ۔۔۔۔۔ اور   اس دن    کا  ٹاسک   لے  کر     اپنی اپنی  ڈیوٹیز   پر ( فیلڈ     میں)  نکل جاتے  تھے۔۔۔۔پھر      چھٹی    کے   وقت     ہی  واپس    آتے تھے جبکہ  بعض    تو    اس کا   بھی تکلف   نہ کرتے تھے۔۔   مجھے بھی فیلڈ   ڈیوٹی     کی آفر   کی گئی  تھی  لیکن   میں  نے  اس کی بجائے   ڈیسک   جاب    کو ترجیع   دی۔ اس برانچ    میں  ڈیسک جاب    کرنے والوں  میں  میرے اور فوجی   کے علاوہ  دو  خواتین  بھی    شامل تھیں  ( اور سچی  پوچھیں تو  میں  نے   ڈیسک جاب  کرنے  کا  فیصلہ  انہی دو  خواتین کو دیکھ  کر کیا تھا) ان  دو    میں  سے  ایک  خاتون کرسچئین    تھی  جس  کا  نام  نینسی  مارگریٹ تھا لیکن آفس والے  اسے  ماریہ میم کے  نام  سے  پکارتے   تھے  ماریہ  میم  ایک    تیس  پینتیس   سال  کی   خوش شکل  ، خوش اطوار  اور کافی   کھلے ذہن   کی   مالک  تھی  اس   کا جسم   کافی    بھرا بھرا    اور رنگ  گندمی   تھا۔۔۔ اس  کا  سامان ( چھاتیاں) اور    خاص کر اس  کی بڑی  سی   گانڈ  دیکھنے  سے تعلق  رکھتی تھی ۔۔۔۔  مجموعی  طور  پر  وہ  پُرکشش  اور  فیشن ایبل   خاتون تھی  جبکہ  اس برانچ   کی   دوسری  خاتون    کے   بارے  میں کیا بتاؤں     کیونکہ      وہ ہمیشہ    برقعہ   میں    ہوتی   تھی اور آفس   میں بھی     سارا  وقت    برقعہ    ہی  پہنے   رہتی تھی  اور اس پر  ستم  بالائے ستم یہ  کہ  وہ  اپنے  چہرے    کو   ہمہ    وقت    نقاب   سے  ڈھکے رکھتی تھی۔ اور  اس   نقاب  سے صرف   اس   کی  ہرنی   جیسی   بڑی  بڑی اور  سیاہ  آنکھیں  ہی   دکھائی  دیتی  تھیں۔۔ جو کہ بہت  سحر انگیز تھی۔۔۔۔اپنی  چال ڈھال   اور     برقعہ   میں  ملبوس   ہونے  کے  باوجود  بھی   وہ   ایک     جوان    لڑکی لگتی   تھی۔۔ قدرتی طور  پر   میرا  اس  کی  طرف دھیان    گیا تھا   لیکن    جب  مجھے  پتہ  چلا   کہ  وہ  فوجی   کی   بیٹی  ہے۔ تو  اسی وقت  میرے  خیالات کو بریک لگ  گئی۔۔۔ اور  میں   نے فوجی   کی  وجہ سے۔۔۔۔اس کی طرف دیکھنا   تو  درکنار  اس  کے  بارے میں سوچنا  بھی چھوڑ  دیا۔۔۔۔۔ بہت بعد  میں پتہ چلا  کہ اس  کا نام   عابدہ   تھا   باپ کے برعکس وہ  کافی   نفیس اور شائستہ اطوار تھی۔ اور (شاید باپ کے ڈر سے)  اپنی سیٹ پر بیٹھی ۔۔۔ہر وقت   کوئی نہ کوئی کام کرتی رہتی تھی   بظاہر وہ  اپنے  کام  سے  کام  رکھنے  والی  لڑکی  لگتی تھی برانچ مینجر کے چھٹی  پر ہونے کی  وجہ  سے  ساری  ہدایت  اس  کا  نمبر 2 مطلب فوجی  ہی  دیتا  تھا سو اس نے مجھے  جو کام دیا وہ خاصہ ٹیکنکل اور   مشکل تھا  جس کی  مجھے  لن بھی سمجھ    نہ تھی۔۔۔۔۔چنانچہ   شروع کے کچھ دن تو میرے ان فائلوں کو سمجھنے میں ہی کھپ گئے۔۔ پھر کچھ دن بعد مجھے  اس  کام کی کچھ کچھ سمجھ آنا شروع ہو گئی۔ اور  آہستہ  آہستہ  میں  نے فائلز کو    چلانا شروع    کر دیا۔   یہاں  پر  کام  کرنے کا طریقہ   کچھ یوں  تھا  کہ    میں  فائل میں  نوٹنگ /ڈرافٹنگ    وغیرہ     کر   کے    برانچ مینجر   کو فار اپرول  (منظوری)    بھیج دیتا  تھا۔۔۔ چونکہ    برانچ مینجر کسی   وجہ   سے   دو ہفتے   کی چھٹی  پر  تھا  اس  لیئے   میں  یہ  فائل   سیکنڈ ان کمانڈ     مطلب   فوجی کے پاس   لے جاتا ۔۔۔   جس کی   چھان پھٹک  کر نے سے پہلے۔۔وہ  ۔۔۔  میری طرف خشم آلود نظروں سے  ضرور  دیکھتا۔۔۔۔۔۔۔اور   پھر۔۔ فائل  میں  چھوٹی موٹی غلطیاں    درست  کرنے کے بعد   مجھے   کھا جانے والی  نظروں سے   دیکھ  کر   منہ  ہی میں  کچھ نہ کچھ بدبداتا تھا۔ ۔۔۔۔۔   ۔  ہر چند کہ    اس  کے پاس   فائل  بھیجتے    وقت    میں    اسے   دس دفعہ چیک کر لیا کرتا  تھا  لیکن پھر بھی  ہر دفعہ   اس میں کوئی نہ کوئی غلطی رہ ہی جاتی تھی  ۔۔۔ایسے ہی کچھ دن گزر گئے۔
ایک دن  کیا ہوا کہ ہیڈ  آفس  نے ارجنٹ    بیس    پر   کچھ  اہم   انفارمیشن  طلب کر لیں اس کے ساتھ ساتھ    ایم ڈی صاحب     کی طرف  سے اس   بات کی   خاص طور پر تاکید کی  گئی  کہ   انہیں  یہ  انفارمیشن  ۔۔۔۔۔ شام تک ہر حال  میں   مل     جانی چایئےبدقسمتی سے  ہیڈ آفس نے جو انفارمیش طلب کی تھی  اس کا تعلق ڈائیریکٹ  میری برانچ سے تھا  اس پر مزید    ستم    یہ  ہوا  کہ  انہوں نے جو انفارمیشن     مانگی  تھی    مجھے اس کے  بارے میں کچھ خاص  جانکاری    نہ  تھی۔۔۔ خیر جیسے  ہی  نائب  قاصد  نے  وہ  لیٹر فوجی۔۔۔۔ میرا مطلب ہے  کہ  شفاعت چوہدری  کے ہاتھ  میں   (اس  تاکید  کے  ساتھ ) پکڑایا  کہ ملک صاحب کہہ   رہے  ہیں کہ    انہیں  ہرحال  میں آج   شام تک    یہ   انفارمیشن     مل جانی چایئے۔۔۔ لیٹر  ملتے   ہی    فوجی نے  اسے  بڑے غور   سے  دیکھا ۔۔۔۔۔پھر اسے  پڑھنے  کے  بعد     مجھے     اپنی سیٹ  پر طلب کیا۔ سوری میں  یہ  بتانا  تو  بھول  ہی  گیا ۔۔۔۔۔کہ  اس حال نما کمرے  کا  نقشہ   کچھ  یوں تھا  کہ  اس   کے  آمنے  سامنے   میزیں  لگی  ہوئیں  تھیں کمرے  کے شروع  میں لوہے  کی  الماریاں  پڑیں تھیں جن  میں  ضروری  فائلز   و  دیگر  چیزیں  رکھی ہوئیں  تھیں۔ اس رو کے آخر  میں میرا  ٹیبل  لگا   ہوا  تھا۔۔۔۔۔   اور  میرے  سامنے   والی رو  میں   تین چار میزیں لگی ہوئیں تھیں جن پر زیادہ   تر   فیلڈ سٹاف بیٹھا    کرتا تھا    جبکہ  اسی  رو   کی   آخری    میز  ماریہ میم کی تھی۔۔۔گویا  میں اور ماریہ  میم  آمنے سامنے  بیٹھتے   تھے۔۔  دس گیارہ    بجے  کے  بعد سامنے والی    لائین   میں  عموماً  ماریہ میم  اکیلی  ہی  بیٹھی نظر آتی تھی۔ادھر  میرے ساتھ  والی  میز  پر  فوجی    بیٹھتا    تھا  اس سے اگلی  میز  عابدہ   کی  تھی  جس پر وہ  سارا  دن  سر جھکائے  پتہ نہیں  کیا  کرتی رہتی تھی  ۔۔۔  اسی  کمرے کے آخر  میں ایک  چھوٹا   سا کمرہ نما  کیبن     بنا   ہوا   تھا   جس  میں  ہمارا     برانچ  مینجر  بیٹھتا   تھا    چونکہ آج  کل  وہ  چھٹی  پر تھا اس لیئے  یہ   کیبن   بند تھا۔ہاں تو میں کہہ رہا تھا کہ   نائب قاصد سے لیٹر وصول کرنے کے بعد  فوجی نے اسے بغور پڑھا ۔۔۔۔اور پھر اشارے  سے  مجھے  پاس  آنے  کا بولا۔۔۔ میں اُٹھ کر اس کے پاس گیا ۔۔۔ تو وہ   مجھے   خشم  آلود  نظروں    سے گھورتے ہوئے  بولا ۔۔۔ ملک   صاحب  (ایم ڈی)  نے     لیٹر  بھیجا    ہے  اس  کا  جواب ابھی   دینا  ضروری  ہے اس  لیئے  تم  یہ  لیٹر پکڑو  اور جلدی  سے  اس  پر   کام  شروع کر دو۔۔۔ پھر  سخت لہجے   میں   کہنے  لگا    مجھے  دوپہر  تک   اس کا   جواب  چایئے۔۔ ۔۔۔میں نے  اس کے ہاتھ سے لیٹر لیا   اور اپنی میز کی طرف  بڑھنے   لگا ۔۔۔۔تو  ایک دفعہ پھر      وہ     اسی      کرخت   لہجے   میں بولا۔۔  مسٹر۔۔۔  یاد رکھو۔۔۔دوپہر  کا مطلب دوپہر  ہی   ہے۔۔۔ میں نے    اس  کی   مکروہ    اور    کریہہ    آواز سنی۔۔۔۔۔اور  پھر  من ہی من  میں اسے ایک سو  ایک   گالیاں دیتے  ہوئے   اپنی  سیٹ  پر بیٹھ گیا  یہاں  یہ  بات  واضع  کر دوں  کہ  ہم  جیسے  ٹاٹ سکولوں  کے  پڑھے  ہوئے  لوگوں  کی انگریزی  ویسے  ہی  بڑی کمزور ہوتی ہے۔۔۔۔ اوپر  سے   اس  قسم  کے گنجلاک    انگلش والے  لیٹر کو    دیکھ  کر میرے تو   ٹٹے   ہوائی  ہو گئے۔۔ اپنی   کرسی   پر بیٹھ  کر   میں   نے   اسے  پڑھنے  اور  سمجھنے    کی بڑی   کوشش کی۔۔۔لیکن  ناکام  رہا  ۔۔اسی  اثنا   میں  میرے  ذہن  میں ایک  خیال  آیا ۔۔۔۔   ۔۔۔۔اور میں  ان  الماریوں کی طرف چلا گیا  جن  میں  پرانی  فائلز  پڑی تھیں۔۔۔  تھوڑی سی کوشش کے بعد مجھے  اس چھٹی سے    متعلقہ  ایک پرانی  فائل مل گئی جس میں اسی قسم کی ایک انفارمیشن  بنی ہوئی تھی ۔۔  وہ کہتے  ہیں  نا کہ نقل کے لیئے بھی عقل   کی  ضرورت  ہوتی ہے  تو   یہاں  مجھ یہ  غلطی ہوئی   کہ   میں   نے    ادھر ادھر دیکھتے  ہوئے  اسی   چھٹی  کے مندرجات  کو  تھوڑا   آگے  پیچھے کیا  ۔۔۔اور   فائل ریڈی  کر  کے    فوجی    کی  طرف   چل  دیا   جیسے  ہی   میں اس کے  پاس  پہنچا    تو   اس   نے  حسبِ عادت      خشم آلود   نظروں سے میری  طرف   دیکھا   اور    پھر تحقیر  آمیز    لہجے  میں  بولا۔۔۔۔ اتنی  جلدی  کیسے   ہو گیا ؟۔۔۔

 


مجھے وہیں   کھڑا    رہنے کا    کہہ کر  اس نے میرے  ہاتھ    سے   فائل  پکڑی     اور       ڈرافٹ        کو    پڑھنا   شروع    ہو  گیا     ( جبکہ  میں  اس کی طرف  دیکھتے ہوئے۔۔۔ دل ہی  دل  میں اسے  موٹی   موٹی   گالیاں  دیتے   ہوئے  کہہ رہا تھا ۔۔۔۔بہن لنا۔۔  چھیتی کر۔۔۔تیری ماں کو چودوں ۔۔تیریں بہن کی پھدی   ماروں وغیرہ وغیرہ) ۔۔۔ ابھی  اسے  ڈرافٹ  پڑھتے  ہوئے    کچھ  ہی  دیر  گزری   تھی کہ اچانک اس نے فائل بند کی  ۔۔۔۔۔۔اور  میرے منہ  پر  دے   مارتے   ہوئے  بڑی   ہی   بدتمیزی   سے  بولا ۔۔۔  یہ۔۔۔۔یہ   تم نے لیٹر  کا جواب   بنایا ہے؟ اس کے ساتھ   ہی   وہ   غصے سے تھر تھر کانپتے ہوئے بولا ۔۔۔  نالائق، نکمے۔۔۔احمق    ۔۔۔ پتہ نہیں  یہ سفارشی   کہاں سے  آ جاتے  ہیں  ۔۔۔اس کے بعد  اس  نے  جو میری  کلاس  لینا  شروع کی   ۔۔۔۔تو    اللہ دے اور بندے لے والی  بات تھی  اس وقت  فوجی کا بلڈ پریشر   شاید    کچھ ذیادہ   ہی  شوٹ  کر گیا تھا۔۔۔ اسی  لیئے     وہ     نان  سٹاپ  بولتا  چلا جا   رہا  تھا  ۔۔ادھر میری حالت  یہ تھی کہ کاٹو تو لہو نہیں۔۔۔۔۔ اتفاق سے     جس وقت یہ واقعہ  پیش آیا  اس وقت  برانچ  میں  تقریباً  سارا   ہی  سٹاف    موجود  تھا اتنے  سارے  لوگوں  کے سامنے  بے عزتی  ہوتے    دیکھ کر  میں  شرم  سے   پانی پانی   ہو   رہا تھا لیکن   ۔۔۔۔ پتہ نہیں اس  فوجی  سالے  کو  مجھ  سے   کیا دشمنی تھی   کہ       ۔۔۔ ایک  دفعہ جو  شروع ہوا تو   پھر  لگا  ہی رہا۔۔ ۔۔۔دوسری طرف ۔۔۔۔ میری بےعزتی  پروگرام دیکھ کر  فیلڈ سٹاف نے  آہستہ  آہستہ  وہاں   سے    کھسکنا   شروع کردیا۔۔ادھر   جب  فوجی   کی  بکواس   میں    کچھ   زیادہ   ہی  شدت  آ گئی ۔۔۔ تو   میری  حالت  کو  دیکھتے  ہوئے  ماریہ میڈم   اپنی  سیٹ  سے اُٹھ   کر     فوجی کے پاس آ گئیں۔۔۔۔اور  بڑے غصے سے بولی ۔۔۔۔   بچے پر اتنی     چڑھائی  کیوں   کر  رہے  ہو؟ ماریہ میم کی بات سن کر فوجی  درشت   لہجے    میں  بولا   ۔میڈم جی!   آپ خود  ہی  دیکھ   لو۔۔۔۔ اس   نالائق  نے لیٹر کا  جواب  کس قدر غلط  بنایا  ہے۔۔۔۔پھر  اپنی  صفائی پیش   کرتے ہوئے بولا۔۔۔۔۔  دیکھو  نا  میم!۔۔۔۔ اگر میں اس   لیٹر  کو   ایسے  ہی   بھیج   دیتا  تو  میری نوکری  تو  تیل  ہو جانی تھی۔۔۔۔۔۔پھر  میری طرف  قہر آلود نظروں سے دیکھ    کر   بولا   اور  اس  لونڈے  کے کرتوت   تو  دیکھو ۔۔۔۔پرانی  فائل  سے نقل  مار  کر   غلط  جواب بنا لایا ہے۔۔۔  اس پر ماریہ میم  کہنے لگی  جواب غلط بن گیا ہے  تو  پھر  کون سا  طوفان آ گیا ہے؟   اس سے پہلے  کہ   فوجی  کچھ کہتا ۔۔۔۔۔   میڈم    اونچی      آواز میں   بولیں  ۔۔۔مسٹر  شفقت۔۔۔۔۔میں دیکھ رہی ہوں     کہ    تم  کچھ  زیادہ ہی اوور ہو رہے ہو ۔۔۔ اس کے ساتھ ہی اس نے   میرے ہاتھ سے فائل پکڑی اور فوجی  کی طرف دیکھ کر تلغ    لہجے میں   بولیں۔۔ ۔۔۔ کم از کم اس بات   کا تو   خیال   کرو کہ   لڑکا  ابھی    نیا   نیا     بھرتی   ہوا   ہے ۔۔۔اور۔۔۔۔۔اسے  کام آتے آتے ۔۔۔آئے گا ۔۔اس سے قبل کہ  فوجی  کچھ  کہتا ۔۔۔۔۔ میم  اس کی  طرف   دیکھتے    ہوئے بولی۔۔۔۔ تم  چپ  رہو  گے۔۔۔۔۔ پلیززززز۔۔۔  ۔۔ میں  اس  کی ہیلپ کرتی ہوں۔۔۔ اس کے  بعد  ماریہ میم  نے  میرا  ہاتھ پکڑا اور  مجھے سیٹ پر بٹھا  کر بولی۔۔۔ سوری  یار ۔۔ بڈھے  کا  دماغ    کچھ  زیادہ     ہی   خراب     ہو گیا ہے  ۔  چونکہ  میں  نے  اپنی  سخت بے عزتی محسوس کی تھی ۔۔۔چنانچہ  اس وقت میں شرم غصے۔۔۔اور بے بسی کے عالم میں تھر تھر کانپ رہا تھا ۔۔۔ یہ دیکھ کر ماریہ میم  نے  واٹر کولر سے پانی کا گلاس لیا اور مجھے    دیتے ہوئے بولی۔۔۔ تم آرام   سے  پانی پیو ۔۔۔میں اس لیٹر کا جواب بنا دیتی  ہوں ۔۔۔۔ ان کی بات سن کر میں نے تشکر آمیز  نظروں سے میم کی  طرف دیکھا ۔۔۔ اور پھر پانی پینا شروع ہو گیا۔۔۔پانی پی    کر بھی۔۔  میری  ندامت اور غصہ    کم  نہ  ہوا۔۔۔۔اور  میں    بے بسی    سے   سر جھکائے کرسی پر  بیٹھا  رہا ۔۔۔ جبکہ اس دوران ماریہ میم  نے نہ صرف  لیٹر کا جواب بھی بنا دیا بلکہ اس کے ساتھ ساتھ کنٹین  میں انٹر کام کر کے ۔۔۔۔۔میرے  لیئے  چائے اور بسکٹ  بھی  منگوا لیئے۔۔۔۔پھر  مجھے  چائے   دیتے   ہوئے  بڑے  نرم لہجے   میں بولیں  ۔۔تم دل چھوٹا  نہ کرو ۔۔۔۔۔۔ یہ بندہ ہے ہی ایسا۔۔۔۔میرے  چائے  پینے  کے  دوران   انہوں     نے    لیٹر  کا   جواب  بنا کر فوجی کے حوالے کیا ۔۔۔اور خود  اپنی سیٹ پر جا کر بیٹھ گئی۔۔۔ ۔۔ادھر  فوجی نے  بڑے غور  سے لیٹر کو پڑھا۔۔۔۔۔ پھر اس پر دستخط  کیئے  اور  فائل  کو بغل  میں  داب  کر  ایم ڈی    صاحب    کے   آفس چلا  گیا۔
فوجی کے  جاتے  ہی  میں اپنی  سیٹ سے اُٹھا اور  سیدھا  میم ماریہ کی ٹیبل پر چلا گیا اور ان کا شکریہ ادا کیا تو وہ بڑی شفقت سے کہنے لگیں  اٹس اوکے  بھائی۔۔۔ پھر مجھے ڈھارس دیتے ہوئے بولیں۔۔۔ فکر نہ کرو شروع شروع میں ایسا ہو جاتا ہے  تم ذرا احتیاط کیا کرو  ۔۔۔۔تو  میں   ان  کی طرف دیکھتے ہوئے  بولا۔۔۔کہ میں نے اپنی طرف سے تو بہت احتیاط کی تھی لیکن  پتہ نہیں  کیا  بات  ہے  پھر بھی غلطی ہو گئی تو وہ  اسی  شفیق انداز میں بولیں  ۔۔ میں نے   کہا  نہ  ۔۔۔۔  ایسا    ہو جاتا ہے۔۔۔ پھر کہنے لگیں ۔۔۔۔ایسا کرو آئنیدہ  اس نامراد    کو فائل دکھانے سے پہلے  ایک نظر  مجھے  دکھا  دیا کرنا  ۔۔ چھوٹی موٹی غلطی  کو۔۔۔  میں درست   کر دیا کروں گی۔۔۔۔۔ میں نے ایک بار پھر ان  کا شکریہ ادا  کیا  تو  وہ  کہنے  لگیں ۔۔۔۔ویسے تم  پرائیویٹ سیکٹر  میں  کیوں آئے  ہو؟  اپنے  لیئے  کوئی  سرکاری جاب  کیوں نہیں   ڈھونڈی؟۔۔۔کم از کم وہاں  پر  یہ   والی    چخ  چخ  تو نہیں ہونی تھی ناں۔۔۔۔۔۔ جبکہ  یہاں تو  جگہ جگہ  آپ کو    فوجی جیسے بدتمیز لوگ ملیں  ہیں۔۔ جنہیں   ذرا    سا  بھی اختیار   مل  جائے  تو ۔۔۔ وہ  اگلے بندے  کو بندہ  ہی  نہیں سمجھتے۔۔۔۔ تو میں ان سے بولا ۔۔ جی میری ایک جگہ    نوکری لگ  چکی   ہے تو وہ  حیرانی  سے بولیں ۔۔۔ اوہ۔۔رئیلی؟  تو میں ان کو جواب دیتے   ہوئے بولا۔۔۔ جی میں  درست  کہہ  رہا ہوں   ۔۔تو   اس پر وہ اسی حیرانی سے  کہنے لگیں۔۔۔۔ اچھا تو پھر آپ ادھر کیا کر رہے ہو؟   اس  پر   میں ان  سے  بولا  کہ  ٹیسٹ انٹرویو وغیرہ ہو چکا ہے    خالی   پوسٹس  پر   لڑکوں  کو بھرتی کر لیا گیا ہے جبکہ    ہم  لوگ    ویٹنگ    میں   بیٹھے ہیں جیسے ہی   کوئی     پوسٹ   خالی   ہوئی    ہمیں    کال  لیٹر  مل جائے گا۔۔۔ تو  اس   پر     وہ  کہنے  لگیں۔۔۔۔۔۔۔ آپ کا نمبر کون سا  ہے؟   تو  میں   نے ان کو اپنا  نمبر  بتا  کر      بولا   اس لیئے میڈم جی ویکینسی نکلنے تک     میں یہاں عارضی طور پر کام کر رہا ہوں۔۔


 میری بات سن کر وہ کہنے لگیں؟ کس محکمے میں  جا رہے ہو؟ جب  میں  نے  ان کو اپنے  محکمے  کا  نام  بتایا  تو  حیرانی سے ان کی آنکھیں پھیل گئیں ۔۔۔اور وہ  مجھے انگھوٹھا  دکھاتے  ہوئے   ستائیش  بھری نظروں   سے  بولیں۔۔۔۔ واؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤ۔۔۔ محکمہ تو بہت اچھا ہے تو میں ان سے بولا کہ جیسے ہی   میرا کال لیٹر آیا ۔۔۔ میں  یہاں سے چلا   جاؤں  گا۔۔  ابھی ہم یہی باتیں کر رہے تھے کہ   ملک صاحب (ایم ڈی)  کا نائب قاصد کمرے میں داخل ہوا اور  میم کے پاس آ کر بولا ۔۔۔میڈم  جی   آپ کو  ملک صاحب  بلا   رہے ہیں  ملک صاحب  کا  نام  سنتے  ہی  ماریہ میم  ہولے  سے  بولی  ۔۔۔ ضرور اس حرامی نے میری شکایت لگائی ہو گی اور پھر   اُٹھ کر   تیزی سے باہر نکل گئی۔۔۔۔

 

 
ماریہ میم  کے جانے  کے بعد میں واپس  اپنی سیٹ پر آ گیا۔۔۔۔۔۔اب  میں  اور عابدہ   کمرے  میں اکیلے  رہ گئے تھے۔۔۔  میں نے اسے نظر انداز کرتے ہوئے  اپنی دراز سے   ڈاک نکالی   اور  اسے  پڑھنے  لگا۔۔۔۔ ماریہ میم سے بات کر کے میں کافی ریلکس ہو گیا تھا  اس  لیئے  میں بڑا  ایزی ہو کر  ڈاک  دیکھ رہا تھا کہ  اچانک ۔۔۔۔۔ ہی میری آنکھوں کے سامنے ایک سایہ سا لہرایا ۔۔ میں نے نظر اُٹھا کر دیکھا تو حیرت کے مارے  میرا منہ کھلے  کا  کھلا رہ گیا ۔۔۔۔ میرے سامنے برقعے  میں ملبوس عابدہ کھڑی تھی۔۔۔۔۔ اسے سامنے  دیکھ کر اس  پہلے  کہ میں اسے  کچھ کہتا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ بڑے نرم لہجے میں کہنے لگیں۔۔۔۔۔۔۔۔  ابو نے جو بھی کیا ۔۔۔۔۔۔اس کے لیئے میں آپ سے سوری کرتی ہوں۔۔۔ عابدہ کو  اپنے سامنے   یوں  کھڑا    دیکھ   کر پتہ  نہیں پتہ  نہیں   مجھے کیا  ہوا  کہ  میں   اسے   حیرت  بھری نظرو ں سے   دیکھتے ہوئے بولا۔۔۔آپ   بول بھی سکتی ہو؟۔۔۔ میری بات سن کر   اسے بڑا    شاک   ہوا۔۔۔۔۔۔اور    وہ    بڑی    ہی     حیرت سے کہنے  لگی۔۔ ۔۔۔کک کیا مطلب ؟ تو  میں  شرمندگی سے بولا  ۔۔کچھ نہیں جی ۔۔۔ آپ کو کبھی بولتے ہوئے  دیکھا نہیں نا ں ۔۔۔اس لیئے  آپ  کی باتیں سن کر میں بہت حیران ہوا ۔۔۔ ادھر میری بات سن کر وہ  حسرت سے کہنے لگی ۔۔ آپ ابو کو تو جانتے  ہو   ۔۔۔۔۔۔۔ اس لیئے  بس۔۔۔ اتنا  کہہ کر اچانک  ہی وہ    اس  کیفیت سے نکل آئی۔۔۔۔ اور پھر     بڑے  ہموار  لہجے میں  بولی ۔۔۔۔ ویسے بائی دا  وے۔۔۔۔ابو  دل  کے بہت   اچھے ہیں   اس لیئے پلیززز۔۔۔ آپ مائینڈ    نہ کیجیئے  گا ۔۔۔اس پر میں   بولا۔۔ آپ کے ابو نے میری ماں بہن   ایک کر دی  ہے اور   آپ  کہہ  رہی  ہیں کہ  میں   مائیڈ نہ     کروں ۔۔تو  وہ   بولی۔۔۔ پلیززززززززززززز۔۔۔ میری خاطر  اسے اگنور   کر دیں۔۔۔۔۔

 

 

 

یہ  بات  ا س  نے  کچھ اس ادا سے کہی تھی  کہ  میرے  جیسا  ٹھرکی    بندہ     سب  بھول  کر اس سے بولا۔۔۔۔۔  چلیں آپ کہتی  ہیں  تو میں  اسے اگنور  کر دیتا ہوں۔۔۔(اور دل ہی دل میں بولا ۔ ویسے بھی میں ان کا کیا بگاڑ سکتا تھا؟) تو وہ  شکریہ کہہ کر واپس  جانے لگی  تو اچانک میں  اس سے مخاطب ہو کر   بولا۔۔۔  ایک  بات  تو   بتائیں۔۔۔ تو وہ جاتے  جاتے  رک کر  بولی  جی  پوچھیں؟  تو   میں اس   سے  بولا ۔۔۔۔ آپ  نے  ایسا  ابا  کہاں  سے  لبھا  تھا؟  میری  بات سن کر  وہ  کھلکھلا کر ہنسی ۔۔۔۔۔ پھر  اگلے ہی لمحے ۔۔۔کسی نامعلوم سوچ کے آتے ہی۔۔۔۔۔ وہ ایک دم سیریس   ہو کر بولی۔۔۔ آپ بھی نہ۔۔۔۔۔۔ اور جا کر اپنی سیٹ پر بیٹھ گئی۔۔۔اس کے  جاتے  ہی  میں  بھی  دوبارہ  ڈاک  کو  دیکھنا  شروع ہو گیا۔۔۔
تھوڑی دیر بعد اس نے   آواز دے  کر   مجھے  اپنی   طرف متوجہ کیا اور جب میں اس کی طرف متوجہ ہوا تو اس نے میری کرسی کے  نیچے  کی  طرف  اشارہ  کیا ۔۔۔میں  دیکھا  تو   فرش پر  کاغذ  کا   ایک    مڑا  تڑا  سا   گولہ  پڑا  تھا۔۔۔ میں نے  وہ  کاغذ   کرسی کے پاس سے اُٹھایا  اور  اسے سیدھا کر کے   پڑھا تو اس پرلکھا تھا   ۔۔۔ پلیززززززززز۔۔۔۔ میری اس بات کا ۔۔۔۔۔ کسی  سے ذکر نہیں کرنا۔۔۔اور ہاں کاغذ کو   باریک باریک پھاڑ کر ڈسٹ  بن میں ڈال  دینا۔۔۔۔۔  اس  کا میسچ پڑھ کر میں نے بھی  اسی کاغذ  پر     لکھا کہ فکر نہیں کرو ۔۔۔  ۔۔۔۔میں کسی  سے بھی ذکر   نہیں کروں  گا ۔ویسے بھی آپ کی بات  بتا کر ۔۔۔۔۔۔مجھے۔۔۔چوہدری  صاحب   کے ہاتھوں ( عین عالمِ   شباب  میں)  فوت نہیں ہونا۔۔۔ اور پھر کاغذ کو اسی طرح سے گولا سا بنا کر  اسکی طرف پھینک دیا۔۔۔۔اس    نے    کا غذ   کو    زمیں   سے  اُٹھایا پھر  میری   طرف دیکھا   ۔۔۔۔اور اسے    پڑھنے  کے بعد ۔۔۔۔۔۔۔ اس کے باریک باریک ٹکڑے کیئے اور میرے سامنے ڈسٹ بن میں پھینک دیا۔۔۔۔۔
   اس دن کے بعد  آہستہ آہستہ  میں  ان دونوں خواتین کے ساتھ  کافی   فری ہو گیا۔۔ میں جب بھی کسی فائل پر کچھ لکھتا تو اسے ایک نظر  ماریہ میم کو ضرور دکھاتا اور  وہ اسے   پڑھ   کر۔۔۔۔۔  مجھے  بہت گائیڈ کرتی تھی ۔۔۔ ایک طرح سے  آفس ورک میں وہ میری استاد  بن     گئیں  تھیں۔۔ جبکہ دوسری طرف  عابدہ کے ساتھ بھی    رقعہ    بازی  جاری   تھی – موقعہ  دیکھ کر  ہم بزریعہ   رقعہ   ہلکی پھلکی ۔۔۔۔۔گپ  شپ    لگا  لیا  کرتے تھے  ۔۔۔۔ ایک دن کی بات  ہے  کہ   آفس آتے  ہی  اس   نے  کاغذ  پر کچھ   لکھا   اور  پھر نظر بچا کر   میری طرف  پھینک دیا ۔۔میں نے   ادھر ادھر    دیکھتے   ہوئے  کاغذ  کا  گولا اُٹھایا ۔۔۔اس میں لکھا تھا  ۔۔۔
آج... کوئی  فائلز نہ   پیش کرنا ۔۔۔ ابا کا موڈ  سخت آف ہے۔۔۔ اس  پر  میں نے لکھا  ۔۔۔ تمہارے ابا کا موڈ کب آف نہیں ہوتا؟   اسی اثنا  میں  فوجی ایک   لڑکے  پر  خواہ مخواہ    ہی   چڑھ  دوڑا۔۔۔ لڑکے کو  ڈانٹتے   دیکھ  کر   عابدہ نے دوبارہ    لکھا۔۔۔۔ دیکھا؟ میں نہ کہتی تھی کہ  آج  ابا  کا  موڈ  سخت آف ہے۔۔۔ اس پر میں نے اسے جواب دیتے ہوئے ۔۔۔ میرے حساب سے تو محترم  ہر وقت ہی مرچوں والی بوری  پر بیٹھے رہتے  ہیں۔۔  لیکن آج  شاید کچھ  زیادہ  ہی   مرچیں   کھا کر  آ گئے  ہیں۔۔۔۔۔ ۔۔۔ پھر آگے لکھا  موصوف   کو    ہوا کیا ہے؟  یہ بات   لکھ کر  میں نے بڑے طریقے سے وہ   رقعہ   عابدہ  کی طرف پھینک دیا۔۔۔ جو اس نے ادھر ادھر  دیکھ    کاغذ  زمین  سے اُٹھایا ۔۔۔۔اسے پڑھنے   کے بعد۔۔۔۔   بس اتنا ہی لکھا   کہ     ۔۔۔ آج امی کے ساتھ    جنگ ہوئی ہے۔۔۔۔۔ دل تو بہت چاہا  کہ   لکھ دوں کہ  ۔۔۔۔ سالا (پھدی مارتے ہوئے)  جلدی چھوٹ گیا ہو گا۔۔۔۔ لیکن بوجہ   نہیں  لکھ  سکا۔۔۔۔اس طر ح  میں  اور  عابدہ  موقعہ   دیکھ  کر     بزریعہ   خط   ایک دوسرے کے ساتھ   چھوٹی موٹی   گپ  شپ لگا  لیتے  تھے۔۔  یہاں  میں  یہ  بات    بتا  دوں کہ  سب  سے   نظر یں   بچا کر ۔۔۔۔خط  زمین   پر  پھینکنے ۔۔۔۔ اور پھر اسے   بڑے طریقے     سے اُٹھا  کر  پڑھنے     میں  ایک  الگ  ہی   مزہ اور  تھرل تھی۔۔۔ خاص کر  جب  اس  کا  خڑوس ابا ۔۔ پاس   بیٹھا  ہوتا  اور   وہ   کرسی پر  ٹیک   لگانے     یا جمائی کے بہانے  ۔۔   رقعہ  پھینکا کرتی تھی۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔  پہلے پہل    ہماری رقعہ بازی اس وقت شروع ہوتی۔۔۔۔۔۔ جب  فیلڈ  سٹاف   اپنی  ڈیوٹی    پر  نکل  جاتا۔۔۔۔ اور کمرے  میں   ہم تینوں  ہی رہ جاتے تھے ایسے میں  جیسے  ہی فوجی   کو واش روم  جانا ہوتا     ۔۔۔ یا کسی   کام کے سلسلہ  میں  ہیڈ آفس  سے بلاوہ آتا۔۔۔۔ ۔۔۔۔توابا     کے جاتے ہی  وہ  بڑی محتاط    نظروں  سے  ماریہ   میڈم  کی    طرف  دیکھتی۔۔۔۔۔۔۔۔ اگر وہ   اپنے دھیان  میں مگن ہوتی  ۔۔۔۔تو ۔۔۔۔ پھر وہ   بڑے   ہی    غیر محسوس طریقے  سے  کاغذ  کا گولہ سا بنا کر میری طرف پھینک  دیتی تھی۔۔۔   آہستہ آہستہ ۔۔۔عابدہ   (بزریعہ  رقعہ بازی) میرے ساتھ کافی کھل گئی تھی۔۔۔ لیکن ۔۔۔۔سٹاف  کے سامنے  وہ    مجھے  زرا بھی  لفٹ  نہ  کرواتی تھی۔۔۔۔ ایک دن   کی بات ہے کہ   جب وہ آفس میں داخل ہوئی تو   ایک   ٹائیٹ  سے  برقعے  میں ملبوس  تھی۔۔۔۔  اس پر میں نے جھٹ سے کاغذ پر لکھا  ۔۔۔۔ یہ برقعہ  تم پر بڑا سوٹ کر رہا ہے  ۔۔ کیا نیا  سلوایا ہے؟   اور مناسب موقعہ   دیکھ کر وہ رقعہ  اس کی طرف پھینک دیا۔۔۔  میرے  خط   کے   جواب میں اس  نے  لکھا کہ۔۔۔ ارے نہیں "یار"   میں نے اپنا  برقعہ  دھویا تھا  لیکن  اتفاق  سے  وہ ابھی  تک   سوکھا  نہ تھا اس لیئے  میں  چھوٹی بہن کا  پہن  کر آ  گئی   ہوں۔۔۔    چونکہ  اپنے  خط  میں  اس  نے پہلی  دفعہ  مجھے "یار" لکھا تھا ۔۔۔چنانچہ  اپنے  لیئے یار کا لفظ  پڑھ  کر  میں  شیر  ہو گیا۔۔۔ ۔۔۔اور  جواب میں لکھا ۔۔۔۔  آئیندہ سے یہی  برقعہ پہنا کرو ۔۔۔۔کم از کم  ۔۔۔اس میں تم  " تھوڑی سی " تو دکھتی ہو۔۔۔ اتفاق سے اس دن    اس کے ابا کو کسی ضروری کام کے سلسلہ میں ہیڈ آفس ( جو کہ اوپر والے فلور پر واقعہ تھا) جانا  پڑ  گیا  تھا ۔ اور حسنِ اتفاق سے  ماریہ  میڈم کی طبیعت  کچھ خراب تھی۔۔۔ اس لیئے  ہم  دونوں  میں  کافی دیر تک   رقعہ بازی  جاری   رہی۔۔۔ ایک  خط   کے  جواب   میں۔۔۔ میں نے  اسے  لکھا ۔۔ یہ پردوہ  ہٹا دو  ۔۔۔ذرا مکھڑا دکھا دو۔۔۔۔پھر اس گانے کے  اگلے بول  کی بجائے  آگے  لکھ دیا۔۔۔۔وہ    اس    لیئے کہ  ۔۔۔۔۔۔بندہ   تمہاری   پیاری  سی  صورت  کو دیکھنا  چاہتا ہے۔۔۔۔۔۔ تو جواب میں اس نے  لکھا۔۔۔۔ میں     نہیں دکھا سکتی نا۔۔۔تو میں نے   لکھا کیوں  نہیں  دکھا  سکتی۔۔کیا  تم کانی ہو؟ تو  اس نے جواباً لکھا ۔۔۔۔ ایسی کوئی بات نہیں۔۔۔۔  جیسا  کہ   تمہیں    معلوم  ہے  کہ مجھے  ابا  کا  ڈر ہے ۔۔۔۔۔اور شدید  ڈر ہے ۔۔اس  لیئے  میں کسی  بھی    صورت     یہ   رسک  نہیں لے سکتی۔۔بات تو اس کی ٹھیک تھی۔۔۔ اس لیئے کچھ دیر سوچنے کے بعد میں نے اس کو لکھا۔۔۔۔۔۔ بخدمت جنابہ عابدہ صاحبہ!۔۔ حضور مجھے آپ  کے ڈر کا خوب اندازہ ہے۔۔ لیکن کیا  کروں۔۔۔۔   آپ کا حسین چہرہ   بھی   تو    دیکھنا ہے ۔۔۔ اگر یہاں ممکن  نہیں ۔۔۔۔ تو چلو   کہیں باہر ہی مل لیتے ہیں۔۔۔ کم از  کم   مجھے  اس بات    کا یقین  ہو جائے کہ میری دوست   دکھنے  میں  چڑیل  تو  نہیں لگتی؟۔۔۔۔۔۔۔
اس   روز کے بعد   میں اس  سے ہر خط   میں  ملنے  کی درخواست کرتا۔۔۔۔ کافی   منت ترلوں کے بعد  آخر اس کا  دل پسیج  ہی گیا۔۔۔چنانچہ ایک دن اس  نے   نیم  رضامندی سے لکھا۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔ ۔۔ میں تم کو    دو تین دنوں میں بتاؤں گی (ملنے کے بارے میں) ۔ ۔۔۔۔ اس کی یہ بات پڑھ کر  موکیمبو   خوش ہو گیا۔۔
             اسی دوران   برانچ میجر    صاحب  نے بھی آفس  جائن   کر لیا تھا۔ان  کا  نام  جواد    آغا   تھا   ۔۔ لیکن  سب انہیں  آغا  صاحب ہی کہتے تھے۔۔۔۔۔ اس   وقت   آغا    صاحب پچاس کے  پیٹے   میں ہوں گے ۔۔۔فوجی کے برعکس  وہ کافی خوش اخلاق اور ڈیسنٹ  آدمی تھے   مجھے   بڑے تپاک سے ملے اور چھوٹا موٹا انٹرویو  لینے کے بعد    مسکراتے   ہوئے    کہنے لگے۔۔  ۔۔سنا ہے آپ کے ساتھ   ۔۔۔۔شفقت صاحب  خاصی بد سلوکی   کا مظاہرہ   کرتے رہے ہیں۔۔۔ پھر تسلی دیتے ہوئے بولے۔۔۔۔۔ اس کی بات  کا برا نہ ماننا  کہ اس کی نیچر ہی ایسی ہے۔۔ مینجر صاحب  کی بات سن کر میں  نے کچھ نہیں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔دوسری طرف   ماریہ میڈم کو فائلز دکھانے کا سلسلہ بھی جاری تھا۔ہاں ایک بات تو میں   بھول ہی گیا اور وہ یہ  کہ   جیسا  کہ  آپ  کو معلوم  ہے  کہ  اس  زمانے  میں    میرے پاس ایک پرانا سا بائیک ہوا  کرتا تھا ۔۔  جس دن کنٹین  میں   ماریہ میم کی پسندیدہ   چیز نہ پکی   ہوتی  تھی  اس دن   وہ     کھانا        باہر سے منگوایا کرتی  تھی۔۔۔۔۔۔انہیں   خاص  کر   بلیو  ایریا    میں  واقع     ایک  دکان   کی حلیم     بہت پسند تھی۔۔۔اس زمانے میں  ۔۔ چونکہ مسلمہ طور   پر   مجھے ان  کا   شاگرد تسلیم  لیا گیا تھا ۔۔ اور میرے    پاس باوا  آدم  کے زمانے کی پھٹ پھٹی ( بائیک)  بھی تھی ۔اس کے لیئے  کھانا۔۔۔ یا   کوئی بھی     بازار   سے    لانے کی میری ذمہ داری تھی۔ ۔۔۔ ایک دن کی  بات ہے میں حسبِ معمول ان کو فائل دکھانے لے گیا   انہوں نے میری نوٹنگ ڈرافٹگ پڑھی اور پھر میری طرف دیکھتے ہوئے بولی  اُف شاہ جی ! آپ   کو  ابھی تک انگریزی   نہیں   لکھنی   آئی؟  ۔ میڈم  کی  بات سن کر میں      خوشامد  بھرا   جواب دیتے ہوئے بولا۔۔ میڈم   جی!  جب تک  آپ اس برانچ میں  موجود ہیں۔۔۔ تب تک مجھے اپنی گلابی انگلش  کی کوئی فکر نہیں۔۔ میری چاپلوسی  بھری  بات   سن کر وہ مسکراتے ہوئے بولیں۔۔۔ وہ تو ٹھیک ہے۔۔۔پر۔۔ میرا مشورہ ہے کہ تم    ابھی سےاپنی انگریزی کو درست کر لو۔۔۔  پھر میرے چہرے پر انکار پڑھ کر بولیں  ۔۔ہاں ہاں  تمہیں   اپنی   اس   رقعہ   بازی سے  فرصت ملے گی   تو  کچھ پڑھو گے نا۔۔۔۔ میڈم کے منہ   سے رقعے کی بات سن کر۔۔۔  پنجابی  کے ایک محاورے   کے مطابق ۔۔۔ میرا منہ  فک  ۔۔۔۔اور  بنڈ حیران  رہ  گئی۔۔۔۔۔چنانچہ    میں ان کی طرف دیکھ کر ہکلاتے  ہوئے بولا۔۔ کک   کون   سا  رقعہ ؟   آپ کو یقیناً     کوئی غلط فہمی     ہوئی ہے۔۔۔۔۔ میری بات سن کر   انہوں   نے   دوبارہ   ایک   ٹھنڈی   سانس   بھری۔۔۔ اور کہنے  لگی  ۔۔  ۔  برخردار!  ایک بات یاد رکھو۔ ۔۔ محبت ضرور اندھی ہوتی ہے  ۔۔ لیکن ہمسائے نہیں۔۔۔

پھر مسکراتے ہوئے بولیں۔۔۔تمہارا کیا  خیال ہے   جو  کچھ تم دونوں کے بیچ   چل رہا ہے  میں اس سے بے خبر ہوں؟ اس پر میں  نے  کچھ کہنا  چاہا  تو وہ ہاتھ اُٹھا کر بولیں۔۔۔ بس بس زیادہ صفائیاں دینے کی ضرورت نہیں ۔۔   ایسا ہونا  قدرتی بات ہے  ۔۔۔پھر  میری  طرف  دیکھتے  ہوئے ہولے  سے   گنگنا ئیں۔۔۔ کچی مٹی   تو مہکے  گی۔۔۔۔۔ ہے مٹی  کی مجبوری  ۔۔۔۔ میڈم کی بات سن کر میں نے  اپنا تعلق مان لینے میں ہی عافیت سمجھی اور ان سے بولا۔۔۔ میڈم پلیز کسی کو بتایئے گا نہیں ۔۔۔تو وہ  شرارت بھرے انداز میں کہنے لگیں۔۔  اچھا بابا کسی کو نہیں بتاؤں گی۔۔۔۔۔پھر   اشتیاق بھرے لہجے  میں بولیں۔۔۔۔اچھا یہ بتاؤ کہ  اس کے ساتھ  کبھی ڈیٹ پر بھی   گئے ہو یا   ابھی تک   رقعہ بازی پر ہی کام چل رہا ہے؟ تو میں نے نفی میں سر ہلا دیا۔۔  اس پر ماریہ میم اچانک   ہی سیریس ہو کر بولیں  ۔۔۔  شاہ جی!۔۔ ہوشیار رہنا۔۔۔ لڑکی  بہت ہی تیز ہے  ۔۔ایسا نہ ہو کہ  "خاص" لمحات  میں  تم اس   کے  ساتھ  شادی کا وعدہ  کر بیٹھو۔۔۔۔ پھر کہنے لگی ۔۔۔  میری  بات یاد رکھو   ۔۔۔ اگر  ایک دفعہ تم نے  ہاں کر دی تو پھر تمہیں اس کے ساتھ   ہر حال میں شادی کرنا پڑے گی۔۔ میڈم کی بات سن کر   میں نے  ہاں میں سر ہلایا اور ان کی طرف دیکھتے ہوئے بولا وہ تو  سب  ٹھیک ہے میڈم  لیکن  ۔۔۔ "خاص لمحات " سے آپ کی کیا مراد ہے؟ میری بات سن کر میڈم کے چہرے پر ایک رنگ سا  آگیا۔۔۔ لیکن   جلد ہی وہ سنبھل  گئی۔۔۔  پھر ۔۔۔۔۔ مسکراتے   ہوئے    بولی۔۔۔ وہی خاص لمحات  جس   کی ادائیگی  کے لیئے ہر لڑکا  لڑکی کے پیچھے بھاگتا پھرتا  ہے۔۔  ابھی ہماری گپ شپ  جاری تھی کہ    مینجر صاحب نے میڈم کو طلب کر لیا۔۔۔ اور میں واپس اپنی سیٹ  پر بیٹھ گیا
اس واقعہ سے تیسرے دن کی بات ہے کہ   عابدہ نے اپنے خط میں   لکھا    کل کیا کر رہے ہو؟ تو میں نے اسے اسے جواب دیا۔۔۔  کل چونکہ چھٹی ہے اس لیئے بندہ  لمبی   تان  کر سوئے گا۔۔۔  مطلب   ریسٹ کرے گا۔۔۔ تو وہ کہنے لگی ۔۔  شام کو فری ہو گے؟ اور میرا جواب  اثبات میں پا   کر بولی۔۔ کل شام ٹھیک سات بجے مل سکتے ہو؟ تو میں نے جواب میں لکھا ۔۔ تم بس یہ بتاؤ کہ مجھے ملنا کہاں ہے؟ تو جواب میں اس نے  بلیو ایریا  اسلام آباد  کے ایک مشہور جوس سنٹر کا  نام   لکھ دیا   جہاں  آئیس   کریم  بھی دستیاب  تھی ۔۔اور ساتھ یہ  بھی لکھا کہ میرے ساتھ باجی  بھی ہوں گی اس لیئے پلیز۔۔۔۔۔۔ ایسی ویسی کوئی بات نہ کرنا۔۔ عابدہ کا خط پڑھ کر میرا دل باغ باغ ہو گیا۔۔۔۔چنانچہ    اس دن جب میں نے فائل دکھانے میڈم کے پاس لے گیا تو  فائل چیک کرنے کے بعد انہوں نے ایک نظر میری طرف دیکھا اور بولی  آج بہت خوش لگ رہے ہو ؟ تو میں نے ان سے کہا کہ کل عابدہ کے ساتھ ڈیٹ پر جا رہا ہوں ۔۔اور یہ بھی بتا دیا کہ ہم نے   کہاں پر   ملنا ہے اس پر ماریہ میڈم مجھے   آنکھ مارتے  ہوئے بولی۔۔۔ بیسٹ  آف لک۔۔۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔

Posted on: 09:15:AM 05-Jan-2021


0 0 194 0


Total Comments: 0

Write Your Comment



Recent Posts


Hello Doston, Ek baar fir aap sabhi.....


0 0 19 1 0
Posted on: 06:27:AM 14-Jun-2021

Meri Arrange marriage hui hai….mere wife ka.....


0 0 15 1 0
Posted on: 05:56:AM 14-Jun-2021

Mera naam aakash hai man madhya pradesh.....


0 0 14 1 0
Posted on: 05:46:AM 14-Jun-2021

Hi friends i am Amit from Bilaspur.....


0 0 76 1 0
Posted on: 04:01:AM 09-Jun-2021

Main 21 saal kahu. main apne mummy.....


1 0 59 1 0
Posted on: 03:59:AM 09-Jun-2021

Send stories at
upload@xyzstory.com