Stories


لذت کی راہوں پر از رضا بھائی

جنید کو اپنے بزنس ٹوور پر گئے ہوے دوسرا دن تھا . . . . .
حسب معمول
وہ دوسرے شہر میں گیا ہوا تھا . . . . .
علینا کی صبح ہی اس سے بات چیت ہوئی
تھی . . . . . .
اور اب دوہپر کا ٹائم ہو رہا تھا . . . .
تقریباً تین بجے کا . . .
اور علینا اپنے سسر جی . . . . .
نزیر ملک صاحب کے ساتھ كھانا کھانے کے بعد اپنے روم میں آکر لیٹ چکی ہوئی تھی . .
اور نزیر صاحب بھی اپنے کمرے میں
آرام کرنے چلے گئے ہوے تھے . . . . .

جیسے ہی علینا اپنے بستر پر لیٹی تو
اسے اپنے شوہر کی یاد آنے لگی . . .

صبح ہی علینا کی جنید سے بات ہوئی تھی
اس نے امید ظاہر کی تھی کہ وہ اگلے دن تک واپس آجائے گا . . . . . . .
مگر اکیلا کمرا اور اپنے شوہر سے دوری تو جیسے اسے کاٹ رہی تھی . . . . . . .

اُس کے جِسَم کو جلا رہی تھی . . . .
جنید کے ٹوور پر جانے سے پہلے کی اُس کے ساتھ گزری ہوئی رات علینا کو یاد آنے لگی . . . .

اس کا جِسَم جیسے جلنے سا لگا . . . . . .
کمرے میں چل رہے ہوے اے سی کے باوجود بھی اس کا جِسَم گرم ہونے لگا . . . . . .

علینا کو پتہ بھی نہیں چلا کہ کب اس کی آنکھیں بند ہوئیں اور اس کا ہاتھ اپنے ہی
جِسَم پر پھسلتا ہوا نیچے کو جانے لگا . . . . . . .

دھیرے دھیرے اپنی چوت پر
پہنچ گیا . . . .

اس نے اپنی قمیض کو اپنی رانوں پر سے ہٹایا . . . .
اور اپنی ٹائیٹ پاجامہ اور پینٹی کے اوپر سے سے ہی دھیرے دھیرے اپنی چوت کو سہلابے  لگی. . . . .

علینا کے چہرے کے تصورات بَدَل رہے تھے . . . .
وہ دھیرے دھیرے لذت
میں کھوتی جا رہی تھی . . . .
اس کی آنکھیں بند ہو رہی تھیں . . . . . .

اس کا ہاتھ اپنے پاجامہ کے اُوپر سے ہی اپنی چوت کو سہلا رہا تھا . . . .

اسے اپنی چوت گیلی ہوتی ہوئی محسوس ہو رہی تھی . . . . . . .
قمیض اوپر اٹھانے سے علینا کا گورا
گورا پیٹ ننگا ہو رہا تھا . . .
علینا نے اپنا ہاتھ اپنی پاجامہ کے اندر
کھیسکا دیا . . . . . .
اس کا ہاتھ اس کی چکنی جلد پر سے پھسلتا ہوا اس کی چوت کی طرف
بڑھنے لگا . . .
اور پِھر اس کا ہاتھ اس کی پینٹی کے اندر داخل ہوگیا . . . . . . .

علینا نے آج ہی اپنی چوت کے بالوں کو صاف کیا تھا . . . .
جس سے اس کی چوت کے اُوپر کا حصہ اور بھی ملائم اور چکنا ہو چکا تھا . . . . . . . .
چوت کے اوپر کے چکنے حصے سے جیسے ہی اس کا ہاتھ پھسلتا ہوا اس کی چوت تک پہنچا تو اُس کے منہ سے خود ہی سسکیاں نکال گئی . . . . . .

اسے اپنی چوت جلتی ہوئی محسوس ہوئی. . . . . . .
اس کی سانسیں تیز ہونے لگیں . . . . .

اس کی انگلی نے اپنی چوت کے دانے کو
ڈھونڈ لیا . . . . .
اور اپنی انگلی کی پورے سے وہ اپنی چوت کے دانی کو سہلانے لگی . . . . . .
کبھی اس کی انگلی نیچے تک جاتی اس کی چوت کے سوراخ تک . . . . .
اور کبھی پِھر اوپر کے حصہ پر واپس آ جاتی . . . . . . .

چوت کے سوراخ سے رستہ ہوا گاڑھا پانی اس کی انگلی کو بھگو رہا تھا . . .

چکنا کر رہا تھا . . . . .

اس کی چوت پانی چھوڑ رہی تھی . . . . .

جو اس کے وہائٹ پاجامہ کو بھی گیلا کر رہا تھا . . . . .

تیز سانسوں کے ساتھ اُس کے ممے بھی اوپر نیچے ہو رہے تھے . . . . . .
جو اس کی ٹائیٹ قمیض میں اور براہ میں قید تھے . . . . .

جیسے جیسے بے چینی بڑھنے لگی ویسے ویسے ہی اسے جنید کی یاد اور بھی ستانے لگی . . . . . .

علینا نے اپنی نشے سے بھری ہوئی
آنکھیں کھولیں . . . . . .
اور اپنے قریب ہی بیڈ پر پڑا ہوا اپنا موبائل اْٹھایا. . . . . .
اور اپنے شوہر کو کال کرنے لگی . . . . .

مگر یہ کیا . . . . .

اس کا موبائل تو بند جا رہا تھا . . . . . . .

علینا نے دو بار ٹرائی کی . . . . . .
مگر سیل فون بند تھا . . . . . . .

آخر علینا  نے اپنا موبائل بیڈ پر پٹاخ دیا . . . . . . . .
اور ادھر اُدھر سر مارنے لگی سرہانے  پر . . . . .

اچانک اسے کچھ خیال آیا . . . . .
وہ اپنے بیڈ سے اٹھی . . . .
اور پِھر اپنے کمرے سے باہر نکل
گئی . . . . .

علینا 24 سال کی ایک جوان اور خوبصورت لڑکی ہے . . . . . .

بےحد گوری . . .
اور
خوبصورت . . . . . .
اچھی پڑھی لکھی . . .
اس نے یونیورسٹی سے ایم بی اے کیا ہوا تھا . . .
اس کی شادی ایک سال پہلے ہی جنید سے ہوئی ہے جو اس کا یونیورسٹی کلاس فیلو بھی رہ چکا ہے اور اس کا پیار بھی . . . .

دونوں نے اپنی مرضی سے اپنے پیڑینٹس کو راضی کر کے شادی کی تھی . . . . . . .
اور دونوں ہی بہت خوش تھے . . . . .

اب علینا جنید اور اُس کے والد نزیر کے ساتھ رہتی تھی . . . . . .

نزیر صاحب ایک 60 سے 65 سال کے آدمی تھے . . . . .

جوکہ ابھی بھی کافی حد تک فٹ ہیں . .
لیکن اب زیادہ تر بزنس انہوں نے
اپنے بیٹے کے حوالے ہی کر دیا ہوا ہے . . . . . .
جوکہ  بہت ہی اچھے سے بزنس چلا رہا ہے . . . . . .

نزیر صاحب کی ایک اور اولاد ان کی بیٹی  تھی . . . . .
جو کہ جنید سے چھوٹی تھی . . . . .

دو سال مگر اس کی شادی بھی انہوں نے جنید کی شادی کے ساتھ ہی کر دی تھی . . . . .

فضا اپنے شوہر کے ساتھ اسی شہر میں رہتی تھی . . . . . . .
ان کا بھی اچھا بزنس تھا . . . . .
اور اچھا گھر تھا . . . . . . .
دونوں فیمیلیز اپر مڈل کلاس ٹائپ کی تھیں . . . .
جوکہ بہت زیادہ امیر نہ سہی مگر اچھے خاصے کھاتے پیتے لوگ تھے . . .


علینا اپنے کمرے سے باہر آئی . . . .
اور اپنے سسر جی کے کمرے کی طرف بڑھنے
لگی . . . . .

سسر جی کے کمرے کے دروازے پر جا کر علینا نے دھیرے سے دروازہ کھولا . . . .
تو دیکھا کے اُس کے سسر جی کوئی کتاب پڑھتے پڑھتے سو چکے ہوے ہیں . . . . . .
کتاب ان کے سینے پر ہی پڑی ہوئی تھی . . . . . .

علینا نے مسکرا کر ان پر ایک نظر ڈالی اور دھیرے سے دروازہ بند کر کے پیچھے ہٹ گئی . . . .
اور کچن کی طرف بڑھی . . . .
کچن میں جا کر علینا نے فریج کھولا اور اس میں سے کچھ تلاش کرنے لگی . . . . .
اور پِھر اس کی نظر اپنی من پسند چیز پر
پر گئی . . . . . . . .
وہ دھیرے سے مسکرائی . . . .
اور اپنا ہاتھ باسکٹ کی طرف بڑھا
دیا . . .
اور دو چار دیکھنے کے بعد ایک مناسب سائز کا کھیرا اٹھا لیا . . . . .

جوکہ یقینا جنید کے لنڈ سے موٹا اور لمبا تھا . . . .
کھیرا سیلیکٹ کرنے کے بعد علینا کے چہرے پر ایک مسکراہٹ پھیل گئی . . . .
اس نے آہستہ سے کھیرے
پر اپنے ہونٹ رکھ کر اسے چُوما لیا . . . . .
اور پِھر فریج بند کر کے کچن
سے نکل آئی . . . . . .

اپنے کمرے کی طرف جاتے ہوے ایک نظر اپنے سسر جی کے دروازے پر ڈالی اور  مسکراتی  ہوئی اپنے کمرے میں داخل ہوئی . . . . .
اور اندر سے دروازہ بند کر لیا . . . .


اپنے بیڈ کے قریب جا کر علینا نے جلدی سے اپنی پاجامے کو اُتار کر اپنے جِسَم
سے الگ کر دیا . . . . .
اس کی گوری گوری ٹانگیں ننگی ہوگیں . . . . .

علینا نے ہاتھ بڑھا کر اپنی پینٹی کے اوپر سے اپنی چوت پر پھیرا تو دیکھا کہ اس کی پینٹی بھی اس کی چوت کے پانی سے پوری گیلی ہو رہی ہے . . . .

علینا نے اپنی گیلی پینٹی بھی
اُتار دی . . . . . .
اسے دیکھا تو وہ چوت کے پانی سے پوری بھیگی ہوئی تھی . . . . .
علینا نے اپنی پینٹی کو اپنی ناک کے قریب لے جا کر سونگھا تو اس کی اپنی چوت کی
مہک اُس کے ناک سے ہوتے ہوے دماغ تک پہنچ گئی . . . .

اپنی چوت کی مہک کو محسوس کر کے اسے یاد آیا کہ اس کا شوہر اس کی چوت کی اسی مہک کا کتنا دیوانہ ہے . . . . . .
وہ مسکرائی اور اپنی پینٹی کو بیڈ پر پھینک کر اپنی چوت کو سہلانے لگی . . .
جو پوری کی پوری گیلی ہو رہی تھی . . . . . .
اور گرمی سے دہک رہی تھی . . . . .


علینا بیڈ پر لیٹ گئی . . . . . . . .
اور اپنے ہاتھ میں پکڑا ہوا کھیرا اپنے ہونٹوں کے پاس لے جا کر اسے چومنے لگی . . . . .

آہستہ آہستہ اس پر زبان پھیرنے لگی . . . .

جنید کے لنڈ کو اِمیجن کرتے ہوئے . . . .
دوسرا ہاتھ اس کا اپنی چوت کو سہلا رہا تھا . . . . . .
وہ دوبارہ سے گرم ہونے لگی تھی . . . . . .

کھیرے کو اپنے تھوک سے گیلا کرنے کے بعد علینا نے اسے اپنی چوت کے دانے  پر رکھا اور اس سے اپنی چوت کے دانے کو رگڑنے  لگی . . . . .

جیسے ہی کھیرے نے اس کی چوت کو
رگڑا تو علینا  کے منہ سے سسکیاں نکل گئی . . . .
اور اس کی آنکھیں بند ہو
گیں . . . . .
علینا نے واپس اسے چُوما . . . . . . .
پِھر اپنے ہاتھ میں پکڑ کر اسے
بیڈ پر سیدھا کھڑا کیا . . . . . .
اور کروٹ لے کر اس پر جھک گئی . . .
اور اپنا منہ نیچے لے جا کر اُس کے سرے کو چُوما اور پِھر نیچے سے اوپر تک اسے
چاٹنے لگی . . . .

جیسے وہ جنید کے لنڈ کو چاٹ رہی ہو . . . . . .
پِھر علینا نے  منہ کھولا اور دھیرے دھیرے اس کھیرے کو اپنے منہ کے اندر لینے  لگی . . . . .

علینا اپنے منہ کو آہستہ آہستہ اوپر نیچے کو کرتے ہوئے اس کھیرے کو چوسنی
لگی . . . . .
وہ سبز موٹا کھیرا دھیرے دھیرے اُس کے منہ میں اندر باہر ہو رہا تھا . . . .
جس کو کبھی اپنے منہ سے نکال کر اپنی زبان سے چاٹنے لگ جاتی . . . . .
دوسرا ہاتھ اس کا نیچے کو گیا . . . .
اور خود کی چوت کو آہستہ آہستہ
سہلانے لگا . . . .
علینا کی چوت پوری طرح سے گیلی ہو رہی تھی . . . . . .
بلکہ اسے تو ٹپکتی ہوئی محسوس ہو رہی تھی . . . . . .

علینا اب دوبارہ اپنی کمر کے بل
لیٹ گئی . . . . . .
اور اپنی زبان اور منہ سے گیلے کئے ہوے کھیرے  کو اپنی چوت پر لے
گئی . . . . .
اور آہستہ آہستہ اسے اپنی چوت پر رگڑنے لگی . . . .
آہستہ آہستہ وہ موٹا کھیرا اس کی چوت کے سوراخ پر پہنچ گیا . . . . .
جیسے ہی اس کی چوت کے دانے پر ٹچ ہوا تو علینا کے منہ سے سسکیاں نکل گئی . . . . .
اپنی چوت کے سوراخ پر اس کھیرے کو رکھ کر علینا  نے آہستہ  سے زور ڈالا تو اس کی چوت کے

پانی سے چکنی ہو رہی ہوئی چوت کے اندر وہ کھیرا پھسل کر اندر چلا گیا. . . . .
اور ساتھ ہی علینا کے منہ سے سسکیاں نکل گئی . . . . . .
اور اس کی آنکھیں بند ہوگیں . . . . . .

تھوڑا سا کھیرا چوت کے اندر جانے کے بعد تو جیسے اب علینا سے کنٹرول کرنا ہی مشکل ہو رہا تھا . . . .
اس نے آہستہ آہستہ اسے پُورا اندر کرنا شروع کر دیا . . . . .
مگر وہ اس موٹے اور لمبے کھیرے  کو پُورا اپنی چھوٹی سی نازک سی چوت کے اندر نہ لے سکی . . .
اور اسے اپنی چوت کے اندر باہر کرنے لگی . . .

اس کی چوت پہلے ہی گیلی ہو رہی تھی . . . . . .
اور دھیرے دھیرے اُس کے ہاتھ میں
پکڑا ہوا کھیرا اس کی چوت میں اندر باہر ہو رہا تھا . . . .
اتنے میں گھر کی بیل بجی . . . .

علینا چونکی . . . . .

اس کا ہاتھ روک گیا . .  .

وہ سوچنے لگی . . . .
یہ اِس وقت دوہپر میں کون آیا ہے . . . .

مگر اسے یہ تسلّی تھی کہ وہ تو اُس کے سسر جی . . . . .
ملک صاحب نے ہی جا کر دیکھنا ہے کہ دروازے
پر کون ہے . . . .

علینا نے دوبارہ سے اپنی آنکھیں بند کی اور اس کھیرے کو اپنی چوت میں اندر باہر کرنے لگی . . . .

اسے ہمیشہ کی طرح ایسی ہی فیلنگ
آ رہی تھی جیسے کہ وہ جنید کے لنڈ سے ہی چُدوا رہی ہو . . . . .

اُدھر ملک صاحب نے نیند سے اٹھ کر جا کر دروازہ کھولا تو سامنے دو آدمی کھڑے تھے . . . . .

جو تھوڑے عجیب سے لگ رہے تھے . . .

آگے والا بندہ تھوڑی بڑی بڑی
مونچوں والا . . . . . .
تھوڑا بھاری جِسَم کے ساتھ تھا . . . . .

اس نے جینس کی میلی سی پینٹ اور کالی رنگ کی ٹی شرٹ پہنی ہوئی تھی . . . . . .
گلے میں ایک موٹی سی زنجیر ڈالی
ہوئی تھی . . . .
رنگ بھی اس کا سانولا سا تھا . . . . .
اس کا نام بابُو تھا . . . . . . .

اُس کے پیچھے کا آدمی تھوڑے پتلے جِسَم کا تھا . . . . . .
وہ بھی جینس اور شرٹ میں تھا . . . . . .
ملک صاحب نے حیرت سے ان دونوں کو دیکھا اور بولا

ملک . . . . .
جی بھائی صاحب میں آپ کی کیا خدمت کر سکتا ہوں . . .

بابُو . . . .
انکل جی معذرت چاہتے ہیں آپ کو تھوڑی تکلیف دی . . . . . . .
وہ اصل میں ایسا ہے کہ آپ کے بیٹے کے بارے میں آپ سے کچھ بات کرنی تھی . . . .

ملک صاحب تھوڑا گھبرا گئے . . . . . . .
ان کے چہرے سے پریشانی جھلکنے لگی . . .

کیا ہوا میرے بیٹے کو . . . .
خیریت تو ہے نہ . . . . . . .

بابُو . . . . .
جی جی انکل تم پریشان نہ ہو سب ٹھیک ٹھاک ہے . . . . . .
بہتر ہو گا کہ ہم اندر چل کر بات کر لیں . . . . .

ملک صاحب تھوڑا پریشان ہوگئے. . . . . .

ایک نظر ان دونوں پر ڈالی اور پِھر ان کو
اندر آنے کے لئے بول دیا . . . . .
دونوں اندر آئے . . . . .
اور ٹی وی لونچ میں بیٹھ گئے  . . . . .
وہیں پر صوفے لگے ہو تھے . . . . . .


وہ دونوں ملک صاحب کے دونوں طرف بیٹھ
گئے تھے . . . . .
اب ملک صاحب تھوڑا گھبرا رہے تھے کہ کہیں انہوں نے ان دونوں کو اندر بولا کر غلطی تو نہیں کر لی . . . . . . . .

ملک . . . .
بیٹا مجھے جلدی سے بتاو کیا بات ہے . . . . . . .
میرا تو دِل ڈوب رہا ہے . . . .

بابُو . . . .
انکل اصل میں بات یہ ہے کہ آپ کے بیٹے نے اپنے کاروبار کے لیے ہم سے کچھ پیسہ لیے تھے اُدھار . . . . . .
جو اس نے 6 مہینے میں چکانہ تھا . . . .
مگر اب پُورا سال ہو چکا ہے . . .
اور وہ ہم کو چکر دیتا جا رہا ہے . . . . .

ملک صاحب. . . . .
وہ بیٹا تھوڑا اس کا کام ٹھیک نہیں چل رہا نہ تو اِس لیے دیری ہو رہی ہوگی . . . .
ضرور واپس کر دے گا وہ آپ لوگوں کے پیسے . . . . .
وہ بھاگنے والا نہیں ہے کہیں . . .
آپ فکر نہیں کرو . . . .

بابُو اپنے موبائل پر کچھ انگلیاں چلاتا ہوا بولا . . . . .
ارے انکل . . . . .
وہ کہیں اب بھاگ ہی نہیں سکتا . . . .
کیوںکہ اس کو ہم نے اپنے پاس ہی رکھ لیا ہوا
ہے . . . . .

ملک صاحب . . . .
کیا مطلب ہے تمہارا . . . . . .
اِس بات کا . . . .

بابُو . . . . .
ارے انکل جی . . . . .
یہ دیکھو اپنی آنكھوں سے خود ہی دیکھ لو . . . .

بابُو نے واٹس اپ سے کسی نمبر پر ویڈیو کال ملا لی تھی . . . . .
اور اب اُس کے موبائل پر جنید ایک کرسی پر بندھا ہوا نظر آ رہا تھا . . . . .
کچھ ایسا لگ رہا تھا کہ جیسے اسے مارا بھی گیا ہو . . . . .

ملک صاحب نے گھبرا کر اپنی نظریں ان دونوں
پر ڈالی تو اب ان دونوں کے ہاتھوں میں گن تھیں . . . . .

ملک صاحب تو پریشان
ہوگئے. . . . . . .

ملک صاحب . . . . . .
بیٹا پلیز میرے بیٹے کو چھوڑ دو . . . .

بابُو . . . . .
ارے انکل اپنے بیٹے سے بات تو کرو نہ . . . .

پِھر بابُو بولا . . . .
ارے کالیا ذرا اِس لونڈے سے بات تو کروا نہ اس  بڈھے کی . . . .

موبائل پر جیسے ہی جنید کی نظر اپنے باپ پر پڑی تو وہ رونے لگا . . . . .

جنید . . . .

بابا . . . .

جو کچھ بھی گھر میں ہے اس کو دے دو آپ . . . . . .
ورنہ یہ مجھے مار دیں گے . . . . . . . .


بابُو موبائل ملک صاحب کو دیکھاتا ہوا اپنی گن پر ہاتھ پھیر رہا تھا . . . . . .

بابُو . . . . .
پِھر کیا سوچا آپ نے انکل جی . . . . . .

ملک صاحب . . . .
گھبرا کر بیٹا گھر پر تو کچھ بھی ایسا نہیں ہے . . . . .

بابُو . . . .
ارے یہ بتاو گھر پر اور کون ہے . . . . .


ملک صاحب. . . . .
وہ میری بہو ہے اور میں بس . . . . . . .

بابُو . . . .
کہاں ہے وہ . . . . .


ملک صاحب . . . . .
اپنے کمرے میں . . . . .

بابُو . . .
چلو اس کو بھی بلاؤ باہر . . . . . .
ارے ہاں اس کا زیوار تو ہو گا نہ . . . . .
اور کچھ نہ کچھ رقم بھی ہوگی گھر میں . . . .
اُس کے کمرے میں . . . .

ملک صاحب کو انہوں نے اٹھایا . . . . . . .
اور علینا کے کمرے کی طرف چل پڑے . . . .

جہاں اندر علینا اپنے بستر پر تنہا لیٹی ہوئی مچل رہی تھی . . . . . .
اور اپنی گرم چوت کی آگ کو  کھیرے  سے مٹانے کی کوشش کر رہی تھی . . . . . .

اس کی چوت نے ابھی تک پانی نہیں چھوڑا تھا . . . . . .
لیکن گیلی بہت ہو رہی تھی . . . . .

اس کی بے چینی اپنے عروج پر تھی . . . .
اس کا نیم بڑھانا جِسَم بستر پر مچل رہا تھا . . . .
اور اس کا ہاتھ کھیرے کو تیزی سے اس کی چوت میں اندر باہر کر رہا تھا . . . .

اب وہ اپنی آرگزم کے قریب تھی کہ اس کا دروازہ نوک ہوا . . . . .
علینا کو اِس موقع پر بہت غصہ آیا . . . .
اس کا ہاتھ روک گیا . . . . .

وہ آہستہ سے بولی. . . . . .
کون . . . . . .

بابُو نے گن ملک صاحب کے سر پر رکھی اور دھیرے سے بولا . . . . .
کوئی چالاکی مت دکھانا اسے آرام سے دروازہ  کھولنے کو بولو . . . . . .

ملک صاحب نے آواز دی . . . . .
علینا بیٹی دروازہ کھولا ذرا . . . .

علینا کی حالت اِس وقت خراب ہو رہی تھی . . .
وہ چڑ کر اپنے بستر سے اٹھی . . . . .

جلدی سے اپنا ٹائیٹ پاجامہ اٹھا کر جلدی جلدی پہننے لگی . . .
اور پِھر بستر سے وہ کھیرا اٹھا کر اپنے بیڈ کی سائڈ ٹیبل ڈراز میں رکھ دیا . . .
اور اپنی گیلی پینٹی کو اپنے سرہانے کے نیچے رکھ دیا . . . . . . .

اپنے بالوں میں ہاتھ پھیرتے ہوئے دروازہ کھولنے  کے لیے بڑھی . . . . . . .
دروازے کی طرف جاتے ہوے اس کی نظر
آئینے میں پڑی تو اسے خود کی حالات دیکھ کر عجیب سا لگا . . . . .
کیوںکہ صاف دِکھ رہا تھا کہ جیسے کوئی بہت ہی پیاسی عورت ہو . . . . . .
یا بہت ہی بری طرح سے چُدوا کر آ رہی ہو . . . . . . . .

بہرحال علینا  نے دروازہ کھولا . . . . . . . .
اور جیسے ہی باہر جھانکا تو اُس کے تو ہوش ہی اُڑ گے . . . . . .
مگر اِس سے پہلے کے وہ کچھ سمجھ سکتی . . . . . .
یا کوئی اور حرکت کرتی . . . . .
بابُو نے دروازے کو دھکا مارا اور وہ سب لوگ اندر داخل ہوگئے. . . . . .

علینا گھبرا کر . . . . .
کون ہو آپ لوگ . . . . . . . . . .
اور کیا چاہتے ہو . . . . .

دونوں اندر آ گئے اور ملک صاحب کو لے کر . . . . . . . .

ملک صاحب نے اپنی بہو کو جلدی جلدی
ساری بات بتائی . . . . . .
بابُو نے موبائل پر اسے جنید کی ملاقات کروائی. . . . . . .
اور علینا بھی پریشان ہوگئی . . . . . .

علینا . . . . .
پلیز آپ کو جو چاہیے وہ لے لو اور میرے شوہر  کو چھوڑ دو . . . . .

بابُو اپنی لال لال آنكھوں سے علینا کو اوپر سے نیچے تک دیکھتا ہوا اپنے گندے ڈانٹ نکال کر ہنستا ہوا بولا . . . . .
جو ہم کو چاہیے وہ تو ہم لے کر ہی جائیں گے . . . . . .
ارے انکل بہت مست بہو ہے تمہاری تو . . . . . . . .
اس نے ملک صاحب کی طرف دیکھتے ہوے آنکھ ماری . . . . .

ملک صاحب . . . .
تمیز سے بات کرو . . . .
وہ میری بہو ہے . . . . .
جو بھی لینا ہے جلدی سے لو اور دفعہ ہو جاؤ . . . . . . .

ابھی سسر جی کی بات ان کے منہ میں ہی تھی کے بابُو نے ایک زور کا تھپڑ ان کے  منہ پر مارا . . . . . . . .
ابے  بڈھے ذرا منہ سنبھال کے بات کر . . . . .
میں تجھ بڈھے کی عزت کر رہا ہوں اور تو لنڈ پر  چڑھتا جا رہا ہے . . . . . .

علینا. . .
پلیز پلیز آپ ان کو کچھ نہ کہو . . . . . .
میں آپ سے معافی مانگتی ہوں ان کی . . . .
علینا  نے اپنے ہاتھ جوڑے . . . . . .
اور ملک صاحب بیڈ پر گرے ہوے  اپنا گال
سہلا رہے تھے . . . . .

 


بابُو . . . . .
ارے شیدے اِس بڈھے کو کرسی سے باندھ دے . . . . . .
ورنہ یہ ٹر ٹر  کرتا ہی رہے گا . . . . . .


علینا . . . .
نہیں نہیں . . . . .
پلیز  . . . .


بابُو نے اپنا بھاری بھرکم ہاتھ اٹھایا علینا کو تھپڑ مارنے کے لئے تو وہ سہم سی گئی . . . .
اسے سہما ہوا دیکھ کر بابُو نے اپنا ہاتھ روک دیا . . . . .
اور ہنسنے لگا . . . . . . .
بہن کی لوڑی میرے کام میں کوئی رکاوٹ نہ ڈالنا . . . . . .
ورنہ تو میرا ہاتھ برداشت نہیں کر سکے گی . . . . . .
علینا چپ ہوگئی . . . . .


شیدے نے سسر جی کو اٹھایا . . . . .
اور اسے کمرے میں ہی پڑی ہوئی کرسی پر بِٹھا
دیا . . . . . .
اپنی پاکٹ میں سے ایک نیلون کی رسی نکالی اور ان کو کرسی سے باندھ
دیا . . . . . . . .


بابُو . . . . .
بڈھے اب خاموشی سے ہمیں اپنا کام کرنے دے اور تیری آواز نہیں نکالنی چاہیے . . . . . .
آئی سمجھ نہ . . . . .


سسر جی خاموش رہے . . . . .
سیدھا آگے بڑھا اور علینا کی الماری کھول کر اس کو چیک کرنے لگا . . . . .
ایک دراز کھولا تو اس میں علینا کی براہ اور پینٹیز پڑی  ہوئی تھیں . . . . .
اس نے وہ نکال نکال کے نیچے گرانی شروع کر دی . . . . .


 بابُو کی نظر پڑی تو وہ ہاتھ بڑھا کر ان کو کارپیٹ سے اٹھا کر بیڈ پر لے آیا . . . . .


بابُونے ان کو سونگھا اور پِھر ان کو پھیلا کر دیکھتا ہوا بولا . . . . .
ارے کیا مست اسٹائل کی براہ ہیں تیری تو . . . . . . . .


علینا اپنے سسر جی کے سامنے اپنی براہ کی نمائش یوں ہوتے ہوئے دیکھ کر شرم
سے پانی پانی ہوگئی . . . . . . .
اور سسر جی بھی اپنا چہرہ ادھر اُدھر گھما رہے تھے . . . .

 


بابُو نے گن سے علینا کی گالوں کو چھوا . . . .
یار ویسے بڑا مست مال ہے تو سچ
میں . . . .
کیا نام ہے تیرا . . . . .
ارے ہاں علینا. . . . .
یہی بولا تھا نہ بڈھے نے . . . .


علینا نے بے بسی سے اپنا سر ہلا دیا . . . . .


بابُو اب آہستہ آہستہ علینا کے گال کو اپنی انگلی سے سہلا رہا تھا . . . .
علینا کو بہت غصہ بھی آ رہا تھا اور یہ سب برا بھی لگ رہا تھا . . . . . . .


علینا  . . . . .
 پلیز نہیں کرو . . . . . .
چھوڑ دو مجھے . . . .


اچانک بابُو کی نظر بیڈ پر رکھے سرہانے کی طرف گئی . . . .
جس کے نیچی سے کوئی چیز جھانک رہی تھی . . . . . . .
بابُو نے آگے بڑھ کر سرہانہ اٹھایا . . . . .
 تو نیچے علینا کی لال رنگ کی گیلی پینٹی پڑی ہوئی تھی . . . .
اسے بابُو نے اٹھا لیا . . . .


بابُو . . .
ارے یہ تو بالکل گیلی پڑی ہے تیری پینٹی . . . . .
ابھی اتاری ہے کیا . . . .
یہ کہہ کر بابُو اسے سونگھنے لگا . . . . . .


بابُو . . . . .
واہ . . . . . .
 کیا مست خوشبو آ رہی ہے اِس
میں سے تیری چوت کی . . . . .
اف ف ف ف
مار ڈالا رے ظالم . . . . .


علینا شرم سے پانی پانی ہوگئی . . . . .


سسر جی پِھر سے غصے سے بولے . . . . .
میں نے کہا ہے نہ کہ یہ حرکتیں نہیں کرو میری بہو کے ساتھ . . . . . .


بابُو غصے سے بولا . . . .
بڈھے تو نے لگتا ہے باز نہیں آنا تیرا منہ بند
کرنا ہی پڑے گا . . . . . .
وہ علینا کی گیلی پینٹی ہاتھ میں لیے ہوے سسر جی کی طرف بڑھا  . . . . .
یہ دیکھ میں کوئی جھوٹ بول رہا ہوں . . . . .
دیکھ تیری بہو کی پینٹی اس کی چوت کے پانی سے کتنی گیلی ہو رہی ہے . . . . .
اور تو بولتا ہے کہ میں غلط بات کر رہا ہوں . . . .
 دیکھ . . . . . . .
 دیکھ اسے . . . .
سونگھ اس کو . . .


بابُو نے علینا کی پینٹی ملک صاحب کی ناک سے لگائی . . . . .
 نہ چاہتے ہوے بھی ان کو اپنی سانس کے ساتھ اپنی بہو کی چوت کی خوشبو کو اس کی پینٹی میں سے اپنے اندر لے جانی پڑی . . .
اور اپنی ناک پر ان کو گیلا گیلا بھی محسوس ہوا . . . . .


 وہ سمجھ گئے کہ بابُو سچ ہی کہہ رہا ہے . . .


جیسے ہی پینٹی میں سے علینا کی چوت کی مہک ان کی سانس میں گئی تو ان کی نظر خود با خود ہی اپنی بہو کی طرف گئی . . . . .


علینا کی نظر اپنے سسر جی کی نظر سے ملی تو اس نے شرم سے اپنا سر جھکا دیا . . . . . . .


بابُو علینا کی چوت کے پانی سے گیلی ہو رہی ہوئی پینٹی کو اُس کے سسر جی کے پورے
منہ پر پھیرتا ہوا بولا . . . . . .
 خود ہی دیکھ لو میں کوئی غلط بول رہا ہوں . . . .
دیکھو تمہاری بہو کی چوت کتنی گیلی ہو رہی ہے . . . . . .
 وہ پہلے سے ہی چودنے کے لیے تڑپ رہی ہے . . . . .
شاید اسے تمہارے بیٹے کی یاد آ رہی ہوگی نہ . . . .


ملک صاحب کا پُورا چہرہ علینا کی گیلی پینٹی کے پانی سے گیلا ہو چکا تھا . . . .
 وہ اپنی بہو کی طرف دیکھ نہیں پا رہے تھے . . . . .
اور وہ بھی اپنے سسر جی سے نظریں نہیں ملا پا رہی تھی . . . . . .


ملک صاحب پِھر بولے. . . . .
پلیز بابُو . . . . . .
 ایسی بیہودہ باتیں نہیں کرو . . .
میری بہو بہت شریف لڑکی ہے . . . . . .


بابُو کو پِھر غصہ آیا . . . . .
اس نے سسر جی کا منہ پکڑ کر دبایا . . . .


جس سے ان کا منہ کھل گیا . . . . . .
اور بابُو نے ان کی بہو کی گیلی پینٹی سسر جی کے منہ میں ٹھونس دی . . . .
علینا کی آنکھیں حیرانی سے پھیل گیں. . . . .
اور وہ بہت ہی شرمندگی سے اپنے سسر کو دیکھ رہی تھی . . . . . .
جن کے منہ میں اس کی چوت کے پانی سے گیلی ہو رہی پینٹی پوری کی پوری ٹھونس دی گئی ہوئی تھی . . . . .


اب ملک صاحب  کچھ نہیں بول سکتی تھے . . . .
کوئی آواز نہیں نکال سکتے تھے . . . .
اور صرف اور صرف اپنی بہو کی چوت کے پانی کا ذائقہ ہی چکھ سکتی تھے وہ بھی ڈائریکٹ اس کی پینٹی سے . . . . . .

 


علینا  گھبرائی ہوئی سی یہ سب کچھ دیکھ رہی تھی . . . .
اور پِھر ادھر اُدھر کی الماریوں سے سامان ڈھونڈتے ہوے سیدھا اس کی بیڈ کی سائڈ ٹیبل کی طرف بڑھا . . . . . .
اور جیسے ہی شیدے نے وہ ڈراز کھولنے کے لیے ہاتھ بڑھایا تو علینا کا دِل اچھل کر اُس کے حلق میں آ گیا ہو جیسے . . . .


اور پِھر وہی ہوا جس کا اسے ڈر  تھا . . .
شیدے نے ڈراز کھولا تو پہلی نظر ہی اس کی سامنے اندر رکھے ہوے کھیرے پر پڑی . . . . .
 جس پر علینا کی چوت کا پانی لگا ہوا تھا . . . . .
جو کچھ تو سُوکھ چکا تھا اور کچھ گیلا گیلا چمک رہا تھا . . . . .


اس نے وہ کھیرا اپنے ہاتھ میں اٹھایا اور مسکرا کر علینا کی طرف دیکھتا ہوے بولا . . .


شیدا . . . . .
ارے استاد یہ دیکھو کیا ملا ہے یہاں سے . . . .
یہ سنتے ہی علینا نے شرم کے مارے اپنی نظریں جھکا لیں . . . .
اور کمرے کے اندر موجود دوسرے دونوں مرد . . . . . . .
 بابُو اور علینا کی سسر جی دونوں
شیدے کی طرف دیکھنے لگے . . . . .
جو اپنے ہاتھ میں پکڑا ہوا ہرے کلر کا
کھیرا سب کے سامنے لہرا رہا تھا . . . . . . .


بابُو کی آواز سنائی دی . . . . . .
ابے بہن چود  . . . . .
ادھر لا ذرا سا . . . . .


شیدے نے وہ کھیرا اپنے استاد کے ہاتھ میں دیا اور وہ اسے سونگھتے ہوے بولا . . . . .
 ابے یہ بہن کی لوڑی تو اِس کھیرے سے اپنی چوت چود رہی تھی . . . .
کیوں ایسا ہی ہے نہ. . . . . .
 بول حرام زادی . . . . .

 


علینا بجائے کچھ بولنے کے شرم کے مارے اپنا سر نیچے جھکا لیا . . . . .


بابُو . . . . .
 بول نہ یہی کر رہی تھی نہ . . . . .


علینا کچھ نہیں بولی . . . .
بس اپنا سر جھکا کر نیچے دیکھتی رہی . . . .


بابُو . . . . .
لگتا ہے تو ایسے نہیں مانے گی . . . . .
ابھی تیرے شوہر کی کوئی ہڈی پسلی توڑواتا ہوں . . . . . . .
 یہ کہہ کر اس نے اپنے موبائل پر ویڈیو کال کرتے ہوے ہی کسی کو بولا . . . .
ابے یار کالیا اِس بہن چود کو ایک ڈوس تو دے ذرا . . . . . .


اور پِھر علینا نے دیکھا کہ ایک کالا سانڈ جیسا آدمی سامنے  آیا . . . .
اس کے ہاتھ میں ایک پلااس کی طرح کا کچھ تھا . . . . . .
اس نے کرسی پر بندھے ہوے جنید کے پاس جا کر اس کی انگلی کو اپنے ہاتھ میں پکڑے ہوے
پلاس میں گریپ کیا اور اسے دبانے  لگا . . . . . .


جیسے ہی اس نے پلاس سے جنید کی
انگلی کو دبایا تو جنید کرسی پر بری طرح سے مچلنے لگا . . . . . .
اور اس کی چیخیں اس کمرے کے علاوہ . . . . . .
علینا کے بیڈروم میں بھی گوجنے لگیں . . . .


جسے علینا اور اس کا سسر صاف سن سکتے تھے . . . .


یہ دیکھ کر علینا  بری طرح سے تڑپی . . . .
اور تڑپ کر بابُو کا بازو پکڑتی ہوئی بولی . . . . .
پلیز پلیز . . . . .
روکو اس کو . . . . . .


بابُو ہنسا . . . . . .
چل بتا پِھر جلدی سے . . . . .
کیا کر رہی تھی اِس کھیرے سے . . . . .


علینا . . . .
نے سر جھکایا . . . .
اور موبائل میں اپنے شوہر کو دیکھتے ہوئے بولی . . . .
پہلے اسے روکو . . . . . .


بابُو نے کالیا کو آواز دی . . .
یار روک جا ذرا . . . .


پِھر علینا سے بولا چل اب بول جلدی . . . . .
 اِس سے اپنی چوت کو چود رہی تھی نہ
اپنے شوہر کو یاد کر کے . . . علینا نے سر جھکایا . . .
اور بولی . . . .
ہاں

بابُو زور سے ہنسا اور ملک صاحب سے بولا . . . .
سنا کچھ آپ نے آپ کی بہو کیا بول رہی  ہے . . . . .
چل ذرا اپنے سسر کی طرف دیکھ کر  بتا اس کو دوبارہ . . .

علینا نے دھیرے سے اپنے سسر جی کی طرف دیکھا اور آہستہ سے اپنا سر ہلا دیا . . . . .

بابُو ہنستے ہوے بولا . . . . . .
ابے بڈھے دیکھ لے اپنی شریف بہو کی شرافت . . . . .
وہ تیرے بیٹے کی غیر موجودگی میں اپنی چوت کی پیاس کھیرے کو اپنی
چوت کے اندر باہر کر کے بجھا رہی ہے . . . . . .

ارے میری جان ہم مر گئے ہیں
کیا . . . . . .
یہ بات بابُو نے اپنے ہاتھ سے علینا کا چہرہ اوپر اٹھاتے ہوے کہی . . . . .

علینا نے گھبرا کر موبائل کی طرف دیکھا اور بولی . . .
نہیں نہیں . . . .
پلیز مجھے نہ چھوؤ

بابُو ہنسا . . . .
اچھا اچھا . . . .
میں سمجھ گیا تو اپنے شوہر سے ڈر رہی ہے نہ
کہ وہ یہ سب دیکھ لے گا . . . . .
تو بے فکر رہ ادھر کا کیمرہ بند ہے . . . .

وہ اِس کمرے کی نہ آواز سن سکتا ہے اور نہ ہی ادھر کی تصویر دیکھ سکتا ہے علینا کو تھوڑی راحت ملی . . . . .
مگر وہ یہ سب کچھ ان بدمعاشوں کے ساتھ
نہیں کرنا چاہتی تھی . . . . .
وہ پِھر سے پیچھے کو سمٹ گئی . . . . . . .

بابُو نے اِس بار اس کا بازو پکڑ کر ایک  جھٹکے سے اپنی طرف کھینچا اور اسے اپنے سینے سے لگاتے ہوے بولا . . . . . .
بہن چود ابھی تھوڑی دیر پہلے تو اِس کھیرے سے اپنی چوت چود رہی تھی . . . . .
اپنی چوت کی گرمی مٹانے کے لیے. . . . .
اب اصلی لنڈ سامنے ہے تو
کیوں شرم کر رہی ہے . . . . . .

علینا . . . .
نہیں نہیں . . .
پلیز . . . . .
مجھے چھوڑ دو . . . . .
میں ایسی ویسی لڑکی نہیں ہوں . . . . . .


مگر بابُو نے اس کی مزاحمت کی پرواہ کیے بنا ہی اُس کے گالوں کو چومنا شروع کر دیا . . . . . . .
علینا بابو کی بانہوں میں مچل رہی تھی . . . . .
تڑپ رہی تھی مگر وہ اُس کے سسر کے سامنے  ہی اسے اپنی بانہوں میں جکڑے ہوے اس کی کمر پر ہاتھ پھیرتے ہوے اس کے گالوں کو چوم رہا تھا . . . .
اور اُس کے ہونٹوں کو چومنے کی کوشش بھی کر رہا تھا . . . .
مگر ہر بار ہی علینا اپنا چہرہ
ادھر اُدھر ہٹا لیتی تھی . . . . . . . .

آخر ایک بار تو علینا اس کی بانہوں میں پلٹ گئی . . .
اور اس کی گرفت سے نکالنے کی
کوشش کی . . . . . .
مگر بابُو نے اس کی کمر میں ہاتھ ڈال کر اسے پکڑ لیا . . . . .
اور اس کی گردن کو چومتے ہوے اُس کے مموں  کو دبانے لگا . . . . . .

ملک صاحب بڑی بےبسی کے ساتھ یہ سب دیکھ رہے تھے . . . . . .

بابُو . . . .
سالی بھاگ کر کہا جائے گی . . . . . . .

یہ کہتے ہوے اس نے علینا کو بیڈ پر دھکیل دیا . . . .
اب اس کو اپنے ایک بازؤ میں
ایسے پکڑا کہ علینا کا سر اُس کے سینے سے لگ گیا . . . . . .
اور وہ بیڈ پر لمبی لیٹی
ہوئی تھی . . . . . .
مگر بابُو کی بانہوں میں . . . . . . .
بابُو دوبارہ سے اُس کے گالوں کو
چومنے لگا . . . . .

اچانک سے بابُو نے ہاتھ نیچے لے جا کر علینا کی چوت پر رکھ دیا . . . . .
جہاں سے اس کا پاجامہ بھی گیلا ہو رہا تھا . . . . . . .

بابُو نے اسے اپنے جِسَم سے پیچھے کیا اور اس کی قمیض کو اوپر اٹھا دیا . . . . .
اس کی اسکن کلر کا پاجامہ اس کی چوت کے پاس سے گیلا ہو رہا تھا . . . . . .

بابُو نیچے جھکا اور اس کی چوت کو سونگھنے لگا . . . . .
علینا اس کے سر پر ہاتھ رکھ کر اسے پیچھے کو
دھکیلنے لگی . . . .
اور سیسکانے لگی . . . .
پلیز پلیز بابُو ایسا نہیں کرو . . . . .
میں بہت شریف لڑکی ہوں . . . .

مگر بابُو کہاں ماننے والا تھا . . . . .
اس نے علینا کی چوت پر اپنا ہاتھ رکھا . . . .
اس کے پاجامہ کے اوپر سے ہی . . . . . .
اور پِھر اس کی چوت کو رگڑنے لگا . . . . .

میری جان تو تو پہلے ہی اتنی گرم ہو رہی ہے تو دیکھ میرے ہاتھ کے جادو سے تو کیسے اور گرم ہو جاتی ہے . . . . .
تیری گرم چوت اور بھی پانی نکالے گی . . . .

بہت گرم عورت ہے تو سچ میں . . . . . .

بابُو کے ہاتھ کی رگڑ سے علینا کو کچھ ہو رہا تھا . . . .
اس کی چوت پِھر سے گرم ہونے لگی تھی . . . . .
اچانک بابُو نے اپنا ہاتھ علینا کے پاجامہ کے اندر
ڈالا اور اس کی چوت پر اپنا ہاتھ رکھ دیا . . . .

جیسے ہی بابُو کا کھردارا ہاتھ علینا کی نازک سی چوت سے چھوا  تو علینا تڑپ  اٹھی . . . . .
بابُو نے اُس کے گالوں کو چومتے ہوے اپنے ہونٹ اُس کے پتلے پتلے گلابی ہونٹوں پر رکھ دیے . . . . . .
اور اِس بار علینا نے اپنے ہونٹ پیچھے ہٹانے کی کوئی کوشش نہیں کی . . . . .
بابُو آہستہ آہستہ اُس کے ہونٹوں کو چومتے ہوے  اس کی چوت کو سہلا رہا تھا . . . . . .

بہت گرم ہے تیری چوت تو . . . . .
تجھے چودنے کا تو مزہ ہی آجائے گا . . . .

علینا ہوش میں آئی جیسے . . . . .
اور ترچھی نظر کر کے اپنے سسر جی کی طرف
دیکھا . . . .
جو کبھی اس کو دیکھتے اور کبھی اپنی نظریں پھیر لیتے تھے . . . . .

علینا کو یہ سب عجیب سا لگ رہا تھا . . . . .
وہ آہستہ سے سسکی . . . . .
پلیز بابُو . . . .
چھوڑ  دو مجھے . . . . .
پلیز . . . . .
ایسا نہیں کرو پاپا کے سامنے . . . . . .

بابُو اُس کے گالوں کو اپنی زبان سے چاٹتا ہوا بولا . . . . . . .
ارے کچھ نہیں ہوتا. . . . .
دیکھ لینے دے بڈھے کو بھی تیری جوانی . . . . . .

علینا نے بےبسی اور شرم کے مارے اپنا سر بابُو کے چوڑے سینے میں چُھپا لیا . . . . . .

اچانک ہی بابُو نے اسے چھوڑ دیا . . . . .
اور بولا . . . . .
اچھا سن . . .
میرا تیرے پر دِل آ گیا ہے . . . . . . .
اور تیری جیسی مست لڑکی کو میں چودے بنا نہیں جانے والا . . . .
لیکن تو بول رہی ہے کہ تو ایک شریف لڑکی ہے تو تجھے میں دو اوپشن دیتا ہوں . . . . .
اور ان دونوں میں سے تجھے ایک سیلیکٹ کرنا پڑے گا . . . . . . . . .

بول منظور ہے

علینا نے اپنے سسر جی کی طرف دیکھا اور اپنا سر جھکا لیا بنا کوئی جواب دیے ہی
بابُو نے اُس کے سر کے بالوں کو پکڑ کے اس کا چہرہ اوپر اٹھایا . . . . . .
اور بولا . . . .
اور سن . . . .
یہ اوپشن کی سلیکشن تیرے شوہر کی جان بخشی کے لیے ہے . . . . . .
دونوں میں سے ایک مان لے ورنہ تو تو پِھر بھی چوداے گی ہی . . . . . .
لیکن تیرا شوہر بھی جان سے جائے گا . . . . . .

علینا گھبرا کر بابُو کی طرف دیکھنے لگی . . . .
جیسے پوچھ رہی ہو کیا اوپشن
ہیں . .

بابُو . . . . .
دیکھ پہلا اوپشن تو یہ ہے کہ تو اپنے شوہر کی جان بچانے کے لیے مجھے خود کو  چودن .  دے . . . . . .

علینا نے فوراً ہی انکار میں سر ہلا دیا . . . . .

بابُو مسکرایا . . . . . . . .
اور دوسرا اوپشن یہ ہے کہ . . . . . .
تو ہمارے سامنے اسی کھیرے سے خود ہی اپنی چوت کی پیاس بجھا کر دکھا ہمیں . . . .
بول . . . . .
اور یہ یاد رکھنا . . . . .
دونوں میں سے ایک اوپشن لینا تیرے لیے ضروری ہے . . . .

علینا نے انکار کرتے ہوے سر جھکا لیا . . . . .

بابُو تھوڑا غصہ ہوتا ہوا . . . . . .
تو ایسے نہیں مانے گی . . . . .
بہن چود تو اپنی چوت بھی مرواے گی . . . . . .
اور اپنا شوہر بھی مرواے گی . . .

بابُو نے فون اوپر کیا اور دوبارہ سے اس میں بولا . . . . .
ارے یار کالیا . . . . .
ٹپکا دے اِس سالے کو . . . . .

علینا گھبرا گئی . . . . .
اور فوراً ہی آگے بڑھ کر اُس کے منہ پر ہاتھ رکھ دیا . . .
نہیں نہیں پلیز . . . . . .
ایسا نہیں بولو . . . . . .
پلیز ہمیں چھوڑ دو . . . . . .
جو چاہے ہے لے جاؤ . . . . . .
مگر مجھے ایسے ذلیل نہیں کرو . . . . . .

بابُو اس کی بات کو نظر انداز کرتے ہوے بولا . . . . .
میرا لوڑا یا تیرا یہ کھیرا . . . . . . .

جلدی بول . . . . .

علینا نے اپنے سسر جی کی طرف دیکھا جس کی چہرے پر بھی خوف اور بے بسی تھی. . . . . . .

آخر جب کچھ بھی حَل نظر نہ آیا تو علینا نے اپنا کانپتا ہوا ہاتھ بابُو کے ہاتھ میں پکڑے ہو کھیرے کی طرف بڑھا دیا . . . . .

بابُو ہنسنے لگا . . . . . . .
اور وہ کھیرا اُس کے ہاتھ میں دے دیا . . . . . .
اور ہنستے ہوے بولا . . . . . .
بہت ظالم ہے تو . . . . . .
مجھ جیسے عاشق کو اپنی چوت کا مزہ
نہیں دیا اور پِھر سے اِس بے جان چیز کو سیلیکٹ کر لیا ہے تو نے . . . .

علینا نے اپنے ہاتھ میں پکڑے ہو کھیرے کے ساتھ اپنی نظریں نیچے
جھکا دی . . . . . .

بابُو . . .
چل اب شروع ہو جا . . . . . . .

علینا نے گھبرا کر اپنے سسر کی طرف دیکھا . . . . .
یہاں . . . .
سب کے سامنے. . . . . .
کیسے . . . .
نہیں نہیں . . . . .

بابُو . . . .
اب زیادہ ناٹک نہیں کر . . . .
تجھے یہیں پر کرنے کو بولا تھا نہ. . .
ہم سب کے سامنے تو پِھر یہیں کرنا پڑے گا ہم سب کے سامنے . . . . . .

علینا دھیرے سے بولی . . . . . .
پر وہ پاپا . . . . .

بابُو ہنسا . . . .
ارے کچھ نہیں ہوتا . . . . .
دیکھ لینے دے اس بڈھے کو بھی . . . .

علینا نے انکار میں سر ہلایا. . . .
تو بابُو غصے سے بولا تیرے پاس اب کوئی اور
اوپشن نہیں ہے سمجھی کہ نہیں . . . . . .
اب اور رعایت نہیں دے سکتا میں تیرے کو . . . . .

 

چل جلدی سے کر . . . . .

علینا نے بھی بےبسی سے اپنے سسر کی طرف دیکھ رہی تھی جو کہ اپنی نظریں
نیچے جھکاے ہوے تھا . . . . . .

بابُو خود ہی بولا . . . .
اچھا چل تیری ایک مشکل آسان کر دیتا ہوں . . . . .
پتہ نہیں کیوں تیرے پر رحم آ رہا ہے . . . .
چل تو اپنے کپڑے نہیں اُتارْنا . . . . .
بس ایسے ہی اسے اپنی چوت کے اندر ڈال لے اور اندر باہر کرتے ہوے اپنی چوت کا
پانی نکال دے . . . .
اور بس . . . . . . .
پِھر ہم چلے جائیں گیں . . . . . .

Posted on: 05:23:AM 02-Jan-2021


3 0 756 0


Total Comments: 0

Write Your Comment



Recent Posts


Thomas Bryton heard the bell ring sounding.....


3 0 57 4 0
Posted on: 05:33:AM 21-Jul-2021

Summary: MILF Mom catches nerdy son masturbating.....


0 0 51 2 0
Posted on: 05:28:AM 21-Jul-2021

I was 18 years old and had.....


0 10 33 5 0
Posted on: 05:18:AM 21-Jul-2021

The fair grounds were packed for the.....


0 0 39 1 0
Posted on: 11:16:AM 18-Jul-2021

The warm, gentle wind swept playfully through.....


0 1 67 9 0
Posted on: 11:03:AM 18-Jul-2021

Send stories at
upload@xyzstory.com